Media Office Hizb ut-Tahrir Pakistan

PR 09 07 2013


Tuesday, 30th Shaban 1434H                             09/07/2013                                N0: PR13074

Press Release

Abbottabad Commission Report

American Raj must be uprooted from the country

After the disclosure of Abbottabad Commission Report, it has been proved once again that the American Raj and America’s agents in the political and military leadership must be ended. It is of grave concern that the commission did not find it necessary to call the Army Chief, General Kayani, to record his statement regarding this incident and to answer those questions which have been raised against his role in this outrageous incident. Even though after this incident their were great resentment and anger against him within his own ranks, forcing him to try and cool this resentment by touring almost a dozen garrisons within a few days. He faced very tough questions from disgruntle officers but he did not succeed in pacifying their anger. Similarly, commission did not call the President of Pakistan, Asif Ali Zardari, who after the incident congratulated the Americans and described this incident as a great victory.

After 9/11, first under the leadership of Musharraf, aided by his right hand man Kayani, traitors within the political and military leadership, rendered the whole country, its forces, intelligence and all its resources at the disposal of America. After America appointed General Kayani as a replacement for Musharraf, he took this process to a new heights of American slavery by allowing the active operation of the Raymond Davis Network, extensive drone attacks and military operations in tribal areas, as well as the construction of a new huge fortress, masquerading as an American embassy in Pakistan’s capital, within minutes reach of the Army’s General Head Quarters (GHQ).

The Abbottabad incident was a slap in the face of Pakistan and its armed forces. If there was even an ounce of shame to be found in the traitors present in the political and military leadership, then Zardari, General Kayani and their henchmen would have left their posts without any delay. But those who were involved in this incident are either retiring with respect, completing their terms, or waiting to get further promotions, so they have new opportunities to humiliate nuclear Pakistan and its forces so as to please their American Masters.

The people of Pakistan and the sincere officers in the armed forces must know that only Hizb ut-Tahrir under its Ameer, Shaikh Ata Bin Khalil Abu Rushta, can bring Pakistan out of this humiliation and darkness and end the American Raj. Now it is up to the sincere officers in the armed forces to forget wasting their time over these white-washing reports. Without any further delay, they must uproot the traitors in the political and military leadership and provide Nussrah to Hizb ut-Tahrir for the establishment of Khilafah. Only then will the Khilafah close American embassies, consulates and bases, expel American diplomats and intelligence officials, uproot the Raymond Davis network, cut the NATO supply line and end the American Raj from the country once and for all.

Shahzad Shaikh

Deputy to the official spokesman of Hizb ut-Tahrir in Pakistan

 

منگل، 30 شعبان، 1434ھ                                                              09/07/2013                                نمبر:PR13074

ایبٹ آباد کمیشن رپورٹ

ملک سے امریکی راج کا خاتمہ انتہائی ضروری ہے

ایبٹ آباد کمیشن رپورٹ سامنے آنے کے بعد یہ بات ایک بار پھر ثابت ہوئی ہے کہ ملک سے امریکی راج کا خاتمہ اور سیاسی و فوجی قیادت میں موجود غداروں سے نجات انتہائی ضروری ہے۔ یہ امر انتہائی حیران کن ہے کہ کمیشن نے افواج پاکستان کے سربراہ جنرل کیانی کو اس سانحے کے حوالے سے اپنا بیان ریکارڈ کروانے اور  اس سانحے میں ان کے کردار کے حوالے سے اٹھنے والے سوالات کا جواب دینے کے لیے بلوانا ضروری نہیں سمجھا جبکہ اس سانحے کے بعد افواج پاکستان میں جنرل کیانی کے خلاف اتنا شدید غم وغصہ تھا کہ اس کو ٹھنڈا کرنے کی کوشش میں اس نے چند دنوں میں تقریباً درجن بھر چھاؤنیوں کا دورہ کیا اور فوجی افسران کے انتہائی سخت سوالات کا سامنا کیا لیکن اس کے باوجود جنرل کیانی اپنے افسران کو قائل کرنے میں کامیاب نہیں ہوسکے۔ اسی طرح کمیشن نے صدر پاکستان آصف علی زرداری کو بھی اپنے سامنے پیش ہونے کا حکم جاری نہیں کیا جس نے اس سانحے پر دشمن امریکہ کو مبارک باد دی تھی اور اس سانحے کو عظیم کامیابی سے تعبیر کیا تھا۔

9/11 کے بعد پہلے مشرف کی قیادت میں سیاسی و فوجی قیادت میں موجود غداروں نے ملک، اس کی افواج، انٹیلی جنس اور تمام اثاثوں کو امریکی جھولی میں ڈال دیا تھا اور پھر جنرل کیانی نے امریکی غلامی کے اس سلسلے کو نئی انتہاوں تک پہنچانے کے لیے بلیک واٹر، ریمنڈ ڈیوس نیٹ ورک، ڈرون حملوں، قبائلی علاقوں میں فوجی آپریشنوں اور اسلام آباد میں امریکی سفارت خانے کو ایک فوجی قلعے میں تبدیل کرنے کے لیے توسیع کی اجازت دی۔

سانحہ ایبٹ آباد ایٹمی پاکستان کے عوام اور اس کی افواج کے منہ پر ایک طمانچہ تھا۔ اگر سیاسی و فوجی قیادت میں موجود غداروں میں شرم و غیرت کی کوئی معمولی سی بھی رمک موجود ہوتی تو جنرل کیانی، جنرل پاشا، زرداری اور گیلانی بغیر کسی تاخیر کے اپنے عہدوں سے سبکدوش ہو جاتے۔ لیکن اس سانحے میں ملوث کردار یا تو باعزت ریٹائر ہو رہے ہیں، اپنی آئینی مدت پوری کر کے گھر کو جارے ہیں یا مزید توسیع کی امید پر افواج پاکستان سے جونک کی طرح چمٹے ہوئے ہیں تاکہ ایٹمی پاکستان اور اس کی افواج کو مزید ذلیل و رسوا کرنے اور اپنے آقا امریکہ کی خوشنودی حاصل کرنے کا کوئی موقع خالی نہ جانے دیں۔

پاکستان کے عوام اور افواج میں موجود مخلص افسران جان لیں کہ صرف اور صرف حزب التحریر اپنے امیر شیخ عطا بن خلیل ابو رشتہ کی قیادت میں پاکستان کو موجودہ ذلت و رسوائی کے اندھیروں سے نکال اور ملک سے امریکی راج کا خاتمہ کرسکتی ہے۔ اب یہ افواج پاکستان کے مخلص افسران کا فرض ہے کہ وہ کمیشن کی رپورٹوں پر وقت ضائع نہ کریں، سیاسی و فوجی قیادت میں موجود غداروں کو اکھاڑ پھینکیں اور خلافت کے قیام کے لیے حزب التحریر کو نصرة فراہم کریں۔ خلافت ہی ملک سے امریکی سفارتی مشنز اور اڈوں کا خاتمہ کرے گی، تمام امریکی سفارتی اور انٹیلی جنس اہلکاروں کو ملک بدر کرے گی، ریمنڈ ڈیوس نیٹ ورک کا خاتمہ کرے گی، نیٹو سپلائی لائن کو کاٹ دے گی اور ملک سے امریکی راج کا خاتمہ کر دے گی۔

پاکستان میں حزب التحریر کے ڈپٹی ترجمان

شہزاد شیخ


Today 323 visitors (1863 hits) Alhamdulillah
=> Do you also want a homepage for free? Then click here! <=