Media Office Hizb ut-Tahrir Pakistan

PR 18 03 2013

Monday, 6th Jamadi-ul- Awwal 1434H                            18/03/2013                                N0: PR13032

Press Release

Amendment In Anti Terror Law Is Part Of America’s War On Islam

Traitor Rulers Want To Silence Anti-American Voices

The passage of Anti – Terrorism Second Amendment Bill 2013 is yet another proof that the rulers are traitors and American agents. After hectic efforts for almost twelve years, America and traitors with in the political and military leadership have failed to convince the people of Pakistan that the war against terror is not a war against Islam, that this war is not America’s war and that America is not the enemy of Pakistan. Today, there is an unprecedented level of conviction amongst the people of Pakistan that the War on Terror is a war against Islam and also that America is an enemy of Pakistan, Muslims and Islam.

It is a barefaced lie that the purpose of the amendment in the terror laws is to bring terrorists under judicial accountability. Had this been the purpose, then these agent rulers would not have facilitated such a “respectful” escape of the murderer Raymond Davis and would not have allowed America’s network of terror to continue to operate in Pakistan, even after his departure. Even before the promulgation of this law, agencies had been abducting people and putting them in their dungeons for years, as they have done with Naveed Butt, the official spokesman of Hizb ut-Tahrir in Pakistan, who was abducted on 11 May 2012. It is a well known fact that these agencies have a habit of tapping phones of judges, journalists, politicians, traders as well as the common folk.

Accordingly, there is no added purpose of this evil legislation than to seal the mouths and minds of the people, after the abysmal failure to intellectually convince them that this war is their own war. These traitors are thus following the footsteps of their American masters, as they introduced the draconian Patriot Act to choke the voices of their own people, in the name of national security. Even if some one dares to speak, they put aside all their laws and persecute the person mercilessly, with the sanction of American president. Similarly in Pakistan, traitors within the political and military leadership want to silence voices protesting against their treacheries, with the help of this amendment in Anti-Terrorism law.

Hizb ut-Tahrir wants to direct the attention of media, intellectuals, human rights organizations, lawyers fraternity and the masses towards the fact that these traitors wants to deprive us of the Islamic right and duty to account rulers. Allah سبحانه وتعالى ordered the Muslims to hold their rulers accountable and strongly commanded them to challenge them, if they withheld the citizens’ rights, neglected their duties towards them, ignored any of the citizens’ affairs, violated the rules of Islam or ruled by other than that which Allah سبحانه وتعالى has revealed. Rasool Allah صلى الله عليه و سلم declared the accountability of the rulers as a struggle of great reward, saying:

«أفضل الجهاد كلمة حق عند سلطان جائر»

“The best of Jihad is a word of truth before a tyrant ruler’’ (Ahmed).

Hizb ut-Tahrir rejects this filthy legislation and assures the traitors within the political and military leadership that Hizb will continue to expose their treacheries against Islam, Muslims and Pakistan. Hizb ut-Tahrir also calls the media, intellectuals, human rights organizations, lawyer’s community and the masses to reject this inhuman, unethical and un-Islamic legislation, raising their voice and lodging protest against this evil bill.

ShahzadShaikh

Deputy to the official spokesman of Hizb ut-Tahrir in Pakistan

 

پیر، 06 جمادی الاول، 1434ھ                                               18/03/2013                                نمبر:PR13032

انسداد دہشت گردی کے قانون میں ترمیم امریکی جنگ کا حصہ ہے

غدار حکمران امریکہ مخالف زبانوں کو تالا لگانا چاہتے ہیں

انسداد دہشت گردی کے قانون میں دوسرے ترمیمی بل 2013 کی منظوری حکمرانوں کا امریکی ایجنٹ اور غدار ہونے کا ایک اور ثبوت ہے۔ بارہ سال کی انتھک جدوجہد کے باوجود امریکہ اور سیاسی و فوجی قیادت میں موجود غدار پاکستان کے عوام کو اس بات پر قائل نہیں کر سکے کہ دہشت گردی کے خلاف جنگ اسلام کے خلاف جنگ نہیں، یہ جنگ امریکہ کی نہیں اور امریکہ پاکستان کا دشمن نہیں ہے۔ آج پاکستان کے عوام اس بات پر جتنا یقین رکھتے ہیں کہ دہشت گردی کے خلاف جنگ دراصل اسلام کے خلاف جنگ ہے اور امریکہ پاکستان، مسلمانوں اور اسلام کا دشمن ہے، اس سے قبل کبھی اتنا یقین نہ رکھتے تھے۔

یہ کہنا کہ اس قانون کا مقصد دہشت گردوں کو قانون کے کٹہرے میں کھڑا کرنا ہے ایک سفید جھوٹ ہے کیونکہ اگر ان ایجنٹ حکمرانوں کو دہشت گردوں کو قانون کے کٹہرے میں کھڑا کرنا مقصود ہوتا تو یہ کبھی ریمنڈ ڈیوس کو باعزت طریقے سے ملک سے فرار نہ کرواتے اور اس کے پھیلائے ہوئے نیٹ ورک کو آج بھی سیاسی و فوجی قیادت میں موجود غداروں کی مکمل سرپرستی حاصل نہ ہوتی۔ سرکاری ایجنسیاں تو اس قانون کی غیر موجودگی میں بھی لوگوں کو اغوا کر کے سالوں تک غائب کر رہیں تھیں جیسا کہ پاکستان میں حزب التحریر کے ترجمان نوید بٹ کے ساتھ کیا گیا جنھیں ایجنسیوں کے ہاتھوں اغوا ہوئے دس ماہ ہو چکے ہیں اور ججوں، صحافیوں، سیاست دانوں، تاجروں اور عام عوام کے فون ٹیپ کر رہیں تھیں۔ اس قانون کا اس کے سوأ کوئی مقصد نہیں کہ جب حکمران عوام کو اس امریکی جنگ کو اپنی جنگ قرار دینے میں فکری طور پر مکمل ناکام ہو گئے تو اب ان کی زبانوں کو تالا لگانے اور ان کی سوچوں پر پہرا بٹھانے کے لیے ایک شیطانی قانون کا سہارا لیا جا رہا ہے۔ یہ غدار حکمران اپنے آقا امریکہ ہی کی مکمل پیروی کر رہے ہیں۔ جیسے امریکہ نے اپنے عوام کو امریکی پالیسیوں پر تنقید سے روکنے کے لیے قومی سلامتی کے بہانے سے پیٹرئیاٹ ایکٹ (Patriot Act) کا شیطانی قانون بنایا اور جو اس کے باوجود بھی خاموش نہ ہو ا تو اپنے ہی بنائے ہوئے تمام قوانین کو بالائے طاق رکھتے ہوئے صدارتی اجازت نامے سے انھیں قتل کروا دیا بالکل ویسے ہی پاکستان کے غدار حکمران بھی اس نئے قانون کے ذریعے حکمرانوں کی غداریوں کے خلاف اپنے لوگوں کا منہ بند رکھنا چاہتے ہیں۔

حزب التحریر میڈیا، دانشوروں، انسانی حقوق و وکلأ تنظیموں اور عوام کی توجہ اس جانب مبذول کراتی ہے کہ یہ غدار حکمران ہمیں حکمرانوں کا محاسبہ کرنے کے اسلامی فریضے کو پورا کرنے سے محروم کرنا چاہتے ہیں۔ اللہ تعالیٰ نے مسلمانوں کو اپنے حکمرانوں کا احتساب کرنے کا حکم دیا ہے اور سختی سے اس بات کا مطالبہ کیا ہے کہ اگر حکمران لوگوں کے حقوق غصب کریں یا عوام سے متعلق عائد ہونے والی ذمہ داریوں کو پورا نہ کریں یا امت کے معاملات سے غفلت برتیں یا اسلام کے حکموں کو توڑیں یا اللہ کے نازل کردہ احکامات کے علاوہ کوئی اورچیز نافذ کریں تو مسلمان انہیں چیلنج کریں اور ان کا محاسبہ کریں۔ اسی لیے رسول اللہ ﷺ نے حکمرانوں کے احتساب کو افضل جہاد سے تعبیر کیا ہے۔ رسول اللہ ﷺ فرماتے ہیں:

«أفضل الجهاد كلمة حق عند سلطان جائر»

"بہترین جہاد جابرحکمران کے سامنے کلمہ حق کہنا ہے" (احمد)۔

لہذا حزب التحریر اس قانون کو یکسر مسترد کرتی ہے اور سیاسی و فوجی قیادت میں موجود غداروں کو یقین دلاتی ہے کہ حزب ان کی اسلام، مسلمانوں اور پاکستان کے خلاف غداریوں کو بے نقاب کرنے کے سلسلے کو جاری و ساری رکھے گی۔ حزب التحریر میڈیا، دانشوروں، انسانی حقوق اور وکلأ کی تنظیموں اور عوام سے مطالبہ کرتی ہے کہ وہ اس غیر انسانی، غیر اخلاقی اور غیر اسلامی قانون کو مسترد کر دیں اور اس کے خلاف آواز بلند کریں۔

پاکستان میں حزب التحریر کے ڈپٹی ترجمان

شہزاد شیخ


Today 2327 visitors (7774 hits) Alhamdulillah
=> Do you also want a homepage for free? Then click here! <=