Media Office Hizb ut-Tahrir Pakistan

PR 16 07 2014

Wednesday, 18th, Ramadhan 1435 AH                           16/07/2014 CE                           No: PR14050

Press Release

Massacre of Muslims in Palestine

Nawaz Sharif, It Is Not the Time to Merely Express Sorrow, Rather Armed Forces Must Mobilize!

Late night, Tuesday 15 July, Nawaz Sharif condemned the Jewish State's atrocities against Muslims in Gaza as genocide and asked the world to stop the Jewish State's brutal aggression. Hizb ut-Tahrir says to Nawaz Sharif that before asking the world to move, he must first answer as to what he has done to liberate Palestine, as a Muslim ruler who commands the world’s seventh largest armed forces, equipped with nuclear weapons and ballistic missiles! Has he not read the command of Allah:

وَإِنِ اسْتَنْصَرُوكُمْ فِي الدِّينِ فَعَلَيْكُمُ النَّصْرُ

If they seek your help in religion, it is your duty to help them

(Surah Al-Anfal 8:72)?

So why has the Raheel-Nawaz regime not extended any military force to help the Muslims of Palestine and liberate them from the Jewish State's aggression and occupation?

How can Nawaz Sharif, on the one hand, complain that the silence and ineffectiveness of Muslim Ummah has made Palestinians more vulnerable and made Jews more aggressive, whilst on the other hand, as the ruler of the most powerful Muslim state, refuses to order the armed forces to mobilize? Indeed, Muslims are not silent, rather their rulers are dead corpses who neither listen nor move. The Muslims of Palestine continuously call the rulers of Muslims for help and Muslims all over the world are demanding that these rulers send the Muslim armed forces to liberate them. So, O Raheel-Nawaz regime, the Muslim Ummah is not silent, rather it is you, along with all other Muslim rulers, whose hearts have turned to stone, such that the cries and screams of your fellow Muslims, sisters, mothers and children, have no real effect!

O criminal regime! You can not fool this Ummah by claiming that you have fulfilled your responsibility, through asking the world to stop the Jewish State's aggression. Muslims all over the world know that the current rulers send troops under UN flag to any corner of the world upon Washington's command, but when they are asked to liberate Muslims from the oppression of the Kuffar, they cling to the earth, paralyzed. Allah (swt) said:

يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا مَا لَكُمْ إِذَا قِيلَ لَكُمُ انْفِرُوا فِي سَبِيلِ اللَّهِ اثَّاقَلْتُمْ إِلَى الْأَرْضِ

O you who believe! What is the matter with you, that when you are asked to march forth in the Cause of Allah (i.e. Jihad) you cling heavily to the earth?

(Surah Al-Taubah 9:38).

O Raheel-Nawaz regime! Your statement can no longer deceive the Ummah, as she now knows that whether rulers are democrats or dictators, their Qibla is Washington and not the Kaabah, and theirs heart resonate with the Kuffar not with this Ummah. This is why the desire for establishing the Khilafah amongst the Muslims all over the world, including Pakistan, is increasing because Khilafah is the state which protects Muslims from their enemies and through which Muslims fight against their enemies. Messenger of Allah (saw) said:

انَّمَا الْإِمَامُ جُنَّةٌ، يُقَاتَلُ مِنْ وَرَائِهِ، وَيُتَّقَى بِهِ

indeed the Imam (Khalifah) is a shield,  behind whom one fights and by whom one is protected.”

Shahzad Shaikh

Deputy to the Spokesman of Hizb ut-Tahrir in the Wilayah of Pakistan

بدھ، 18 رمضان، 1435ھ                               16/07/2014                              نمبرPR14050:

فلسطین کے مسلمانوں کا قتل عام

نواز شریف یہ وقت افسوس کے اظہار کا نہیں بلکہ افواج کولازمی حرکت میں لانے کا ہے

          منگلاور بدھ کی درمیانی شب ، 16 جولائی کو رات گئے نواز شریف کی جانب سے ایک بیان جاری کیا گیا جس میں غزہ، فلسطین کے مسلمانوں کے خلاف یہود کے ظلم و ستم کو قتل عام سے تشبیہ دی اور دنیا سے مطالبہ کیا کہ وہ یہود کی ننگی جارحیت کو روکیں ۔ حزب التحریر نواز شریف سے سوال کرتی ہے کہ دنیا سے سوال کرنے سے پہلے وہ یہ بتائے کہ ایٹمی اسلحے اور مزائلوں سے مسلح دنیا کی ساتویں بڑی فوج کے کمانڈر ان چیف  اور ایک مسلم حکمران ہونے کے ناطے تم نے یہود کی اس جارحیت اور فلسطینی مسلمانوں کے قتل عام کو روکنے کے لئے کیا عملی قدم اٹھایا؟ کیا تم نے اللہ سبحانہ و تعالٰی کا یہ فرمان نہیں پڑھا کہ، وَإِنِ اسْتَنْصَرُوكُمْ فِي الدِّينِ فَعَلَيْكُمُ النَّصْرُ "اگر دین کی وجہ سےتم سے کوئی  مدد مانگیں تو تم پر ان کی مدد واجب  ہے "(الانفال : 72)۔ تو راحیل-نواز حکومت تم نے اب تک افواج کو فلسطین کے مسلمانوں کو یہود کے ظلم اور قبضے سے آزادی دلانے کے لئے حرکت میں آنے کا حکم کیوں نہیں دیا ؟

          نواز شریف تم کس منہ سے یہ کہہ سکتے ہو کہ مسلم امہ کی خاموشی اور غیر افادیت نے فلسطینی مسلمانوں کو غیر محفوظ اور یہود کو جارح بنا دیا ہے جبکہ تم اس مسلم امہ کے سب سے طاقتور ملک کے حکمران ہونے کے باوجود اپنی افواج کو حرکت میں نہیں لاتے؟ مسلم امہ خاموش نہیں ہے بلکہ اس کے حکمران مردہ لاشیں ہیں جو نہ سن سکتے ہیں اور نہ حرکت کرسکتے ہیں۔ فلسطین کے مسلمان امت مسلمہ کے حکمرانوں کو مدد کے لئے مسلسل پکار رہے ہیں اور پوری دنیا کے مسلمان اپنے حکمرانوں سے فلسطین کے مظلوم بھائیوں کو یہود کے ظلم اور قبضے سے نجات دلانے کے لئے افواج کو حرکت میں لانے کا مطالبہ کررہے ہیں ۔ تو اے راحیل-نواز حکومت ! مسلم امہ خاموش نہیں ہے بلکہ تم سمیت تمام مسلم حکمرانوں کے دل پتھر کے ہوچکے ہیں کہ جن کے دلوں پر اپنی مسلمان بہنوں، ماؤں اور بچوں کی چیخ و پکار کوئی اثر نہیں ڈالتی۔

          اے مجرم حکومت! دنیا سے یہود کے ظلم و ستم کو روکنے کا مطالبہ کر کے تم امت کو بے وقوف نہیں بنا سکتے کہ تم نے اپنی ذمہ داری ادا کردی۔ پوری دنیا کے مسلمان یہ جان گئے ہیں کہ ان کے حکمران امریکہ کے حکم پر تو دنیا کی کسی بھی کونے میں اپنی افواج کو اقوام متحدہ کا جھنڈا تھما کر قربان کرنے کے لئے فوراً بھیج دیتے ہیں لیکن جب ان سے مسلمانوں کو کفار کے ظلم و ستم سے نجات دلانے کے لئے کہا جاتا ہے تو ان پر سکتہ طاری ہوجاتا ہے اور زمین سے چمٹ جاتے ہیں۔ يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا مَا لَكُمْ إِذَا قِيلَ لَكُمُ انْفِرُوا فِي سَبِيلِ اللَّهِ اثَّاقَلْتُمْ إِلَى الْأَرْضِ "اے لوگو جو ایمان لائے ہو! تمہیں کیا ہوگیا ہے کہ جب تم سے کہا گیا کہ اللہ کے راستے میں ( جہاد کے لئے ) کوچ کرو تو تم بوجھل ہوکر زمین سے لگ گئے ؟ (التوبہ : 38)۔

راحیل-نواز حکومت ! تمھارا یہ بیان امت کو اب دھوکہ نہیں دے سکتا کیونکہ امت اب یہ جان چکی ہے کہ جمہوری حکمران ہو یا آمر ، ان کا قبلہ کعبہ نہیں واشنگٹن ہے  اوران کے دل اپنی امت کے ساتھ نہیں بلکہ  کفار کے ساتھ دھڑکتے ہیں۔ اسی لیے پاکستان سمیت پوری دنیا کے مسلمانوں میں  خلافت کے قیام کی چاہت بڑھتی جارہی ہے کیونکہ خلافت ہی وہ ریاست ہے جو مسلمانوں کو ان کے دشمنوں سے تحفظ فراہم کرتی ہے اور جس کے ذریعے امت اپنے دشمنوں سے لڑتی ہے۔ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا ،اِ نَّمَا الْإِمَامُ جُنَّةٌ، يُقَاتَلُ مِنْ وَرَائِهِ، وَيُتَّقَى بِهِ "بے شک امام ڈھال ہے ،جس کے پیچھے رہ کر لڑا جاتا ہے اور اسی کے ذریعے تحفظ حاصل کیا جاتا ہے "۔

شہزاد شیخ

ولایہ پاکستان میں حزب التحریر کے ڈپٹی ترجمان


Today 1855 visitors (6453 hits) Alhamdulillah
=> Do you also want a homepage for free? Then click here! <=