Media Office Hizb ut-Tahrir Pakistan

Susan Rice visit to Pakistan


Monday, 16th Dhu al Qi’dah 1436                                  31/08/2015 CE                           No: PR15060

Press Release

Susan Rice visit to Pakistan

The Duty of Pakistan’s Armed Forces is to Secure the Interests of Islam and Muslims, not US interests

On Sunday 30th August 2015, the US National Security Advisor, Susan Rice, visited Pakistan and met the political and military leadership of Pakistan. She demanded more actions against the sincere Mujahideen in North Waziristan so that America's defeat in Afghanistan can be converted into victory, whilst indicating a clipping of the Coalition Support Fund if Pakistan fails to comply. Regrettably, the political and military leadership did not turn her back on her heels, proclaiming that Pakistan’s armed forces has a duty to protect the interest of Islam and Muslims, rather than American interests. Instead they adopted the same corrupt stance, claiming that the restoration of peace if Afghanistan is the responsibility of all “stakeholders,” as if the American crusaders had any right to even an inch of Muslim Lands, and demanded dollars from the Coalition Support Fund for their loyal slavery to America.

Can anyone still doubt that the so-called War on Terror is a war against Islam and Muslims? Is there still anyone that doubts that the purpose of the military operations in the tribal areas of Pakistan is to eliminate the sincere Mujahideen waging Jihad against US occupied forces in Afghanistan? Is there anyone that doubts that the Raheel-Nawaz regime is following the footsteps of its predecessors in treachery, the Musharaf-Aziz and Kayani-Zardari regimes by burning Pakistan's armed forces as fuel to secure a crusader presence on the door-step of the only Muslim nuclear power? Does someone still doubt that the Nation Action Plan is in fact American Action Plan to suppress Islam and its callers in Pakistan?

Hizb ut-Tahrir asks from the sincere amongst the people of power as to how long they will accept that our soldiers and officers are sacrificed for American interests? For how long will they quietly watch the support provided by the traitors in the political and military leadership to America? When will the time come that Pakistan’s armed forces will be mobilized in Jihad against the crusaders in Afghanistan and the Hindu mushrikeen in Kashmir, seeking victory or martyrdom?

It is clear that whether a civilian or military leadership emerges from Democracy, it will always exploit the resources and armed forces of the Muslims to safeguard the interests of America and Kuffar. This pitiful scenario will only be brought to an end when the sincere within the armed forces withdraw their support of traitors in the political and military leadership, by providing Nusrrah to Hizb ut-Tahrir for the establishment of the Khilafah. Today, America is so weak that despite its material and military resources, she failed to defeat a few thousand Mujahideen, depending instead on the strength of Pakistan armed forces. InshaAllah the incoming Khilafah will unify the might of the armed forces and sincere Mujahideen, to easily eject America from this region. The Khilafah is the only real and practical way to achieve peace and stability and usher in a new era of progress. However, if we maintain the current course, our humiliation in this world and punishment in the Hereafter is certain.

لاَ يُغَيِّرُ مَا بِقَوْمٍ حَتَّىٰ يُغَيِّرُواْ مَا بِأَنْفُسِهِمْ

“Verily! Allah will not change the good condition of a people as long as they do not change their state of goodness themselves”

(Ar-Raad:11)

Shahzad Shaikh

Deputy to the Spokesman of Hizb ut-Tahrir in the Wilayah of Pakistan 

اتوار، 16 ذی القعد، 1436ھ                             31/08/2015                                نمبرPR15060 :

سوزن رائس کا دورہ پاکستان

افواج پاکستان کی ذمہ داری اسلام اور مسلمانوں کے مفادات کا تحفظ کرنا ہے ناکہ امریکی مفادات کی نگرانی کرنا

        اتوار 30  اگست 2015 کو امریکہ کی نیشنل سیکیوریٹی کی مشیر سوزن رائس نے پاکستان کی سیاسی و فوجی قیادت سے ملاقاتیں کیں اور افغانستان میں امریکہ کی شکست کو فتح میں بدلنے کے لئے مخلص مجاہدین کے خلاف شمالی وزیرستان میں مزید اقدامات کا مطالبہ کیا اور ایسا نہ کرنے کی صورت میں کولیشن سپورٹ فنڈ کو روکنے کا عندیہ دیا۔ بدقسمتی سے پاکستان کی سیاسی و فوجی قیادت نے امریکہ کو یہ منہ توڑ جواب نہیں دیا کہ افواج پاکستان کی ذمہ داری اسلام اور مسلمانوں کے مفادات کا تحفظ کرنا ہے نہ کہ امریکہ کے مفادات کا تحفظ کرنا بلکہ اپنے اسی کرپٹ روایتی موقف کو دہرایا کہ افغانستان میں امن کا قیام "تمام فریقین" کی ذمہ داری ہے جیسے مسلمانوں کی سرزمین پر صلیبی امریکیوں کا بھی کوئی حق ہے اور امریکہ کی غلامی میں مزید خدمات کی انجام دہی کے لئے کولیشن سپورٹ فنڈ سے ڈالروں کا مطالبہ کیا۔

        کیا اب بھی کسی کو شک ہے کہ نام نہاد دہشت گردی کے خلاف جنگ دراصل اسلام اور مسلمانوں کے خلاف جنگ ہے؟ کیا اب بھی کسی کو شک ہے کہ پاکستان کے قبائلی علاقوں میں ہونے والے فوجی آپریشنز کا مقصد افغانستان میں امریکہ کے خلاف جہاد کرنے والے مخلص مجاہدین کو ختم کرنا ہے؟ کیا اب بھی کسی کو شک ہے کہ راحیل-نواز حکومت بھی اپنے پیشرو حکومتوں، مشرف-عزیز، کیانی-زرداری کی غدارانہ سنت ہی کی پیروی کر رہی ہے اور پاکستان کی افواج کو مسلم ایٹمی طاقت کے دروازے، افغانستان، میں امریکی صلیبیوں کے قدم مضبوطی سے جمانے کے لئے قربان کر رہی ہے؟ کیا اب بھی کسی کو شک ہے کہ نیشنل ایکشن پلان امریکی ایکشن پلان ہےجس کا مقصد پاکستان میں اسلام اور اس کے داعیوں کو کچل دینا ہے؟

        حزب التحریر اہل قوت میں موجود مخلص لوگوں سے سوال کرتی ہے کہ آخر کب تک ہماری سپاہی اور افسران امریکی مفادات کی بھینٹ چڑھتے رہیں گے؟ کب تک آپ اسلام اور پاکستان کے دشمن امریکہ کو سیاسی و فوجی قیادت میں موجود غداروں کی جانب سے مدد کی فراہمی کو خاموشی سے دیکھتے رہیں گے؟ آخر وہ وقت کب آئے گا جب پاکستان کی فوج افغانستان میں صلیبی امریکیوں اور کشمیر میں ہندو مشرکین کے خلاف جہاد کے لئے حرکت میں آئے گی اور کامیابی اور شہادت ہی ان کی منزل ہوگی؟

        یہ بات واضح ہے کہ جمہوری نظام سے نکلنے والی قیادت چاہے وہ سیاسی ہو یا فوجی ہمیشہ امریکہ اورکفار کے مفادات کے تحفظ کے لئے مسلمانوں کی افواج اور اور ان کے وسائل کو قربان کرتی ہے۔ اس بدترین صورتحال سے صرف اسی صورت نکلا جاسکتا ہے جب افواج میں موجود مخلص افسران سیاسی و فوجی قیادت میں موجود غداروں کو اپنی حمایت سے محروم کر دیں اور خلافت کے قیام کے لئے حزب التحریر کو نصرۃ فراہم کریں۔ امریکہ اتنا کمزور ہے کہ چند ہزار مجاہدین سے دنیا کی تمام تر دولت اور فوجی وسائل رکھنے کے باوجود مقابلہ نہیں کرسکا اور ان سے مقابلہ کرنے کے لئے پاکستان کی طاقتور افواج کی صلاحیتوں کا محتاج ہے۔ انشاء اللہ آنے والی خلافت افواج پاکستان اور مخلص مجاہدین کی عظیم طاقت کو یکجا کر کے باآسانی امریکہ کو اس خطے سے نکال باہر کرے گی۔ خلافت ہی وہ حقیقی و عملی طریقہ ہے جس سے اس خطے میں حقیقی امن و استحکام اور ترقی کے نئے دور کا آغاز ممکن ہے۔ لیکن اگر ہم موجودہ روش پر ہی چلتے رہے تو دنیا میں ذلت و رسوائی اور آخرت  کی بربادی لازمی امر ہے۔

لاَ يُغَيِّرُ مَا بِقَوْمٍ حَتَّىٰ يُغَيِّرُواْ مَا بِأَنْفُسِهِمْ

"اللہ تعالیٰ کسی قوم کی حالت اس وقت تک تبدیل نہیں کرتاجب تک کہ وہ خود اس چیز کو نہ بدلیں جو کچھ ان کے اپنے نفوس میں ہے"

(الرعد:11)

شہزاد شیخ

ولایہ پاکستان میں حزب التحریر کے ڈپٹی ترجمان


Today 1573 visitors (5247 hits) Alhamdulillah
=> Do you also want a homepage for free? Then click here! <=