Media Office Hizb ut-Tahrir Pakistan

PB 13 11 2013

Wednesday, 10th Muharram 1435 AH             13/11/2013 CE               No: PB13105

Press Briefing

بسم الله الرحمن الرحيم

America seeks a permanent presence through talks

The media in Pakistan has raised questions regarding the matter of talks with the Taleban. Hizb ut-Tahrir's Media Office in Pakistan has thereby issued the following press briefing. It is being asked, in the light of the drone attack which killed a Taleban leader, how can it be said that US desires talks with the Taleban? Are such talks not a sign of victory of the Muslims over America? Why would America need talks with “moderate” Taleban at all?

The Media Office issues the following points for consideration:

1.     Regarding the issue of talks with Taleban in general, America needs a negotiated settlement to provide legitimacy for its presence after its partial withdrawal, whether it is the world's second largest American embassy in Islamabad or nine bases in Afghanistan, or over 100,000 of its personnel, or other than that. So the Taleban within Afghanistan are important as they are from the Pushtoon, whose support is needed for any agreement to have practical meaning or weight. Indeed, the Pushtoon, collectively, are the dominant faction in Afghanistan throughout its existence.

     As for the Pushtoon in Pakistan's tribal areas in particular, America also requires their support for settling matters according to its plan. The Pushtoon have strong relations with the Pushtoon of the Afghanistan and the Pakistan-Afghanistan border, the colonialis- drawn Durand line, has little meaning for them. Part of gaining the support for talks is to curb their support for the resistance to the American occupation. For this America needs to keep Pakistan's armed forces engaged in the tribal areas to fight the resistance on its behalf, as well as discredit the resistance in the eyes of the Pushtoon as much as it can. Indeed by discrediting and suppressing the resistance to America's occupation, the Americans hope that the common Pushtoon is more likely to support the negotiations between the regimes and the “moderate” Taleban. Moreover, it is noticed that the Taleban in Afghanistan and the neighboring tribal areas of Pakistan are a loose groupings that can be infiltrated and influenced easily. Thus, America distinguishes within these groupings between the “moderate” and “hard-line” Taleban.

2.     Indeed, America is well aware of Muslims' suspicions regarding its attempts to secure a presence. Such suspicions are found within the Taleban, the ulema of Deoband, the Pushtoon, the Muslims in general and the armed forces in particular. It has been noticed previously that America sensed the failure of the Kayani-Zardari regime to win the public for its support for the war on terror. It appears that a factor that compelled America to bring back Nawaz Sharif to power, retrieving him from the dustbin of history into which it threw him at the hands of its agent Musharraf, is the expectation that Nawaz will appease the Islamic and right-wing, nationalist opposition to the war on terror. Nawaz and his party, the Pakistan Muslim League – Nawaz (PML-N) have roots in the conservative section of the society. To deceive the people of Pakistan, America has allowed its willing agent Nawaz to make prominent the issues of "ending drone strikes" and "peace negotiations for the withdrawal.” By adopting an anti-American stance, America hopes Nawaz can disguise his alliance with US and serve US with less resistance, as others have done in the past, such as other agents in the Muslim world, who are full of anti-American rhetoric, whilst they open the doors to America in every way that they can.

3.     As a part of this strategy of cursing the master in order to fulfill the master's wishes, America has allowed its agents to promote the idea that it is against talks. So America appears as if it is against the negotiations in order to encourage the Muslims. This is a “double game” by which Muslims would pursue the talks in the belief that they are undermining American influence, because on the face of it America opposes the talks. Moreover, the regime spread the lie that the talks are a sign of victory against America, even though American needs the talks to secure whatever it can after a long and costly war. Thus, America's confirmed agents, both in Pakistan and Afghanistan, are playing along with this “double game.” This was seen recently, just after the return of Nawaz Sharif from America, with fresh instructions. America killed a leader of the Taleban in Pakistan, Hakeemullah Mehsud. The agents raised a hue and cry that the talks are being threatened. Dawn reported on 1 November 2013, "Condemning the drone strikes, Interior Minister Chaudhry Nisar said these were aimed at sabotaging efforts to establish peace in the country. “A delegation was about to be sent for talks to the Taliban tomorrow (Saturday),” the minister said hinting that a "senior militant commander" may have been killed in Friday's strike. Nisar's statement came before public confirmation that the senior militant commander was Hakimullah." Then on 2 November 2013, Dawn reported, "Calling the drone strike that killed Pakistani Taliban chief Hakimullah Mehsud on Friday “an attack on regional peace by America,” Interior Minister Chaudhry Nisar Ali Khan Saturday said bilateral ties with the US will now be reviewed." And on 2 November 2013, Dawn reported, "Federal Information Minister Pervez Rashid told reporters in Islamabad that the government wanted to press ahead with its plan to negotiate with Mehsud’s Tehrik-i-Taliban Pakistan (TTP). “We can say that this time drone struck the peace talks but we will not let the peace talks die,” Rasheed said." As for America's stooge in Afghanistan, the Tribune carried from AFP on 4 November 2013, "KABUL: Afghan President Hamid Karzai has criticised the “unsuitable” timing of the US killing of Tehreek-e-Taliban leader Hakimullah Mehsud and expressed hope it will not derail regional peace efforts. Karzai told a visiting US Congress delegation that the drone strike “took place at an unsuitable time but he hoped as a result the peace process is not harmed,” his office said in a statement released late Sunday."

4.     The “double game” is why it is also noticed that whilst condemning the drone strike, America's men on the ground insisted on pursuing talks with the Taleban. On 3 November 2013, Dawn reported, "Pakistan's foreign ministry said it had summoned US ambassador Richard Olson to protest over the drone strike that killed Mehsud and another that hit a day earlier. The ministry statement also stressed that despite the drone strike the government was “determined to continue with efforts to engage the TTP”." And on 3 November 2013, Dawn reported, "ISLAMABAD, Nov 2: JUI-F chief Maulana Fazlur Rehman urged the government on Saturday to remain steadfast in its commitment and resolve for talks with the Taliban even after the latest US drone strike in which Taliban leader Hakeemullah Mehsud was killed. The Maulana said in a statement that the death of Hakeemullah had led to creation of an emotional environment in the country. He said because of the TTP chief’s killing, the process of talks might be delayed for a few days, but the enemies of peace and reconciliation should not be allowed to succeed."

5.     So this is on the one hand, America is made to appear to oppose the talks, even though it is in dire need of talks with “moderate” Taleban on both sides of the border to secure a presence in the region, that its cowardly troops and collapsing economy could not secure through the battlefield. On the other hand, America is also trying to convince the Muslims that the “hard line” Taleban is not a threat to America alone, but also to the Muslims themselves. This is to discredit the resistance and build an atmosphere for talks, rather than continuous fighting of the occupation.

For this, America has supervised waves of assassinations and bombings in Pakistan, whilst its agents have cried, “See, it’s our war as well, after all.”  This criminal and destructive campaign is a hallmark of American intelligence and private military the world over. They are known as “false flag attacks,” attacks made in the name of the enemy, to incite troops against the enemy and discredit the enemy. Such attacks are not difficult to arrange as American intelligence and private military organizations are skilled in conducting the operations directly or through infiltration of groups, either directly or through its agents in Pakistan's agencies. It is noticed that all American assets are untouched, such as the embassy, consulates, FBI and CIA bases, whilst the Muslims count their dead in the mosques, markets and schools. Thus, using this violence, America embarked on building a new narrative in which the presence of Pakistan Army in FATA is to protect Pakistan from an internal threat. This is to hide the actual purpose of the operations which is to stop the Pashtun Muslims from crossing the border into Afghanistan and waging war against US occupation. And America has tied such violence with a favorable public opinion for its war. On 1 December 2009, Obama declared, “There have been those who have said fighting against extremism is not their fight... as innocents have been killed from Karachi to Islamabad, it has become clear that it is the Pakistan people who are the most endangered by extremism.” Then again, after nearly three years of bombings and assassinations, on 12 October 2012, Victoria Nuland, the US State Department’s spokesperson, said, “So obviously, the degrees to which the Pakistani people turn against them help their government to go after them. That would be, perhaps, a silver lining from this horrible tragedy.”

This brutal violence will continue so that the agents of America have a justification to keep Pakistan's armed forces engaged in the tribal regions. Indeed, America is aware that the people of the Pakistan are suspicious of the America's war, presence and the talks over its withdrawal. In fact majority of the Pakistan's masses are against Pakistan's military conducting operations in the FATA region. So America will maintain its efforts to exaggerate the threat of TTP so that an excuse can be created for the Pakistani masses for the presence of Pakistan Army in FATA region. Thus, as part of its strategy, America is fighting the Muslims in Afghanistan, whilst talking of withdrawal and transition to the Afghan army. And the other part is ensuring that the Pakistan Army fights with the Taleban in Pakistan's neighboring tribal areas. In this way, America hopes to secure its presence within the region.

6.     Thus, America is not interested in peace either in Afghanistan or in Pakistan. It wants to minimize its involvement in conducting military operations in the region, with the reputation of its armed forces shattered and its economy collapsing, if it has not collapsed entirely. However, it must retain a sizeable military footprint in the region for strategic purposes, otherwise all of its efforts thus far will have been for naught. For America the way forward to achieve such an objective is to secure a settlement for its presence. In addition, it will wave the threat of the Taleban as a justification for its presence well beyond 2014. Indeed, one of the conditions of the US-Afghanistan strategic pact for American troops stationed in Afghanistan beyond 2014 is to allow America to conduct independent counter terrorism operations. Also, the US President, Barack Obama, was careful to add the continued threat of extremists, whilst talking about withdrawal and transition. On 23rd May 2013, Obama said "In Afghanistan, we will complete our transition to Afghan responsibility for security. Our troops will come home. Our combat mission will come to an end. And we will work with the Afghan government to train security forces, and sustain a counter-terrorism force which ensures that al Qaeda can never again establish a safe-haven to launch attacks against us or our allies. Beyond Afghanistan, we must define our effort not as a boundless ‘global war on terror’ – but rather as a series of persistent, targeted efforts to dismantle specific networks of violent extremists that threaten America. In many cases, this will involve partnerships with other countries."  America has left open the doors for it to stay under the excuse of countering terrorism, even though it is the biggest terrorist in the region.

7.     In conclusion: America is trying to secure a peace deal with the Taleban to secure her presence. She knows that even after such a deal she will have a justification for remaining in Afghanistan under the guise of counter-terrorist operations in the country and training the Afghan Army. As for Pakistan, America realizes that no peace deal in Afghanistan can be reached without taming the Pashtun belt bordering Afghanistan, the tribal areas of Pakistan. The matter for the aware Muslim is to realize the danger of the American presence within Muslim lands, whether it is their diplomatic, military, private military or intelligence presence. It is this presence which supervises the bombings. It is this presence that drives the talks and their direction. It is this presence that has caused all manner of harm to the Muslims.  Islam requires the eradication of this presence. This will neither be achieved by groups nor by talks, but by a state mobilizing a threat of force through what it possesses of armed forces.

Moreover let us know well that America has never succeeded since its founding to ever solve any international issue. Moreover, it is less capable than ever before, with its economy collapsing, if not completely collapsed, and the reputation of her cowardly troops in tatters. Yet its agents in the Muslim World continue to work in fear and awe, just as the Jinn toiled in the mountains after the passing of Suleiman AS to Paradise. And yet they toil to maintain American influence in our lands, even if it were for a single day longer.

The American failure was inevitable due to the corruption and invalidity of capitalism, which America holds and works to impose on the world, as well as due also to the political impotence of U.S. policymakers. However, there will only be real statesmen to look after the affairs of the world with righteousness and justice, the likes of Omar al-Faruq RA, under the Khilafah state soon, inshaaAllah, and the foremost of them will be the shebaab of Hizb ut-Tahrir. For these shebaab are the ones who will teach America and the West in general a lesson in how to actually tend to the affairs of the people, within the Khilafah state. Moreover, they will play with the so-called international community on the tips of their fingers, and tomorrow is to arrive soon.

))وَقَدْ مَكَرُوا مَكْرَهُمْ وَعِنْدَ اللَّهِ مَكْرُهُمْ وَإِنْ كَانَ مَكْرُهُمْ لِتَزُولَ مِنْهُ الْجِبَالُ((

“Indeed, they planned their plot, and their plot was with Allah, though their plot was not such as to remove the mountains from their places.”  [Surah Ibrahim 14:46]

Media Office

Wilayah of Pakistan

10th Muharram 1435, 13th November 2013

بدھ، 10  محرم، 1435ھ                                 13/11/2013                              نمبرPB13105:

پریس بریفینگ

بسم اللہ الرحمن الرحیم

مذاکرات کے ذریعے امریکہ خطے میں اپنی موجودگی کو یقینی بنانا چاہتا ہے

پاکستان کے میڈیا نے طالبان کے ساتھ مذاکرات کے حوالے سے سوالات اٹھائے  ہیں۔ لہٰذا پاکستان میں حزب التحریر کے میڈیا آفس نے اس مسئلہ پر مندرجہ ذیل پریس بریفینگ جاری کی ہے۔ امریکی ڈرون حملے میں طالبان رہنما کی ہلاکت کے بعد یہ کیسے کہا جاسکتا ہے کہ امریکہ طالبان کے ساتھ مذاکرات چاہتا ہے؟ آخر امریکہ کیوں "معتدل" طالبان کے ساتھ مذاکرات چاہتا ہے؟

میڈیا آفس ان سوالات کے جوابات کو جاننے کے لیے مندرجہ ذیل نکات کو پیش کررہا ہے:

1۔      جہاں تک طالبان سے عمومی طور پر مذاکرات کی بات ہے تو امریکہ افغانستان سے اپنے محدود انخلاء کے منصوبے کی آڑ میں افغانستان میں اپنی مستقل موجودگی کو مذاکرات کے ذریعے ایک قانونی حیثیت دینا چاہتا ہے۔ اسی منصوبے کا حصہ اسلام آباد میں دنیا کے دوسرے بڑے امریکی سفارت خانے کی تعمیر، افغانستان میں نو(9) امریکی اڈوں کا حصول اور ایک لاکھ سے زائد نجی سکیورٹی کنٹریکٹرز کو افغانستان اور پاکستان میں تعینات کرنا بھی شامل ہے۔  افغانستان میں موجود طالبان ، جن کی بڑی تعداد پشتون ہے، اس منصوبے کی تکمیل کے لیے اہم ہیں ۔ ان کی  حمائت کے بغیر کوئی بھی معاہدہ بے معنی ہوگا کیونکہ  افغانستان کی تاریخ میں پشتون ہی سب سے اہم  اور بااثرگروہ ہے۔

جہاں تک پاکستان کے قبائلی علاقوں کے پشتونوں کا تعلق ہے ، امریکہ کو اپنے منصوبے کی کامیابی کے لیے ان کی حمائت بھی درکار ہے۔ پاکستان کے قبائلی علاقوں کے پشتونوں کے افغانستان کے پشتونوں سے گہرے اور مضبوط روابط ہیں ۔ پاک و افغان سرحد ڈیورنڈ لائن، جوکہ برطانوی استعمارنے قائم کی تھی، کے دونوں جانب رہنے والےپشتونوں کے لیے کوئی اہمیت نہیں رکھتی۔ مذاکرات پر مجبور کرنے کے لیے یہ ضروری ہے کہ پاکستان کے قبائلی علاقوں سے امریکی قابض افواج کے خلاف لڑنے والوں کے لیے فراہم ہونے والی معاونت کو ختم کیا جائے۔ اس مقصد کے حصول کے لیے امریکہ یہ چاہتا ہے کہ افواج پاکستان قبائلی علاقوں میں مصروف رہیں اور اس کے خلاف ہونے والی مزاحمت کا خاتمہ کریں اور اس کے ساتھ ساتھ مزاحمت کی ساکھ کو جس قدر ممکن ہو پشتونوں کی نظر میں خراب کردے۔ یقیناً امریکہ یہ امید کرتا ہے کہ اگر وہ امریکی قبضے کے خلاف مزاحمتی تحریک کو کمزور اور اس کی ساکھ کو خراب کردے تواس بات کے زیادہ امکانات ہیں کہ  عام پشتون حکومت اور "معتدل" طالبان کے درمیان ہونے والے مذاکرات کی حمائت کریں گے۔ اس کے علاوہ یہ بھی دیکھا گیا ہے کہ افغانستان اورپاکستان کےقبائلی علاقوںمیں لڑنے والے طالبان کئی چھوٹے چھوٹے گروہوں میں تقسیم ہیں جن میں آسانی سے اپنے ایجنٹ داخل کیے جاسکتے ہیں اور ان گروہوں پر اثر انداز ہوا جاسکتا ہے۔ لہٰذا امریکہ ان گروہوں کو "معتدل" اور "سخت گیر" طالبان کے نام دیتا ہے۔

2۔      یقیناً امریکہ اس بات سے اچھی طرح باخبر ہے کہ مسلمان اس کی مستقل موجودگی کو شک و شبہ کی نگاہ سے دیکھتے ہیں۔ یہ شک و شبہ طالبان، علماء دیوبند، پشتونوں، عمومی طور پر مسلمانوں اور خصوصاً  افواج میں بھی پایا جاتا ہے۔ پہلے بھی یہ دیکھا گیا ہے کہ  امریکہ نے یہ محسوس کیا تھا کہ کیانی و زرداری حکومت اس کی دہشت گردی کے خلاف جنگ میں عوام کی حمائت حاصل کرنے میں ناکام رہی ہے۔یہ نظر آتا ہے کہ اس صورتحال نے امریکہ کو مجبور کیا کہ وہ  اس نواز شریف کو دوبارہ اقتدار میں لائے جسے اس نے اپنے ایجنٹ مشرف کے ذریعے تاریخ کے کوڑے دان میں پھینک دیا تھا کیونکہ امریکہ یہ سمجھتا ہے کہ نواز شریف دہشت گردی کے خلاف اس کی جنگ کی مزاحمت کرنے والےاسلامی  دائیں بازو کی جماعتوں اور قوم پرستوں کے سخت موقف میں نرمی لانے میں کامیاب ہو جائے گا۔نواز شریف اور اس کی جماعت مسلم لیگ (ن) کی معاشرے کے قدامت پسند طبقے میں جڑیں موجود ہیں۔ پاکستان کے لوگوں کو دھوکہ دینے کے لیے، امریکہ نے اپنے ایجنٹ نواز شریف کو اس بات کی اجازت دی کہ وہ "ڈرون حملوں کے خاتمے" اور "انخلاء کے لیے امن مذاکرات" کو اہم مسائل کے طور پر اجاگر کرے۔ امریکہ مخالف موقف اپنانے سے،امریکہ یہ امید رکھتا ہے کہ نواز شریف امریکہ سے اپنے اتحاد کو چھپا سکتا ہے اور امریکہ کے مفادات کو زیادہ مزاحمت کا سامنا کیے بغیر حاصل کرسکتا ہے بالکل ویسے ہی جیسا کہ ماضی میں مسلم دنیا میں دوسرے ایجنٹ بھی یہ کام اسی طرح کرچکے ہیں کہ انھوں نے خوب امریکہ مخالف نعرے بازی کی جبکہ ہر ممکن طریقے سے امریکی مفادات کی تکمیل کے لیے کام بھی کرتے رہے۔

3۔      یہ امریکی منصوبے کا حصہ ہے کہ اس کے ایجنٹ اس کے خلاف بیان بازی کریں تا کہ اس کی خواہشات کی تکمیل ہو سکے ،لہٰذا  امریکہ نے اپنے ایجنٹوں کو اس بات کی اجازت دی ہے کہ وہ اس بات کو عام کریں کہ امریکہ مذاکرات کا مخالف ہے۔ تو اس طرح ایسا نظر آئے گا کہ جیسے امریکہ مذاکرات کا مخالف ہے اور امریکی مخالفت میں مسلمان ان مذاکرات کی حمائت کرنا شروع کردیں گے ۔ یہ ایک "ڈبل گیم" ہے جس کے تحت مسلمان یہ سمجھتے ہوئے مذاکرات کو آگے بڑھائیں گے کہ ایسا کر کے وہ امریکی منصوبے کو ناکام کررہے ہیں کیونکہ بظاہر امریکہ تو ان مذاکرات کی مخالفت کررہاہے۔ اس کے علاوہ، حکومت نے یہ جھوٹ بھی پھیلایا ہے کہ مذاکرات امریکہ کے خلاف کامیابی کی نشانی ہےجبکہ امریکہ کو ان مذاکرات کی ضرورت ہے کیونکہ وہ ایک طویل اور مہنگی جنگ کے بعدجو کچھ ممکن ہے اپنے لیےحاصل کرنا چاہتا ہے۔ لہٰذا افغانستان اور پاکستان میں امریکی ایجنٹ اس امریکی "ڈبل گیم" کے تحت اپنا اپنا کردار ادا کررہے ہیں۔ اس کا عملی مظاہرہ اس وقت دیکھا گیا جب نواز شریف تازہ ترین ہدایت لے کر امریکہ سے واپس آیاتو امریکہ نے پاکستان میں طالبان رہنما حکیم اللہ محسود کو قتل کردیا۔ ایجنٹوں نے بہت شور مچایا کہ مذاکرات کا عمل خطرے سے  دوچار ہو گیا ہے۔ یکم نومبر 2013 کو انگریزی اخبار ڈان نے خبر شائع کی کہ "ڈرون حملوں کی مذمت کرتے ہوئے وزیر داخلہ چوہدری نثار نے کہا کہ ان کا نشانہ ملک میں امن کے قیام کی کوششوں کو سبوتاژکرنا ہے۔ کل(ہفتےکے دن) ایک وفد طالبان سے بات چیت کے لیے روانہ ہونے والا تھا۔ چوہدری نثار نے یہ بیان اس وقت دیا  جبکہ اس بات کی تصدیق نہیں ہوئی تھی کہ مارے جانے والا عسکریت پسند کمانڈر حکیم اللہ ہے"۔ پھر 2 نومبر 2013 کو ڈان اخبار نے یہ خبر شائع کی کہ "جمعہ کو ڈرون حملے میں مارے جانے والے پاکستانی طالبان سربراہ کی ہلاکت کو خطے کے امن پر امریکی حملہ قرار دیا گیا ہے۔ وزیر داخلہ چوہدری نثار نے ہفتے کو کہا کہ امریکہ کے ساتھ دوطرفہ تعلقات پر نظر ثانی کی جائے گی"۔ اور 2 نومبر 2013 کو ہی ڈان اخبار نے یہ خبر شائع بھی شائع کی کہ "وفاقی وزیر اطلاعات پرویز رشید نے اسلام آباد میں صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ حکومت محسود کی تحریک طالبان کے ساتھ مذاکرات کے منصوبے کوآگے لے جانا چاہتی ہے۔ پرویز رشید نے کہا کہ اس بار ہم یہ کہہ سکتے ہیں کہ ڈرون نے امن مذاکرات پر حملہ کیا ہے لیکن ہم امن مذاکرات کے عمل کو ختم نہیں ہونے دیں گے"۔ جہاں تک افغانستان میں امریکی ایجنٹوں کا تعلق ہے تو ایکپریس ٹربیون نے AFPکے حوالے سے 4نومبر 2013 کو یہ خبر شائع کی کہ "افغان صدر حامد کرزئی نے تحریک طالبان کے سربراہ  حکیم اللہ محسود کی غلط وقت پر امریکہ کے ہاتھوں قتل کیے جانے پر نکتہ چینی کی اور اس امید کا اظہار کیا کہ واقعہ علاقائی امن کی کوششوں کو ناکام کرنے کا باعث نہیں بنے گا۔ کرزئی نے افغانستان کے دورے پر آئے امریکی کانگریس کے وفد سے کہا کہ ڈرون حملہ صحیح وقت پر نہیں کیا گیا لیکن وہ امید رکھتے ہیں کہ اس کے نتیجے میں امن کے عمل کو نقصان نہیں پہنچے گا"۔

4۔      یہ اسی "ڈبل گیم" کا نتیجہ ہے کہ امریکی ایجنٹ ڈرون حملے کی مذمت کرنے کے باوجود طالبان کے ساتھ مذاکرات کے سلسلے کو جاری رکھنے پر بھی اصرار کررہے ہیں۔ 3نومبر2013کو ڈان اخبار نے یہ خبر شائع کی کہ "پاکستان کی وزارت خارجہ نے کہا ہے کہ جس ڈرون حملے میں محسود مارا گیا اور اس سے ایک روز قبل ہونے والے ڈرون حملے پر احتجاج کرنے کے لیے اس نے پاکستان میں امریکی سفیر رچرڈ اولسن کوطلب کیا۔ وزارت سے جاری ہونے والے بیان میں اس بات پر زور دیا گیا تھا کہ ڈرون حملے کے باوجود حکومت تحریک طالبان پاکستان کے ساتھ مذکرات کے عمل کو جاری رکھنے کا قطعی ارادہ رکھتی ہے"۔ اور 3نومبر2013 کو ڈان اخبار نے خبر شائع کی کہ "جمعیت علمائے اسلام کے مولانا فضل الرحمن نے ہفتے کو حکومت پاکستان پر زور دیا ہے کہ حالیہ امریکی ڈرون حملے میں طالبان رہنما حکیم اللہ محسود کے قتل کے باوجود  وہ طالبان کے ساتھ بات چیت کے اپنے فیصلے پر قائم رہے۔ مولانا نے کہا کہ حکیم اللہ کی موت نے ملک میں ایک جذباتی فضاء قائم کردی ہے۔ انھوں نے کہا کہ تحریک طالبان کے سربراہ کے قتل کے نتیجے میں مذاکرات کا عمل کچھ دنوں کے لیے تاخیر کا شکار ہوجائےگا لیکن امن اور مفاہمت کے دشمنوں کو اپنے مقاصد میں کامیاب ہونے کی اجازت نہ دی جائے"۔

5۔      امریکہ ایک طرف بظاہر یہ تاثر دے رہا ہے کہ وہ مذاکرات کا مخالف ہے جبکہ درحقیقت سرحد کے دونوں جانب "معتدل" طالبان کے ساتھ بات چیت اس کی اس وقت شدید ضرورت ہے تا کہ وہ خطے میں اپنے موجودگی کو جاری رکھ سکے اور یہ مفاد امریکہ اپنے بزدل فوجیوں اور دم توڑتی معیشت کے بل بوتے پر میدانِ جنگ میں حاصل نہیں کرسکتا۔ دوسری جانب امریکہ مسلمانوں کو اس بات پر قائل کرنے کی کوشش کررہا ہے کہ "سخت گیر" طالبان صرف امریکہ کے لیے ہی  نہیں  بلکہ مسلمانوں کے لیے بھی خطرہ ہیں۔ اس کوشش کا مقصد  مزاحمت کی ساکھ کو مسلمانوں کی نظر میں خراب کرنا اور مذاکرات کے لیے فضاء پیدا کرنا ہے اور یہ کہ امریکی قبضے کے خلاف مسلسل مزاحمت کی رائے عامہ کو تبدیل کیا جائے۔

اس مقصد کے حصول کے لیے امریکہ نے پاکستان میں قتل و غارت گری اور بم دھماکوں کی مہم چلائی جبکہ اس کے ایجنٹ ہر بم دھماکے اور قتل کے بعد یہ چلانا شروع کر دیتے ہیں کہ  "دیکھو، بہرحال اب یہ جنگ ہماری بھی ہے"۔ دنیا بھر میں اس قسم کی مجرمانہ اور تباہ کن مہم چلانے کے حوالے سے امریکی انٹیلی جنس اور نجی سکیورٹی ادارے خصوصی شہرت رکھتے ہیں۔یہ حملے False flag attacksکہلاتے ہیں جس میں خود ہی حملہ کیا جاتا ہے اور اس کا الزام اپنے مخالف پر ڈال دیا جاتا ہے تا کہ اپنی فوجوں کو اپنے مخالفین کے خلاف لڑنے پر آمادہ کیا جائے اور ان کی ساکھ کو نقصان پہنچایا جائے۔ ایسے حملے کروانا کوئی مشکل کام نہیں کیونکہ امریکی انٹیلی جنس اور نجی سکیورٹی ادارے  براہ راست یا  مزاحمتی گروہوں میں اپنے ایجنٹ داخل کرکےاور  پاکستانی ایجنسیوں میں موجود اپنے ایجنٹوں کے ذریعے ایسے حملے کرنے کے ماہر ہوتے ہیں۔ یہ دیکھا گیا ہے کہ ان حملوں میں ہمارے بازاروں، گھروں، افواج اور لوگوں کو تو نشانہ بنایا جاتا ہے لیکن اس بات کا خیال رکھا جاتا ہے کہ ملک میں موجود سی.آئی.اے اور ایف.بی.آئی کے دفاتر، امریکی فوجی اڈے، بلیک واٹر کی رہائش گاہیں اور امریکی قونصل خانے حملے اور تباہی سے محفوظ رہیں۔ لہٰذا اِن پُر تشدد  واقعات کو استعمال کرتے ہوئے امریکہ نے ایک نیا تصور پیش کیا ہے کہ افواج پاکستان کا قبائلی علاقوں میں رہنے کا مقصدپاکستان کو اندرونی خطرے سے محفوظ رکھنا ہے۔اس نئے تصور کواس حقیقت پر پردہ ڈالنے کے لیے  پیش کیا گیا ہے کہ قبائلی علاقوں میں فوجی آپریشنز ان پشتون مسلمانوں کے خلاف کیے جاتے ہیں جو  سرحد عبور کر کے افغانستان پر قابض امریکی افواج کے خلاف لڑتے ہیں۔ اور اس کے علاوہ ان حملوں کے ذریعے امریکہ نے اپنی جنگ کے لیے رائے عامہ ہموار کرنے کی کوشش کی ہے۔ یکم دسمبر 2009 کواوبامہ نے کہا کہ  "ماضی میں پاکستان میں ایسے لوگ رہے ہیں جو یہ کہتے تھے کہ انتہا پسندوں کے خلاف جدوجہد اُنکی جنگ نہیں …لیکن پچھلے چند سالوں میں جب کراچی سے اسلام آباد تک معصوم لوگ قتل ہوئے … تو یہ بات واضح ہوگئی کہ پاکستان کے لوگوں کو انتہاء پسندی سے سب سے زیادہ خطرہ لاحق ہے"۔ اور پھر ان بم دھماکوں اور قتل و غارت گری کی شروعات کے تین سال بعد 12 اکتوبر 2012ء کو امریکی دفتر خارجہ کی ترجمان ویکٹوریہ نولینڈ نے کہا کہ  "لہٰذا ظاہر ہے کہ پاکستان کےلوگ جتنا زیادہ ان کے خلاف ہونگے اتنا ہی اُن کی حکومت کو اِن کے خلاف کام کرنے میں مدد ملے گی۔ یہ شاید اس بھیانک المیے کا ایک مثبت پہلو ہے"۔

یہ خوفناک اور بہیمانہ تشدد جاری رہے گا تا کہ امریکی ایجنٹ افواج پاکستان کو قبائلی علاقوں میں رکھنے کا جواز پیش کرسکیں۔ یقیناً امریکہ یہ بات جانتا ہے کہ نہ صرف  پاکستان کے عوام امریکی جنگ، امریکہ کی موجودگی اور اس کے انخلاء کے منصوبے کو شک و شبہ کی نگاہ سے دیکھتے ہیں بلکہ پاکستان کے عوام کی اکثریت قبائلی علاقوں میں فوجی آپریشنز کی مخالف ہے۔ تو امریکہ اپنی یہ کوشش جاری رکھے گا کہ تحریک طالبان پاکستان کے خطرے کو بڑھا چڑھا کر پیش کرے تا کہ قبائلی علاقوں میں افواج پاکستان کی موجودگی کے لیے ایک جواز مہیا ہوسکے اورپاکستان کے عوام کو کسی حد تک مطمئن کیا جاسکے۔لہٰذا اس کے منصوبے کے ایک حصے کے تحت امریکہ افغانستان کےمسلمانوں سے جنگ کررہا ہے جبکہ اس کے ساتھ ہی انخلاء اور افغان آرمی کو معاملات سپرد کرنے کی بات بھی کررہا ہے۔ اور اس کے ساتھ ہی وہ اس بات کو یقینی بنا رہا ہے کہ پاکستان کی افواج،  پاکستان کے قبائلی علاقوں میں طالبان کے ساتھ جنگ میں مصروف رہیں۔ اس طرح امریکہ اس بات کی امید رکھتا ہے کہ وہ خطے میں اپنی موجودگی کو انخلاء کے پردے میں برقرار رکھ سکے گا۔

6۔      لہٰذا امریکہ ، پاکستان اور افغانستان دونوں ہی جگہ حقیقی امن کے قیام میں کوئی دلچسپی نہیں رکھتا۔ وہ یہ چاہتا ہے کہ خطے میں فوجی آپریشنز میں اس کی شمولیت کم سے کم ہو کیونکہ اس کی افواج کی ساکھ اور معیشت اگرچہ  مکمل طور پر تباہ نہیں ہوئی مگر انتہائی خستہ حال ضرور ہوچکی ہے۔لیکن وہ اپنے سٹریٹیجک مفادات کے حصول کے لیے خطے میں اپنی افواج کی ایک اچھی تعداد کو برقرار رکھنا چاہتا ہے کیونکہ اگر اس نے ایسا نہ کیا تو اب تک کی تمام تر کوششیں ضائع ہو جائیں گی۔ امریکہ کے لیے آگے بڑھنے کا راستہ یہ ہے کہ وہ اپنے اہداف کے حصول  اور اپنی موجودگی کو برقرارکے لیےایک معاہدہ چاہتا ہے۔ اس کے علاوہ 2014 کے بعد بھی اپنی افواج کی موجودگی کے جواز کے لیے وہ طالبان کے خطرے کو پیش کرتا رہے گا۔ درحقیقت امریکہ اور افغانستان کے درمیان ہونے والے سٹریٹیجک معاہدے کے تحت 2014 کے بعد بھی امریکی افواج کو افغانستان میں رہنے کی اجازت دینے کی  ایک اہم وجہ یہ بھی ہے کہ امریکہ آزادانہ دہشت گردی خلاف فوجی آپریشنزکرسکے۔ اس کے ساتھ ساتھ امریکی صدر باراک اوبامہ جہاں انخلاء کی بات کرتا ہے وہی انتہاپسندوں کے خطرے کی بھی بات کرتا ہے۔ 23 مارچ 2013 کو اوبامہ نے کہا "افغانستان میں ہم سکیورٹی کی ذمہ داری افغانیوں کے حوالے کردیں گے۔ ہماری افواج گھر واپس آجائیں گی۔ ہمارے جنگی مشن ختم ہوجائیں گے۔ اور ہم افغان حکومت کے ساتھ مل کر ان کی سکیورٹی فورسز کی تربیت کریں گے اور اس دہشت گردی کے خلاف ایک فورس قائم کریں گے جو اس بات کو یقینی بنائے گی کہ القائدہ کبھی بھی امریکہ اور اس کے اتحادیوں کے خلاف حملوں کے لیے محفوظ پناہ گاہیں حاصل نہ کرسکے۔ افغانستان سے باہر دہشت گردی کے خلاف ہم عالمی جنگ نہیں کریں گے بلکہ ہماری کوششیں اس بات پر مرکوز ہوں گی کہ ہم امریکہ کے خلاف کام کرنے والے مخصوص انتہاپسند گرہوں کے خلاف ٹارگٹ آپریشن کریں۔ کئی معاملات میں اس مقصد کو حاصل کرنے کے لیے دوسرے ممالک کے ساتھ مل کر کام کیا جائے گا"۔ دہشت گردی کے خطرے کو پیش کرکے امریکہ نے اپنی موجودگی کا مستقل جواز فراہم کردیا ہے جبکہ وہ خود اس خطے کا سب سے بڑا دہشت گرد ہے۔

7۔      خلاصہ:امریکہ طالبان کے ساتھ ایک امن معاہدہ کرنا چاہتا ہے تا کہ وہ اپنی موجودگی کو برقرار رکھ سکے۔ وہ یہ بات جانتا ہے کہ ایسے کسی معاہدے کے بعد ہی وہ  ملک میں دہشت گردی کے خلاف آپریشنزاور افغان آرمی کی تربیت کی آڑ میں افغانستان میں اپنی موجودگی کو برقرار رکھ سکتا ہے۔ جہاں تک پاکستان کا تعلق ہے تو امریکہ یہ جانتا ہے کہ افغانستان میں کوئی امن معاہدہ اس وقت تک نہیں ہوسکتا جب تک افغانستان کے سرحدی اور پاکستان کے قبائلی علاقوں میں  سے پشتون علاقے کو اس پر راضی نہ کرلے۔ باخبر مسلمانوں کی ذمہ داری ہے کہ وہ مسلم علاقوں میں امریکی موجودگی کے خطرات کو سمجھیں،  چاہے یہ موجودگی سفارتی شکل میں ہو یا فوجوں کی موجودگی کی شکل میں یا امریکی نجی سکیورٹی اداروں اور امریکی انٹیلی جنس کی موجودگی کی شکل میں  ہو۔ یہی وہ امریکی موجودگی ہے جو بم دھماکوں کو یقینی بناتی ہے۔ یہی وہ موجودگی ہے جو بات چیت کو آگے بڑھاتی ہے اور اس کے رخ کا تعین کرتی ہے۔ یہی وہ موجودگی ہے جس نے مسلمانوں کے لیے ہر قسم کی مصیبت پیدا کی ہوئی ہے۔ اسلام اس بات کا تقاضا کرتا ہے کہ اس موجودگی کا خاتمہ کیا جائے۔ یہ مقصد نہ تو کوئی گروہ حاصل کرسکتا ہے اور نہ ہی بات چیت کے ذریعے امریکی موجودگی کو ختم کیا جاسکتا ہے۔ صرف اور صرف  ریاست اپنی افواج کو متحرک کر کے ہی امریکی موجودگی کا خاتمہ کرسکتی ہے۔

اس کے علاوہ ہمیں یہ بھی جان لینا چاہیے کہ امریکہ اپنے قیام سے لے کر آج تک کبھی بھی کسی بین لاقوامی معاملے کو حل نہیں کرسکا۔ اور  اس کی معیشت میں شدید کمزوری اوراس کی بزدل افواج نے اب تو اس کی یہ صلاحیت مزید کم کردی ہے۔ غدار مسلم حکمران اب بھی اس کے خوف اور دبدبے کی وجہ سے ایسے ہی اطاعت کررہے ہیں جیسا کہ حضرت سلیمان علیہ السلام کے انتقال کے بعد بھی جن یہ سمجھتے ہوئے ان کی اطاعت کرتے رہے جیسے کہ وہ اب بھی زندہ ہوں۔ اور اِنہی غداروں کی  وجہ سے ہمارے علاقوں میں امریکی اثرو نفوذ اب تک باقی ہے۔

سرمایہ دارانہ نظام کی کرپشن اور اس کے غلط ہونے کی وجہ سے امریکہ کی ناکامی یقینی ہے ۔ یہ وہ نظام ہے جس کا امریکہ عَلم بردار ہے اور اسے پوری دنیا میں نافذ کرنے کی کوشش کرتا ہے۔ اس کے علاوہ امریکہ کی ناکامی اس کے پالیسی سازوں کی نااہلی کی وجہ سے بھی یقینی ہے۔ لیکن صحیح اور حقیقی رہنما جو اس دنیا کے معاملات کو انصاف  اور حق کی بنا پر چلائیں گے جیسا کہ خلفائے راشدین تھے ،تو ایسا صرف جلد ہی قائم ہونے والی خلافت کے قیام کے ذریعے ممکن ہوگا اور حزب التحریر کے شباب وہ رہنما ہوں گے۔ یہی شباب وہ ہوں گے جو امریکہ اور مغرب کو سیکھائیں گے کہ کس طرح دنیا کے معاملات کو خلافت کے زیر سایہ چلایا جاتا ہے۔ اور وہ اس خود ساختہ بین الاقوامی براداری کو اپنے اشاروں پر نچائیں گے اور وہ دن جلد ہی آنے والا ہے۔

وَقَدْ مَكَرُوْا مَكْرَهُمْ وَعِنْدَ اللهِ مَكْرُهُمْ ۭ وَاِنْ كَانَ مَكْرُهُمْ لِتَزُوْلَ مِنْهُ الْجِبَالُ

"یہ اپنی اپنی چالیں چل رہے ہیں اور اللہ کو ان کی تمام چالوں کا علم ہے  اور ان کی چالیں ایسی تھیں کہ ان سے پہاڑ اپنی جگہ سے ٹل جائیں " (ابراھیم:46)

میڈیا آفس حزب التحریر  ولایہ پاکستان

10 محرم 1435، 13 نومبر 2013


Today 322 visitors (1842 hits) Alhamdulillah
=> Do you also want a homepage for free? Then click here! <=