Media Office Hizb ut-Tahrir Pakistan

Blast at Lahore Churches

 

Monday, 25th Jumad ul Awwal 1436 AH                                    16/03/2015 CE                           No: PR15020

Press Release

Blast at Lahore Churches

Only Khilafah can Protect Life, Honour and Property of Non-Muslims

On Sunday, 15th March 2015, two churches came under attack in Lahore in which fifteen people were killed. Hizb ut-Tahrir strongly condemns these attacks and share sympathy with the relatives of the deceased.

For the last few years Non-Muslims, Christians in particular and their churches, came under attack on several occasions. After every such attack the government simply issues a condemnation statement and announces some material relief for the relatives of the victims, before carrying on with business as usual. Attack on minorities living in Pakistan is not a unique local phenomenon. It has become a routine matter all over the world including in the world’s “biggest democracy”, India and its leading super power, America. In India attacks on Muslims and Christians and their places of worship have been consistent while in recent time Muslims and their masajid started facing attacks in Europe and America.

Democracy cannot actually provide security to minorities living under its rule because it has been designed to protect the majority and powerful segments of the society. In Pakistan this matter has been complicated many fold because of Pakistan’s inclusion in America’s so-called war against terror. Places of worship of both Muslims and Non-Muslims have been targeted in order to prove that this US war against Islam is actually our war against terrorism. After every such false flag attack some shadowy organisation with Islamic names claims responsibility but what they claim is totally against Islam. These false flag attacks only fulfill the interests of US and its agent rulers imposed on Muslims world who use these incidents as an excuse to go after people who either fighting US occupation forces over Muslims lands or doing political and intellectual struggle for the implementation of Islam in the Muslims world.

No deen other than Islam has given stringent orders to protect the life and honor of those who do not adopt it. RasulAllah saaw said,

أَلا مَنْ قَتَلَ نَفْسًا مُعَاهِدًا لَهُ ذِمَّةُ اللَّهِ وَذِمَّةُ رَسُولِهِ فَقَدْ أَخْفَرَ بِذِمَّةِ اللَّهِ، فَلا يُرَحْ رَائِحَةَ الْجَنَّةِ، وَإِنَّ رِيحَهَا لَيُوجَدُ مِنْ مَسِيرَةِ سَبْعِينَ خَرِيفًا

“He who kills a covenanted person unjustly shall not find the scent of heaven; and indeed its scent is found at a distance of a seventy year march”

(Tirmidhi).

Hizb ut-Tahrir adopted in its Draft Constitution of the upcoming Khilafah state, under article 6, "The State is forbidden to discriminate at all between the individuals in terms of ruling, judiciary and management of affairs or their like. Rather, every individual should be treated equally regardless of race, deen, colour or anything else”. So only Khilafah state guarantees Non-Muslims to live and worship according to their beliefs, and their life, property and honour are also protected as well as they used to live in past under the shade of Khilafah state when they escaped from the persecution of their native states and took refuge under Islamic Khilafah.

Shahzad Shaikh

Deputy to the Spokesman of Hizb ut-Tahrir in the Wilayah of Pakistan

پیر، 25 جمادی الاول ، 1436ھ                           16/03/2015                              نمبرPR15020:

لاہور میں گرجا گھروں پر حملے

صرف خلافت ہی غیر مسلموں کی جان ،مال اور عزت و آبروکی حفاظت کرسکتی ہے

        15 مارچ 2015 بروز اتوار لاہور میں دو گرجا گھروں پر حملہ کیا گیا جس میں 15 افراد جاں بحق ہو گئے۔ حزب التحریر ان حملوں کی پرزور مذمت کرتی ہے اور ہلاک شدگان کے لواحقین سے اظہار ہمدردی کرتی ہے۔

        پاکستان میں رہنے غیر مسلموں خصوصاً عیسائیوں اور ان کی عبادت گاہوں پر پچھلے چند سالوں میں کئی حملے ہو چکے ہیں۔ لیکن ہر حملے کے بعد حکومت صرف ایک مذمتی بیان اور لواحقین کے لئے امدادی رقوم کا اعلان کر کے چین کی نیند سو جاتی ہے۔ پاکستان میں رہنے والی اقلیتوں پر یہ بڑھتے حملے صرف مقامی مسئلہ نہیں رہا بلکہ دنیا بھر میں اقلیتوں اور ان کی عبادت گاہوں پر حملے روز کا معمول بنتے جارہے ہیں جس میں دنیا کی سب سے بڑی  جمہوریت  بھارت اور دنیا کی واحد سپر پاور امریکہ بھی شامل ہیں۔ بھارت میں مسلمانوں، عیسائیوں  اور ان کی عبادت گاہوں پر حملے معمول بن چکے ہیں جبکہ حالیہ دنوں میں یورپ و  امریکہ میں بھی مسلمانوں اور ان کی عبادت گاہوں پر حملے ہونے شروع ہو گئے ہیں۔

        درحقیقت جمہوری نظام اپنے زیرِ سایہ رہنے والی اقلیتوں کا تحفظ کر ہی نہیں سکتا کیونکہ یہ نظام تو اکثریتی اور طاقتور طبقے کے مفادات کے تحفظ کے لیے  بنا ہے۔  پاکستان میں تو یہ معاملہ  نام نہاد دہشت گردی کے خلاف امریکی جنگ میں شمولیت کی وجہ سے زیادہ گھمبیر ہو چکا ہے۔  اسلام کے خلاف امریکی جنگ کو دہشت گردی کے خلاف اپنی جنگ ثابت کرنے کے لئے پچھلے چند سالوں سے مسلمانوں اور غیر مسلوں دونوں کی عبادت گاہوں کو نشانہ بنایا جارہا ہے اور ہربار اس کی ذمہ داری کوئی ایسی تنظیم قبول کرلیتی ہے جس کا نام تو اسلامی  لیکن کام  قطعاً غیر اسلامی، حرام ہوتا ہے۔  ان حملوں(False Flag) سے صرف امریکہ اور مسلم دنیا پر مسلط اس کی ایجنٹ حکمرانوں کا مفاد ہی پورا ہوتا ہے جنہیں اِن سانحات کی بنا پر اُن لوگوں کی خلاف ظلم و جبر کرنے کا موقع مل جاتا ہے جو  مسلم علاقوں پر امریکہ و کفار کے قبضے کے خلاف عسکری جدوجہد  یا مسلم دنیا میں اسلام کے مکمل نفاذ کی سیاسی و فکری جدوجہد کررہے ہوتے ہیں۔

        غیر مسلموں  کی جان، مال اور عزت و آبرو کی حفاظت کا جتنا سخت حکم اسلام دیتا ہے دنیا کا کوئی دین اس کا مقابلہ نہیں کرسکتا۔ رسول اللہ نے فرمایا ہے کہ،

أَلا مَنْ قَتَلَ نَفْسًا مُعَاهِدًا لَهُ ذِمَّةُ اللَّهِ وَذِمَّةُ رَسُولِهِ فَقَدْ أَخْفَرَ بِذِمَّةِ اللَّهِ، فَلا يُرَحْ رَائِحَةَ الْجَنَّةِ، وَإِنَّ رِيحَهَا لَيُوجَدُ مِنْ مَسِيرَةِ سَبْعِينَ خَرِيفًا،

"جس کسی نے معاہد شخص کو قتل کیا جس کو اللہ اور اس کے رسول نےعہد دیا تو اس نے اللہ کے عہد کو توڑا۔ ایسا شخص جنت کی خوشبو بھی نہیں سونگھ سکتا  حالانکہ جنت کی خوشبو ستر سال کے فاصلے پر بھی سونگھی جاسکتی ہے"

(الترمزی)۔

        اسی لیے حزب التحریر نے آنے والی ریاست خلافت کے مجوزہ آئین  کی شق 6 میں یہ لکھا ہے کہ "ریاست کے لئے جائز نہیں کہ وہ اپنے شہریوں کے مابین حکومتی معاملات، عدلاتی فیصلوں، لوگوں کے معاملات کی دیکھ بحال اور دیگر امور میں امتیازی سلوک کرے بلکہ اس پر فرض ہے کہ وہ تمام افراد کو رنگ، نسل اور دین سے قطع نظر ایک ہی نظر سے دیکھے"۔ لہٰذا صرف خلافت میں ہی غیر مسلم اپنے عقیدے کے مطابق عبادت کرنے کی آزادی  اور اپنے جان، مال اور عزت و آبرو کے تحفظ کے یقین کے ساتھ زندگی گزار سکیں گے جیسا کہ ماضی میں ہوتا رہا کہ جب دنیا بھر سے غیر مسلم اپنی ظالم حکومتوں کے جبر سے فرار حاصل کرکے اسلامی خلافت میں پناہ لیا کرتے تھے۔

شہزاد شیخ

ولایہ پاکستان میں حزب التحریر کے ڈپٹی ترجمان

 


Today 3102 visitors (10088 hits) Alhamdulillah
=> Do you also want a homepage for free? Then click here! <=