Media Office Hizb ut-Tahrir Pakistan

PR 01 01 2014

 

Wednesday, 29 Safar 1435 AH                          01/01/2014 CE                           No: PR 14001

Press Release

End American Raj, Establish the Khilafah

Raheel-Nawaz Regime Strives to Secure Permanent US Presence

Hizb ut-Tahrir condemns the Raheel-Nawaz regimes' preparing the justification for a continued US presence in the region, after a limited US withdrawal. In an interview published on 1 January 2014, the regime's new ambassador as the United States, Jalil Abbas Jilani, warned that, “Even the talk of US pullout has started having its impact. Pakistan has started to receive more Afghan refugees than before ... In case the bulk of the troops withdraw, the major responsibility would lie on our shoulders.”

This statement is a lie, as it asserts that the region would be in a worse situation after a partial American withdrawal. In fact over a decade of ever expanding presence has proven that both Pakistan and Afghanistan are in dire need of a complete end to the American presence in the region, including its embassies, consulates, diplomatic staff, intelligence and private military. It is this US presence which allows the continued presence of the Raymond Davis network within Pakistan, which is responsible for the campaign of bombings and assassinations within our borders, used as a justification to ensnare our armed forces in the tribal regions. It is this US presence that has secured an Indian presence within Afghanistan that it is using to destablize Pakistan through Baluchistan and the tribal areas. And it is this US presence which has brought devastation and misery to the Muslims of Afghanistan.

Moreover, the timing of this statement indicates that nothing has changed since the time of Musharraf-Aziz or Kayani-Zardari. This statement comes after America declared that it is not leaving completely. On 3 December 2013, Assistant Secretary of State for South and Central Asia, Nisha Desai Biswal declared, “Our engagement with the Pak-Afghan region is an enduring one. We are not going away. We are not going anywhere.” And it comes after America seeking to secure a permanent presence. On 7 December US Defence Secretary Chuck Hagel said he had received assurances during a visit to Kabul that a deal allowing US troops to stay in Afghanistan after 2014 would be signed “in a timely manner”. Thus, the Raheel-Nawaz regime is walking along the same path of treachery, as the Kayani-Zardari regime before it and the Musharraf-Aziz regime before that.

The urgent need of the time is the re-establishment of the Khilafah which will immediately act against the enemy infrastructure within our region by all the means available to it. It is only under the Khilafah that we will have a regime that submits to the commands of Allah SWT, rather than submit and capitulate to our destructive enemies. Allah SWT said,

يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آَمَنُوا لاَ تَتَّخِذُوا عَدُوِّي وَعَدُوَّكُمْ أَوْلِيَاءَ تُلْقُونَ إِلَيْهِمْ بِالْمَوَدَّةِ وَقَدْ كَفَرُوا بِمَا جَاءَكُمْ مِنَ الْحَقِّ

"O you who believe! do not take My enemy and your enemy as allies, meeting them with softness. Indeed, they disbelieve in that which has come to you of truth.”

(Al-Mumtahina:1)

Media Office of Hizb ut-Tahrir in Wilayah Pakistan

جمعہ، 29 صفر، 1435ھ                                   01/01/2014                              نمبرPR14001:

پریس ریلیز

امریکی راج  خاتم کرو، خلافت قائم کرو

راحیل-نواز حکومت امریکی موجودگی کو دوام بخشنے کی بھر پور کوشش کررہی ہے

حزب التحریر افغانستان سے محدود انخلاء کے امریکی منصوبے کے اعلان کے بعد راحیل-نواز حکومت کی جانب سے  خطے میں امریکی موجودگی کو دوام بخشنے کی کوششوں کی پرزور مذمت کرتی ہے۔ یکم جنوری 2014 کو امریکہ میں پاکستان کے نئے سفیر ، جلیل عباس جیلانی نے ایک انٹرویو میں خبردار کیا کہ "  امریکی انخلاء کی محض بات چیت ہونے کی وجہ سے اس کے اثرات ظاہر ہونا شروع ہوگئے ہیں۔ پہلے سے زیادہ افغان مہاجرین  پاکستان پہنچنا شروع ہوگئے ہیں۔۔۔اگر افواج کی بڑی تعداد واپس چلی جاتی ہیں تو زیادہ ذمہ داری ہمارے کاندھوں پر آجائے گی"۔

یہ  بیان ایک جھوٹ ہے کیونکہ اس سے یہ تاثر دینے کی کوشش کی گئی ہے کہ جیسے محدود انخلاء کے نتیجے میں خطے کی صورتحال مزید خراب ہوجائے گی جبکہ حقیقت یہ ہے کہ ایک دہائی سے مسلسل وسیع ہوتی امریکی موجودگی نے یہ ثابت کیا ہے کہ پاکستان اور افغانستان دونوں کو اس بات کی شدید ضرورت ہے کہ خطے سے امریکہ کی موجودگی مکمل طور پر ختم ہوجائے جس میں سفارت خانوں، قونصل خانوں ، سفارتی عملے، انٹیلی جنس اور نجی امریکی افواج کا خاتمہ بھی شامل ہے۔ یہ امریکی موجودگی ہی ہے جس کے نتیجے میں پاکستان میں ریمنڈ ڈیوس نیٹ ورک اب تک موجود ہے جو ہمارے ملک میں بم دھماکوں اور قتل و غارت گری کے واقعات کا اصل ذمہ دار ہے اور پھر اس صورتحال کو بہانا بنا کر ہماری افواج کو قبائلی علاقوں میں بھیجا جاتا ہے۔ یہ امریکی موجودگی ہی ہے جس نے افغانستان میں بھارت کی موجودگی کو یقینی بنایا ہے اور پھر بھارت اس سے فائدہ اٹھا کر قبائلی علاقوں اور بلوچستان میں کاروائیاں کر کے پاکستان کو غیر مستحکم کرتا ہے۔ اور یہ امریکی موجودگی ہی ہے جس نے تباہی و بربادی کے سلسلے کو افغانستان کے مسلمانوں پر مسلط کردیا ہے۔

اس کے علاوہ اس وقت یہ بیان دینااس بات کی نشان دہی کرتا ہے کہ مشرف و عزیز یا کیانی و زرداری کے دور سے جاری پالیسیوں میں کوئی تبدیلی نہیں آئی ہے۔ یہ بیان اس وقت آیا ہے جب امریکہ نے یہ اعلان کردیا ہے کہ وہ مکمل طور پر نہیں جارہا۔ 3 دسمبر 2013 کو نائب سیکریٹری خارجہ برائے جنوبی و وسطی ایشیا، نیشا ڈیسائی بسوال نے اعلان کیا کہ " پاک افغان خطے میں ہمارے موجودگی ہمیشہ کے لیے ہے۔ ہم نہیں جارہے۔ ہم کہیں بھی نہیں جارہے"۔ اور یہ بیان  اس وقت آیا ہے  جب امریکہ خطے میں اپنی مستقل موجودگی کو برقرار رکھنے کی کوششوں میں مصروف ہے۔ 7 دسمبر 2013 کو امریکہ سیکریٹری دفاع چک ہیگل نے کہا کہ " کابل کے دورے کے دوران اسے اس بات کی یقین دہانی کرائی گئی ہے کہ 2014 کے بعد افغانستان میں امریکی افواج کو برقرار رکھنے کے درکار معاہدہ کو مناسب وقت پر مکمل کرلیا جائے گا"۔ لہٰذا راحیل-نواز حکومت غداری کے اسی راستے پر چل رہی ہے جس پر اس سے پہلے کیانی زرداری حکومت اور اس سے بھی پہلے مشرف  و عزیز حکومت چل رہی تھی۔

وقت کی اہم ترین ضرورت یہ ہے کہ خلافت کا قیام عمل میں لایا جائے جو خطے میں موجود دشمن کی تنصیبات اور ڈھانچے کےخاتمے کے لیے تمام دستیاب  وسائل کو  فوری حرکت میں لائے گی۔ ایسی حکومت صرف خلافت میں ہی ممکن ہے جو دشمن کے احکامات کو تسلیم کرنے کے بجائے صرف اور صرف اللہ سبحانہ و تعالٰی کے احکامات کے آگے جھکے گی۔ اللہ سبحانہ و تعالٰی فرماتے ہیں:

يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آَمَنُوا لاَ تَتَّخِذُوا عَدُوِّي وَعَدُوَّكُمْ أَوْلِيَاءَ تُلْقُونَ إِلَيْهِمْ بِالْمَوَدَّةِ وَقَدْ كَفَرُوا بِمَا جَاءَكُمْ مِنَ الْحَقِّ

"اے وہ لوگو جو ایمان لائے ہو! میرے اور (خود )اپنے دشمنوں کو اپنا دوست نہ بناؤ، تم تو دوستی سے ان کی طرف پیغام بھیجتے ہو اور وہ اس حق کے ساتھ جو تمھارے پاس آچکا ہے کفر کرتے ہیں"(الممتحنہ :1)۔

ولایہ پاکستان میں حزب التحریر کا  میڈیا آفس


Today 1575 visitors (5328 hits) Alhamdulillah
=> Do you also want a homepage for free? Then click here! <=