Media Office Hizb ut-Tahrir Pakistan

Afghan Peace Dialogue


Wednesday, 27th Shawwal 1436 AH                               12/08/2015 CE                           No: PR15055

Press Release

Afghan “Peace” Dialogue

Regime Strives for Afghan “Peace” Dialogue to Secure US Threat in Afghanistan

On American dictates, the Raheel-Nawaz regime is exerting every political and military pressure at her disposal to secure success for the Afghan “peace” dialogue. The purpose of the Afghan “peace” dialogue is to ensure recognition for the puppet Afghan government, installed by America. It is also to grant political and legal cover for the Bilateral Security Agreement signed on 30th September 2014 between the US and the Afghan puppet regime. The BSA allows the US to station her troops in Afghanistan beyond 2014, under the cover of providing training to Afghan army and countering “terrorism.”

The Raheel-Nawaz regime claims that they are playing a mediating role between the Afghan government and the Afghan resistance groups in order to secure peace for the region, which will culminate in a new era of prosperity both for Pakistan and Afghanistan. However, in reality this claim for peace and prosperity is not for the people of Pakistan and Afghanistan, rather it is to secure American interests in this region. America knows if she does not secure a “peace” agreement between the Afghan government and Afghan resistance groups, then it will create obstacles for her presence in Afghanistan, especially in a scenario where her economic condition does not allow great expenditure.

In a situation where America could never achieve these objectives on her own, the Raheel-Nawaz regime came forward to her rescue. The regime is working tirelessly to secure American interests, whilst claiming such action is in accordance with Pakistan’s interests. How can the American presence in Afghanistan be in Pakistan’s interest, when the US designs against Pakistan’s nuclear capability and missile technology are not a secret? How can the American presence in Afghanistan in Pakistan’s interest, when the US opened the doors of Afghanistan to India so that it can meddle in our affairs? How can the American presence in Afghanistan be in Pakistan’s interest, when every other day the US bombs our territory through drones, under the cover of the so-called “War on Terror?” Therefore, securing America’s threatening presence on the doorstep of nuclear Pakistan, in the name of the Afghan “peace” dialogue, is open treason against Pakistan and its people.

Peace and prosperity can never be achieved in Pakistan and Afghanistan with the help of America or China, because such peace and prosperity is for the interests of the colonialist nations in order to subjugate Islam and Muslims. Real peace and prosperity in Pakistan and Afghanistan can only be achieved by removing the US presence and its agent rulers form the region, by establishing Khilafah in their place. The Khilafah will not only unify Pakistan and Afghanistan, rather it will unify the whole Muslim World under the banner of Rasul Allah (saaw) and then no colonialist nation will ever dare to seize or interfere in Muslim lands.

وَلاَ تَرْكَنُوۤاْ إِلَى ٱلَّذِينَ ظَلَمُواْ فَتَمَسَّكُمُ ٱلنَّارُ

“And incline not toward those who do wrong, lest the Fire should touch you”

(Hud:113)

Shahzad Shaikh

Deputy to the Spokesman of Hizb ut-Tahrir in the Wilayah of Pakistan

 

بدھ، 27 شوال، 1436ھ                                  12/08/2015                                نمبرPR15055:

افغان" امن" مذاکرات

راحیل-نواز حکومت افغانستان میں امریکی موجودگی کو برقرار رکھنے کے لئے افغان "امن" مذاکرات میں بڑھ چڑھ کر کردار ادا کر رہی ہے

        راحیل-نواز حکومت امریکی ہدایت پر افغان "امن" مذاکرات کو کامیاب بنانے کے لئے ہر ممکن فوجی و سیاسی  دباؤ استعمال کر رہی ہے۔ افغان "امن" مذاکرات کا مقصد کابل میں قائم امریکی کٹھ پتلی حکومت کو تسلیم کروانا اور 30 ستمبر 2014 کو امریکہ اور کٹھ پتلی افغان حکومت کے درمیان طے پانے والے دوطرفہ سیکیوریٹی معاہدے کو ایک وسیع سیاسی و قانونی حمایت فراہم کرنا ہے جس کے تحت امریکہ 2014 کے بعد بھی افغانستان میں اپنی افواج کو افغان فوج کو تربیت فراہم کرنے اور "دہشت گردی" روکنے کے نام پر رکھ سکے گا۔

        راحیل-نواز حکومت کا یہ کہنا ہے کہ وہ افغان گروہوں کے درمیان مصالحت کا کردار ادا کر رہی ہے تاکہ خطے میں امن قائم ہو جس کے نتیجے میں پاکستان و افغانستان میں ترقی کا ایک نیا دور شروع ہو سکے گا۔ لیکن درحقیقت امن کی خواہش اور کوشش پاکستان و افغانستان کے عوام کے لئے نہیں بلکہ خطے میں امریکی مفادات کے حصول کے لئے ہے۔ امریکہ جانتا ہے کہ اگر وہ افغان حکومت اور افغان مذاحمتی گروہوں کے درمیان "امن" معاہدہ نہ کروا سکا تو افغانستان میں اس کی مستقل موجودگی انتہائی مشکلات کا شکار رہے گی خصوصآً ایسی صورت میں جبکہ اس کی معیشت اس بات کی اجازت نہیں دیتی کہ وہ اپنی موجودگی کو برقرار رکھنے کے لئے ڈالر پانی کی طرح بہائے۔

        اس صورت میں جبکہ امریکہ یہ اہداف خود سے کسی صورت حاصل نہیں کرسکتا، راحیل-نواز حکومت آگے بڑھ کر امریکی مفادات کے حصول کے لئے ایڑی چوٹی کا زور لگا رہی ہے اور اپنے اس عمل کو پاکستان کے مفاد میں قرار دے رہی ہے۔ افغانستان میں امریکہ کی موجودگی کس طرح پاکستان کے مفاد میں ہوسکتی ہے جبکہ پاکستان کے ایٹمی پروگرام اور میزائل ٹیکنالوجی کے حوالے سے  اس کےعزائم ڈھکے چھپے نہیں؟ افغانستان میں امریکہ کی موجودگی کس طرح پاکستان کے مفاد میں ہوسکتی ہے جبکہ پاکستان کے ازلی دشمن بھارت کو افغانستان میں بیٹھ کر پاکستان میں مداخلت کرنے کا موقع امریکہ نے فراہم کیا ہے؟ افغانستان میں امریکہ کی موجودگی کس طرح پاکستان کے مفاد میں ہوسکتی ہے جبکہ امریکہ آئے دن نام نہاد "دہشت گردی کے خلاف جنگ" کے نام پر ڈرون حملوں کے ذریعے پاکستانی علاقوں پر بمباری کرتا ہے؟ لہٰذا پاکستان کے دشمن امریکہ کو ایٹمی پاکستان کے دروازے پر افغان "امن" مذاکرات کے نام پر مستقل ٹھکانا فراہم کرنا پاکستان اور اس کے عوام کے ساتھ کھلی غداری ہے۔

        پاکستان اور افغانستان میں مستقل امن اور معاشی خوشحالی امریکہ یا چین کی مدد سے نہیں ہوسکتی کیونکہ یہ امن اور معاشی خوشحالی صرف اور صرف ان کے مفاد اور اسلام اور مسلمانوں کو کفار کا مستقل محتاج رکھنے کے لئے ہے۔ پاکستان اور افغانستان میں حقیقی امن اور خوشحالی خطے سے امریکہ کی موجودگی اور اس کے ایجنٹ حکمرانوں کے خاتمے اور خلافت کے قیام سے ہی ممکن ہے۔ خلافت نہ صرف پاکستان اور افغانستان بلکہ پوری مسلم دنیا کو رسول اللہ کے کلمہ والے جھنڈے تلے وحدت بخشے گی اور پھر کسی استعماری طاقت کو یہ ہمت نہیں ہوگی کہ وہ اپنے مفادات کے حصول کے لئے مسلم علاقوں پر چڑھائی یا مداخلت کرسکے۔

وَلاَ تَرْكَنُوۤاْ إِلَى ٱلَّذِينَ ظَلَمُواْ فَتَمَسَّكُمُ ٱلنَّارُ

"اور تم ظالم لوگوں کی طرف مت جھکو ورنہ تمہیں جہنم کی آگ چھو لے گی"

(ھود:113)

شہزاد شیخ

ولایہ پاکستان میں حزب التحریر کے ڈپٹی ترجمان


Today 2590 visitors (8345 hits) Alhamdulillah
=> Do you also want a homepage for free? Then click here! <=