Media Office Hizb ut-Tahrir Pakistan

All Parties Conference on Mastung Incident and Baluchistan


Wednesday, 16th Shaban 1436 AH                                 03/06/2015 CE                           No: PR15043

Press Release

All Parties Conference on Mastung Incident and Baluchistan

American Presence is the Head of the Snake of Insecurity in Baluchistan, with India as a Servile Assistant

On 2nd June 2015, an all-parties conference was held in Quetta to discuss the situation of Baluchistan in the aftermath of the tragic Mastung incident. Prime Minister Nawaz Sharif blamed foreign hands for indiscriminate killings and said that the enemy wants to divide us on ethnic and sectarian grounds. Although Nawaz Sharif did not name the foreign enemy on this occasion, the Raheel-Nawaz regime for the last few months is putting the blame on India and its intelligence agency “RAW.”

There is no doubt that our enemy is behind attacks on military and civilian installations, but declaring India as the sole offender is to cover the destructive role of American intelligence and the Raymond Davis Network. Insecurity in Baluchistan and the whole country escalated when America invaded Afghanistan, under the so called “war on terror.” Traitors within the political and military leadership of Pakistan handed over the whole country to the Americans. Indian intelligence agency “RAW” is no match for Pakistan’s armed forces and intelligence. Even the American intelligence agencies, who are considered the most able in the world, cannot match our agencies in Pakistan and Afghanistan. However, because the traitors enabled the biggest enemy of Pakistan and Islam, America, to dominate Afghanistan, even a weak country like India now has a foothold in Afghanistan, granted by America itself, so that it can launch attacks in Baluchistan and beyond.

Primarily, America is the head of the snake in making mischief in Baluchistan with India, under its agent Modi, assisting subserviently. Way back in 2006, the eminent US think tank Carnegie Endowment for International Peace, published a report titled, “Pakistan: The Resurgence of Baluch Nationalism”. The report highlights the rich natural resources of Baluchistan and then makes the case to use Baluchi rebels against Islamabad and Tehran. Furthermore, the US State Department-funded National Endowment for Democracy (NED) and the Voice of Baluchistan (VOB) have been instrumental in fomenting dissension and nationalistic feelings. NED has been funding the Baluchistan Institute for Development (BIFD) which claims to be the leading resource on democracy, development and human rights in Baluchistan, whereas the VOB on the other hand, has been active in carrying propaganda messages on behalf of the American government.  Also, over the past few years, the US has also been pressing Pakistan to allow it to open a consulate in Quetta, yet another lair to launch mischief from.

Therefore Raheel-Nawaz regime’s hue and cry regarding foreign intervention is just a deception to divert attention from the wicked role of India’s master and bigger Shaytan, America. Until American presence is not eradicated from Pakistan and Afghanistan, America will continue to cause chaos and use Modi-led India for this purpose. Therefore by covering the American hand behind killings in Baluchistan, the Raheel-Nawaz regime is committing treachery. Only the Khilafah will end the US presence in Pakistan and Afghanistan, as well as ending the neglect of the people of Baluchistan. The constitution of Khilafah, prepared by Hizb ut-Tahrir from the Quran and the Sunnah, forbids the presence of belligerent Kafireen on Islamic Land and makes it obligatory for the state to provide the rights for each and every citizen, regardless of religion, race or language.

Media Office of Hizb ut-Tahrir in the Wilayah of Pakistan

 

بدھ، 16 رجب، 1436ھ                                  03/06/2015                                نمبرPR15043:

سانحہ مستونگ اور بلوچستان پر کُل جماعتی کانفرنس

بلوچستان میں بدامنی کی وجہ امریکہ کی موجودگی ہے اور بھارت اس کی معاونت کررہا ہے

2 جون 2015 کو بلوچستان کے دارلحکومت کوئٹہ میں سانحہ مستونگ سے پیدا ہونے والی صورتحال پر منعقد ہونے والی کُل جماعتی کانفرنس سے نواز شریف نے خطاب کرتے ہوئے اس  قتل عام کی ذمہ داری بیرونی قوتوں پر ڈالی اور یہ کہا کہ دشمن ہمیں لسانی اور فرقہ وارانہ بنیادوں پر تقسیم کرنا چاہتا ہے۔ نواز شریف نے اگرچہ اس بیرونی دشمن کی وضاحت نہیں کی لیکن راحیل-نواز حکومت پچھلے چند ماہ سے  قتل و غارت گری کے واقعات کی ذمہ داری بھارت اور اس کی انٹیلی جنس ایجنسی "را" پر ڈال رہی ہے۔

یقیناً اس بات میں کوئی شک و شبہ نہیں کہ ہمارا دشمن ہی ملک میں فوجی و شہری تنصیبات پر حملوں میں ملوث ہے لیکن اس کا ذمہ دار صرف بھارت کو قرار دینا دراصل پاکستان میں موجود امریکہ کی انٹیلی جنس اور ریمنڈ ڈیوس نیٹ ورک کے اڈوں اور ان کے جرائم پر پردہ ڈالنا ہے۔ بلوچستان سمیت پاکستان بھر میں بدامنی میں اس وقت سے اضافہ ہوا جب امریکہ نے نام نہاد دہشت گردی کے خلاف جنگ کے نام پر افغانستان پر حملہ کیا اور پاکستان کی سیاسی و فوجی قیادت میں موجود غداروں نے پورا پاکستان امریکہ کے حوالے کر دیا۔ بھارت کی "را" تو دور کی بات دنیا کے سب سے طاقتور سمجھی جانی والی امریکی انٹیلی جنس ایجنسیاں بھی پاکستان کے افواج اور اس کی انٹیلی جنس ایجنسیوں کا پاکستان اور افغانستان میں مقابلہ نہیں کر سکتیں لیکن چونکہ سیاسی و فوجی قیادت میں موجود غدار پاکستان اور اسلام کے سب سے بڑے دشمن امریکہ کو پاکستان اور افغانستان میں اپنی موجودگی برقرار رکھنے کے لئے تعاون فراہم کرتے ہیں تو بھارت  جیسی کمزور طاقت کو بھی امریکہ نے افغانستان میں قدم جمانے کا موقع دیا اور وہ بلوچستان اور پاکستان بھر میں کاروائیاں کر رہا ہے۔

بلوچستان کی بدامنی کے پیچھے بنیادی ہاتھ امریکہ کا ہے جبکہ بھارت اس کے ایجنٹ مودی کی سربراہی میں امریکہ کی معاونت کر رہا ہے۔ مشہور امریکی تھنک ٹینک، کارنیج اینڈومنٹ برائے بین الاقوامی امن نے 2006 میں ایک رپورٹ "پاکستان: بلوچ قوم پرستی کی دوبارہ پیدائش" کے عنوان سے شائع کی۔ اس رپورٹ میں بلوچستان میں موجود وسیع قدرتی وسائل پر روشنی ڈالی گئی اور یہ بات کی گئی کہ کس طرح بلوچ باغیوں کو اسلام آباد اور تہران کے خلاف استعمال کیا جائے۔ اس کے علاوہ امریکی دفتر خارجہ کی معاونت سے چلنے والے ادارے نیشنل اینڈومنٹ برائے جمہوریت (NED) اور بلوچستان کی آواز (VOB) بلوچستان میں مخالفانہ اور قوم پرستی کے جذبات بڑھکانے میں پیش پیش ہیں۔ نیشنل اینڈومنٹ برائے جمہوریت (NED) بلوچستان انسٹی ٹیوٹ برائے تعمیر و ترقی (BIFD) کو مالی وسائل فراہم کرتا ہے جو بلوچستان میں جمہوریت، تعمیروترقی اور انسانی حقوق کے حوالے سے سب موثر آواز ہونے کا دعویٰ کرتی ہے۔ جبکہ بلوچستان کی آواز (VOB) امریکی حکومت کی ایماء پر وپیگنڈہ مہم چلاتی ہے۔ اس کے علاوہ پچھلے کچھ سالوں سے امریکہ کوئٹہ میں اپنا قونصل خانہ کھولنے کے لئے اجازت نامہ حاصل کرنے کے لئے پاکستان پر دباؤ ڈال رہا ہے تاکہ بلوچستان میں اپنے شیطانی عزائم کو آگے بڑھانے کے لئے اسے ایک اور پلیٹ فارم میسر آجائے۔

لہٰذا راحیل-نواز حکومت کا بیرونی مداخلت کے متعلق شور مچانا محض ایک دھوکہ ہے کیونکہ اس کے پردے میں وہ بھارت کے آقا اور بڑے شیطان امریکہ کے کردار پر پردہ ڈالنا چاہتے ہیں۔ جب تک پاکستان اور افغانستان سے امریکہ کی موجودگی کا خاتمہ نہیں کیا جائے گا امریکہ بھارت کو پاکستان میں مداخلت اور کمزور کرنے کے لئے باآسانی استعمال کرتا رہے گا۔ لہٰذا راحیل–نواز حکومت بلوچستان میں قتل و غارت کے پیچھے ملوث اصل دشمن امریکہ کے کردار پر پردہ ڈال کر ملک و قوم سے غداری کی مرتکب ہو رہی ہے۔ صرف خلافت ہی پاکستان و افغانستان سے امریکی وجود اور بلوچستان کے لوگوں کی محرومیوں کا خاتمہ کرے گی کیونکہ حزب التحریر کی جانب سے تیار کردہ قران و سنت سے اخذ شدہ خلافت کا آئین اسلامی سرزمین پر حربی کفار کی موجودگی کو حرام اور ریاست کے تمام شہریوں کو بلا امتیاز مذہب، نسل اور زبان ان کے حقوق فراہم کرنا فرض قرار دیتا ہے۔

ولایہ پاکستان میں حزب التحریر کا میڈیا آفس


Today 3087 visitors (10344 hits) Alhamdulillah
=> Do you also want a homepage for free? Then click here! <=