Media Office Hizb ut-Tahrir Pakistan

PR 25 12 2014

 

Thursday, 3rd Rabi ul Awwal 1436 AH                         25/12/2014 CE                                    No: PR14080

Press Release

Raheel-Nawaz regime’s address to the people

Establishment of Military courts is for Prolonging America Raj in the Region

In between Wednesday and Thursday night Prime Minister Nawaz Sharif addressed the people of Pakistan. He presented proposals prepared with the consultation of all parliamentary political parties and asserted that these proposals will end terrorism in the country. The most important of these proposals was the establishment of special courts headed by military officers. In reality these special courts will be military courts but Raheel-Nawaz regime tried to cover their hypocrisy by naming them “special courts”.

Establishing military courts using the pretext of the Peshawar attack is not for the purpose of ending terrorism. Rather, it is to punish those people who are waging Jihad against US occupying forces in Afghanistan and to frighten the Ummah and the sincere officers in the armed forces who want to bring Pakistan out of this American war and implement Islam through the establishment of Khilafah. US pressure on Pakistan to initiate operations in North Waziristan, especially against the Haqqani network and Hafiz Gul Bahadur…the linking of an annual one billion dollar “aid” conditional on the US Secretary of State assuring Congress that Pakistan is successfully conducting the North Waziristan operation…and the acknowledgment by the US that because of operation in North Waziristan the Haqqani Network in disarray…these are all proof that the military operations being carried out are not to end the law and order situation but rather to target sincere Mujahideen under the pretext of fighting terrorism.

Arguing that the normal judicial system has not being able to work under war situations as the reason for the establishment of military courts is ridiculous. This is so because this judicial system, left by British Raj, is not providing justice in normal circumstances, let alone in war time. So if this is the reason then should military courts be extended in peace time as well? Moreover, RasulAllah (saw) ruled for ten years, most of the time in a war scenario, and at the same time faced the treacheries of hypocrites and Jews but never were the rights of an ordinary citizen suspended, nor did the Islamic state turn into a police state. Rather, in those difficult times people were encouraged to account their rulers.

For the last ten years military operations have been undertaken in every corner of the country and the rulers have claimed that they have killed thousands of terrorists and broken their back. But despite their grand claims we see attacks on military and civilian places and the killing of innocent people. The reason for this unabated violence is the US presence in Pakistan and Afghanistan. The US wants that Pakistan continuously burn in the Fire of Fitna so that the traitors in the political and military leadership use this situation to kill those people in tribal area and in Pakistan who are waging Jihad against America.

Traitors in the political and military leadership do not want to bring Pakistan out of this US war. They are now using the pretext of fighting this so-called war against terrorism to kill the basic concept of Jihad, seize the basic rights of the people and contravene basic laws of justice. Whenever American Raymond Davis or Joel Cocks, the masterminds behind destabilizing efforts in Pakistan were caught red handed, some among the traitor in the political and military leadership came to their rescue and arranged their safe exit from the country. Ending these bloody events in Pakistan is not possible unless America is kicked out of this region as she is the source of destabilization. Therefore, the end of American presence is a must, and this is only possible through the establishment of Khilafah.

Shahzad Shaikh

Deputy to the Spokesman of Hizb ut-Tahrir in the Wilayah of Pakistan


 

جمعرات، 03 ربیع الاول، 1436ھ                               25/12/2014                              نمبرPR14080:

پریس ریلیز

راحیل-نواز حکومت کا قوم سے خطاب

فوجی عدالتوں کا قیام خطے میں امریکی راج کو دوام دینے کے لئے ہے

       بدھ اور جمعرات کے درمیانی شب وزیر اعظم نواز شریف نے قوم سے خطاب میں  پارلیمنٹ میں موجود سیاسی  جماعتوں کی حمائت سے تیار ہونے والے ان تجاویز کو پیش کیا جس کے ذریعے ملک سے دہشت گردی کے خاتمے کو ممکن بنائے جانے کا دعویٰ کیا جارہا ہے۔ ان تجاویز میں سب سے اہم خصوصی عدالتوں کا قیام ہے جس کے جج فوجی افسران ہوں گے۔ دراصل یہ خصوصی عدالتیں فوجی عدالتیں ہی ہونگیں لیکن راحیل-نواز حکومت نے اپنی منافقت پر پردہ ڈالنے کے لئے انہیں خصوصی عدالتوں کا نام دیا ہے۔

       سانحہ پشاور کی آڑ لے کر  فوجی عدالتوں کے قیام کا مقصد ملک سے بدامنی کا خاتمہ نہیں ہے بلکہ ان لوگوں کو سزائیں دینا ہے جو افغانستان میں امریکہ کے خلاف جہاد کررہے ہیں اور عام عوام اور افواج میں موجود مخلص افسران کو خوفزدہ کرنا ہے جو اس ملک کو امریکی جنگ سے نکالنا اور خلافت کے قیام کی صورت میں اسلام کا نفاذ چاہتے ہیں۔ شمالی وزیرستان میں فوجی آپریشن سے متعلق  امریکہ نے جتنا دباؤ ڈالا، خاص کر حقانی اور گل بہادر کے خلاف کاروائی کا مطالبہ کرنا ، سالانہ ایک ارب ڈالر کی امداد اس بات سے مشروط کرنا کہ امریکی سیکریٹری خارجہ کانگریس کو ہر سال اس بات کی یقین دہانی کروائے گا کہ پاکستان شمالی وزیرستان میں کامیابی سے فوجی آپریشن کررہا ہے اور امریکہ کا یہ اقرار کر نا کہ شمالی وزیرستان میں فوجی آپریشن کے نتیجے میں حقانی نیٹ ورک کمزور ہوا ہے ، یہ تمام باتیں اس بات کا ثبوت ہیں کہ ملک میں فوجی آپریشن بدامنی کے خاتمے کے لئے نہیں بلکہ اس کی آڑ لے کر مخلص جہادیوں کو نشانہ بنانے کے لئے ہورہے ہیں۔ 

       فوجی عدالتوں کے قیام کے جواز میں یہ کہنا کہ حالت جنگ میں عام عدالتیں کام کرنے سے قاصر ہیں تو حقیقت  تو یہ ہے کہ برطانوی راج کا چھوڑا ہوا عدالتی نظام عام حالات میں بھی انصاف فراہم کرنے سے یکسر عاری ہے تو کیا عام حالات میں بھی فوجی عدالتیں لگا دی جانی چاہیے۔ اس کے علاوہ رسول اللہ دس سال تک حکمران اور مسلسل حالت جنگ میں رہے اور اس کے ساتھ ساتھ  منافقین اور یہود کی سازشوں کا بھی سامنا کرتے رہے لیکن کبھی بھی شہری حقوق غضب نہیں کئے گئے، نہ ہی  اسلامی ریاست  پولیس سٹیٹ میں تبدیل  ہوئی ، بلکہ ان تمام حالات میں بھی ریاست کے شہریوں کو حکمرانوں کا احتساب کرنے کی ترغیب دی جاتی تھی۔

       دس سال سے قبائلی علاقوں  اور ملک کے کونے کونے میں فوجی آپریشن جاری ہیں جس میں حکومت کے دعووں کے مطابق ہزاروں دہشت گردوں کا صفایا اور سیکڑوں بار ان کی کمر توڑی جاچکی ہے لیکن اگر اس کے باوجود ملک میں فوجی و شہری تنصیبات پر حملے اور قتل وغارت گری ختم ہونے کا نام ہی نہیں لے رہی تو اس کی بنیادی وجہ افغانستان اور پاکستان میں امریکہ کی موجودگی ہے جو خصوصاًپاکستان میں فتنے کے آگ کو جلائے رکھنا چاہتا ہے تا کہ  اس فتنے کو بنیاد بنا کر سیاسی و فوجی قیادت میں موجود غدار قبائل اور پاکستان کے عوام میں موجود ان مخلص لوگوں کو نشانہ بنا ئیں  جو امریکہ کے خلاف جہاد کررہے ہیں۔

       سیاسی و فوجی قیادت  میں موجود غدارپاکستان کو اس امریکی جنگ سے نکالنا ہی نہیں چاہتے بلکہ اب دہشت گردی کے خاتمے کے نام پر جہاد کے تصور کے خاتمے،لوگوں کے بنیادی حقوق کو غضب اور انصاف کے بنیادی  اصولوں کا  جنازہ نکال رہےہیں۔ جب کبھی بدامنی  کے امریکی ماسٹر مائنڈز ریمنڈ ڈیوس اور جوئل کاکس گرفتار ہوئے تو سیاسی و فوجی قیادت میں موجود غداروں  نے نہ صرف انہیں رہا کروادیا بلکہ حفاظت کے ساتھ ملک سے باہر بھی بھجوا دیا۔ پاکستان سے بدامنی  کا خاتمہ اس خطے سے امریکہ کو نکالے بغیر ممکن ہی نہیں ہے  کیونکہ  اصل میں وہی  اس کا ماخذ ہے۔  لہٰذا ملک سے بدامنی کے خاتمے کے لئے خطے سے امریکی وجود کا خاتمہ ضروری ہے جو صرف خلافت کے قیام کے ذریعے ہی ممکن ہے۔

شہزاد شیخ

ولایہ پاکستان میں حزب التحریر کے ڈپٹی ترجمان


Today 88 visitors (477 hits) Alhamdulillah
=> Do you also want a homepage for free? Then click here! <=