Media Office Hizb ut-Tahrir Pakistan

Crisis in Yemen

 

Friday, 07th Jumad ul Thani 1436 AH                            27/03/2015 CE                           No: PR15023

Press Release

Crisis in Yemen

Pakistan Army should Intervene in Muslim World, but for Islam and Khilafah, not for Political Agendas of US and its Puppets

A Saudi-led coalition of states from the Gulf and Middle East initiated bombardment of Sana’a, Aden and other cities of Yemen yesterday, 26 March 2015, allegedly against the Houthi movement, with approval and support from the US and European powers. Saudi Arabia has also sought participation from Pakistan.

The Raheel-Nawaz regime responded by immediately calling a high-level meeting to discuss the request and deciding to send a high-level delegation to Saudi Arabia to “assess the situation”. It asserted that any threat to Saudi Arabia’s “territorial integrity” would evoke a strong response from Pakistan.

The reality is that this conflict is yet another manifestation of the neo-colonial struggle for political and economic interests of western powers and their respective allies. It is not primarily a struggle between Saudi Arabia and Iran or along Sunni-Shia lines, as some are suggesting. Rather, it is the US and European powers who are pulling the strings from afar for their own ends.

Saudi Arabia, the Gulf states, Jordan and Egypt are all claiming to be coming to the aid of the Yemeni people and to protect the “legitimate government of Yemen”. These are the same regimes who sat back and did nothing which the Assad regime committed massacre after massacre in Syria and when the Jewish entity committed massacred after massacre in Gaza. They also supported the US-backed military coup of al-Sisi in Egypt. So who is foolish enough to believe their claims concerning Yemen?

In this context, for the Raheel-Nawaz regime to participate in this coalition will represent nothing more than the continuation of its agency of the US and its shameful abuse of Pakistan’s military for US interests. All those who can must seek to stop this munkar and all who cannot must speak out against it.

This does not mean that the Pakistani military must not intervene in “other countries” as some have argued. Nay, the Muslim World is one. The borders placed in it are a colonial legacy, used to divide and weaken. The military should intervene in the Muslim World but on an independent and Islamic basis alone. The first step to that is by giving Nussrah to Hizb ut-Tahrir to establish Khilafah. Only the Khilafah will bring a stop to the resources and armies of the Muslims being used for the benefits of the disbelieving colonialists. Only the Khilafah can end the disastrous politics of neo-colonialism which only bring war after war and conflict after conflict to the Muslim World. Only the Khilafah can unite the Muslim World, as is the command of Allah and His Messenger (s.a.w) and the ardent desire of all Muslims.

Media Office of Hizb ut-Tahrir in the Wilayah of Pakistan

 

جمعہ، 07 جمادی الثانی ، 1436ھ                           27/03/2015                              نمبرPR15023:

یمن میں بحران

افواج پاکستان امریکی سیاسی مفادات اور اُس کی کٹھ پتلیوں کے تحفظ کے لئے نہیں بلکہ اسلام اور خلافت کے لئے مسلم دنیامیں مداخلت کرے

سعودی عرب کی سربراہی میں مشرق وسطیٰ کے ممالک پر مشتمل اتحاد نے 26 مارچ 2015 سے ثناء، عدن اور یمن کے دیگر شہروں میں بمباری کا سلسلہ شروع کردیا ہے جس میں حوثی تحریک کو نشانہ بنایا جارہا ہے۔ اس اتحاد کو امریکہ اور یورپ کی حمایت حاصل ہے جبکہ اس کے ساتھ ساتھ سعودیہ نے پاکستان سے بھی اس فوجی آپریشن میں شمولیت کی خواہش کا اظہار کیا ہے۔ سعودیہ کی جانب سے اس خواہش کے اظہار پر راحیل-نواز حکومت نے فوراً ایک اعلٰی سطحی اجلاس طلب کیا جس میں اس درخواست کا جائزہ لیا گیا اور یہ فیصلہ کیا گیا کہ ایک اعلٰی سطحی وفد سعودیہ عرب بھیجا جائے جو صورتحال کا تجزیہ کرے۔ حکومت نے کہا کہ اگر سعودی عرب کی جغرافیائی سرحدوں کو خطرہ لاحق ہوا تو پاکستان کا ردعمل سخت ترین ہوگا۔

حقیقت یہ ہے کہ یہ بحران بھی  مغربی استعماری طاقتوں اور ان کے اتحادیوں کی جانب سے اپنے سیاسی و اقتصادی مفادات کے حصول کی کوششوں کا ہی حصہ ہے۔ یہ بحران سعودی عرب اور ایران یا سنی و شیعہ کے درمیان مسابقت کی وجہ سے نہیں ہے جیسا کہ کچھ لوگوں کو کہنا ہے  بلکہ یہ بحران امریکہ اور یورپ کے درمیان مسابقت کا نتیجہ  ہے جو اپنے اپنے مفادات کے حصول کے لئے دور بیٹھ کر اپنی کٹھ پتلیوں کی ڈورے ہلا رہے ہیں۔

سعودی عرب، خلیجی ریاستیں ، اردن اور مصر یہ دعویٰ کررہے ہیں کہ وہ یمن کے لوگوں اور اس کی قانونی حکومت کے تحفظ کے لئے مدد کو آئے ہیں۔ یہ وہی حکومتیں ہیں کہ جو پچھلے چار سالوں سےبشار کے ہاتھوں لاکھوں مسلمانوں کا قتل عام خاموشی سے دیکھ رہی ہیں، یہ وہی حکومتیں ہیں کہ جب یہودی وجود غزہ میں خوفناک بمباری کر کے اسکولوں اور مساجد میں پناہ لیے ہوئے مسلمانوں کو قتل کررہا تھا تو یہ مُردوں کی طرح چِت پڑے رہے اور یہ وہی حکومتیں ہیں کہ جنہوں نے امریکی آشیر باد سے ہونے والی سیسی کی فوجی بغاوت کی حمایت کی۔ اِن حکومتوں کے اس طرز عمل کے بعد کوئی احمق ہی ہوگا جو یمن کے حوالے سے ان کی فکر مندی سے متاثر ہوگا۔

اس صورتحال میں اگر راحیل-نواز حکومت اس اتحاد کا حصہ بنتی ہے تو یہ انتہائی شرمناک بات ہو گی کہ پاکستان کی افواج کو امریکی مفاد کے لئے استعمال کیا جائے ۔ وہ تمام لوگ جو اس منکر کو روک سکتے ہیں وہ اس کو روکنے کے لیے اپنا کردار ادا کریں اور جو یہ نہیں کرسکتے انہیں اس خیانت کے خلاف آواز کو بلند کرنا چاہیے۔

یہ کہنا بھی درست نہیں کہ پاکستان آرمی کو دوسرے ممالک میں مداخلت نہیں کرنی چاہیے۔ مسلم دنیا درحقیت ایک ہی ہے۔ مسلم دنیا میں موجود سرحدیں کافر استعماری طاقتوں کی قائم کردہ ہیں جس کا مقصد مسلمانوں کو تقسیم اور انہیں کمزور کرنا ہے۔افواج پاکستان کو مسلم دنیا میں مداخلت کرنی چاہیے لیکن امریکہ کے کہنے پر نہیں بلکہ یہ فیصلہ آزادانہ اور اسلام کی بنیاد پر ہونا چاہیے۔ اس مقصد کو حاصل کرنے کی جانب پہلا قدم تو یہ ہے کہ افواج پاکستان حزب التحریر کو خلافت کے قیام کے لئے نصرۃ دیں۔ پھر خلافت مسلمانوں کے وسائل اور افواج کو کافر استعماری طاقتوں کے مفاد میں استعمال ہونے سے روک دے گی اور مسلم دنیا کو ان جنگوں سے نجات مل جائے گی جو ان طاقتوں کے مفادات کے حصول کےلئے ہی بھڑکائی جاتی ہیں۔ خلافت مسلم دنیا کو ایک وحدت بخشے گی جو اللہ سبحانہ و تعالٰی اور رسول اللہ کا حکم ہے اور مسلمانوں کی خواہش بھی ہے۔

ولایہ پاکستان میں حزب التحریر کا میڈیا آفس


Today 1094 visitors (3961 hits) Alhamdulillah
=> Do you also want a homepage for free? Then click here! <=