Media Office Hizb ut-Tahrir Pakistan

PR 12 09 2014



Friday
, 17th Dhul-Qadah 1435 AH                                  12/09/2014 CE                           No: PR14058

Press Release

Devastating Floods in Pakistan

Democratic Rulers and Politicians Neglect to Safeguard Pakistan from Floods

Democratic rulers failed to take measures in order to safeguard Pakistan and its people from devastating floods. The rulers are putting the blame for their utter failure on the Metrological Department, saying that they did not predict the calamity. Hizb ut-Tahrir asks these rulers who claim to be representatives of the people, were they unaware of the fact that Pakistan has faced three floods since 2010? Indeed, they are aware, for the floods of 2010 were the biggest in the history of Pakistan. Were these democratic rulers also unaware that for the past three years Pakistan has topped the list of the Global Climate Risk Index? If these rulers really cared for the difficulties faced by the people and considered it their obligation to remove these hardships from their people, then how they could be unaware if these facts? Yet, they claim day and night they represent the people and care for them!

These democratic rulers buried the flood commission report that was prepared on the direction of Supreme Court of Pakistan in 2010, rather than implementing it. This report pinpointed recommended proposals in order to safe Pakistan from future floods. Successive democratic governments, both of the PPP and the PML-N, did not care for these proposals. Democratic rulers do not use the billions of tax money collected from people to lay down sewerage systems to drain out rain water from the major cities of Pakistan. Instead they used this money to build an expensive metro bus system because no one can see drainage lines lying underground, but everyone can see running buses daily and such wasteful projects are used for their election campaign.

Democracy cannot produce politicians who will remove difficulties, hardship and pain from the people as an utmost obligation. Even in America, a self proclaimed champion of democracy and human rights, people are left to the mercy of natural disasters. After Hurricane Katrina in 2005, a Congressional investigation found that FEMA (Federal Emergency Management Agency) and the Red Cross, "did not have a logistics capacity sophisticated enough to fully support the massive number of Gulf coast victims." It placed responsibility for the disaster on all three levels of government, federal, state and local.

Islam has made politics as looking after the affairs of the Ummah and an obligation. Failure renders the ruler accountable on the Day of Judgment. That is why Umar (ra) when charged with ruling said, “If an animal, in the land of Iraq trips, I would be afraid that Allah (saw) would account me, for not fixing the road for it”. People of Pakistan must realize that whether it is democracy or dictatorship, rulers do not consider them self answerable in front of their people or their Creator, Allah (swt). It is only the ruling system of Khilafah in which in which the Khalifah is answerable in front of the people and Allah (swt). And accountability before Allah (swt) is the most severe. RasulAllah (saw) said,:

مَا مِنْ وَالٍ يَلِي رَعِيَّةً مِنْ الْمُسْلِمِينَ فَيَمُوتُ وَهُوَ غَاشٌّ لَهُمْ إِلَّا حَرَّمَ اللَّهُ عَلَيْهِ الْجَنَّةَ

“There is no Wali who takes charge of Muslims and dies cheating them, except that Allah prohibits him paradise.”

[Bukhari]

          Therefore the people of Pakistan must reject both democracy and dictatorship. They must enjoin with Hizb ut-Tahrir in her quest for the establishment of Khilafah, as only the establishment of Khilafah will help and support us in removing our hardships. Above all, its establishment will earn the good pleasure of Allah (swt) on the Day of Judgment.

Shahzad Shaikh

Deputy to the Spokesman of Hizb ut-Tahrir in the Wilayah of Pakistan


جمعہ،
17 ذی القعد ، 1435ھ                              12/09/2014                              نمبرPR1405r:

پاکستان میں سیلاب کی تباہ کاریاں

جمہوری حکمران اور سیاست دان پاکستان کو سیلاب سے بچانے کے لئے کوئی قدم نہیں اٹھاتے

          ایک بار پھر جمہوری حکمران پاکستان اور اس کے عوام کو سیلاب کی تباہ کاریوں سے ممکنہ بچاؤ کی تدابیر اختیار کرنے میں ناکام ہوگئے ہیں۔ حکمران خود پر ہونے والی تنقید سے بچنے کے لئے اس کی ذمہ داری محکمہ موسمیات پر ڈال رہے ہیں کہ انہوں نے پیشگی اطلاع نہیں دی تھی۔ حزب التحریر ان نام نہاد عوامی نمائندگی کا دعویٰ کرنے والے حکمرانوں سے سوال کرتی ہے کہ کیا وہ اس بات سے بے خبر تھے کہ 2010 سے اب تک پاکستان میں تین سیلاب آچکے ہیں جن میں سے 2010 کا سیلاب پاکستان کی تاریخ کا سب سے بڑا سیلاب تھا؟ کیا یہ جمہوری و عوامی حکمران اس بات سے بھی بے خبر تھے پاکستان پچھلے تین سالوں میں عالمی موسمی تغیراتی انڈیکس میں پہلے نمبر پر آرہا ہے؟ یہ حکمران جو خود کو عوامی نمائندے کہتے نہیں تھکتے اگر واقعی عوام کی مشکلات اور تکالیف دور کرنے کو اپنی ذمہ داری سمجھتے تو کس طرح ان باتوں سے بے خبر ہوسکتے تھے؟

          جمہوریت کے گُن گانے والے حکمرانوں نے 2010 میں پاکستان کی تاریخ کے سب سے بڑے سیلاب سے نقصانات کے ذمہ داروں کا تعین کرنے اور آنے والے دنوں میں ان نقصانات سے بچنے کے لئے سپریم کورٹ کی ہدایت پر بننے والے کمیشن کی رپورٹ پر عمل کرنا تو دور کی بات بلکہ اس رپورٹ کو دفن کردیا۔ ان تجاویز پر پہلے پی۔پی۔پی نے اور پھر پی۔ ایم۔ایل (ن) کی جمہوری حکومتوں نے کوئی توجہ نہیں دی۔ جمہوری سیاست دان عوام کے خوان پسینے کی کمائی سے حاصل ہونے والی ٹیکس کی رقم کو بڑے بڑے شہروں میں پانی کے نکاس کے منصوبے شروع کرنے کے لئے استعمال تو نہیں کرتے لیکن اربوں روپوں کی لاگت سے تیار ہونے والی میٹرو بس سروس شروع کرتے ہیں کیونکہ زمین کے نیچے بچھنے والے نکاسی کے پائپ کسی کو نظر نہیں آتے اور بارشیں کون سی روز روز ہوتی ہیں لیکن سڑک پر دوڑتی میٹرو بسیں روزانہ ہر کوئی دیکھ سکتا ہے اور پھر اگلی انتخابی مہم میں اپنی کارکردگی جتانے کے لئے ایسے منصوبوں کا ڈھنڈورا پیٹا جاتا ہے۔

          درحقیقت جمہوریت ایسے سیاست دان پیدا کر ہی نہیں سکتی جو عوام کے دکھ درد اور تکالیف کو دور کرنا اپنا اولین فرض سمجھتے ہوں۔ دنیا میں جمہوریت اور انسانی حقوق کے خود ساختہ علمبردار امریکہ میں بھی عوام کو قدرتی آفات کے رحم و کرم پر چھوڑ دیا جاتا ہے۔2005 میں امریکہ میں کاترینہ طوفان کے بعد لوگوں کی دیکھ بحال میں ہونے والی ناکامی کی وجوہات کا تعین کرنے کے لئے کانگریس کی تفتیشی رپورٹ میں کہا گیا کہ "F.E.M.A (فیڈرل ایمرجنسی مینجمنٹ ایجنسی) اور ریڈ کراس کے پاس وہ صلاحیت موجود نہیں تھی کہ وہ متاثرین کی بڑی تعداد کو مدد فراہم کرسکتے"۔ اس رپورٹ میں طوفان سے ہونے والی تباہ کاریوں کی ذمہ داری وفاقی، ریاستی اور شہری،تینوں حکومتوں پر ڈالی گئی۔

          اسلام نے سیاست کو لوگوں کے امور کی دیکھ بھال کرنا اور فرض قرار دیا ہے اور اس فرض میں کوتاہی یا ناکامی پر حکمرانوں کو قیامت کے دن اللہ کے غضب کا سامنا کرنا پڑے گا۔ یہی وجہ ہے کہ خلیفہ راشد حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہ نے یہ فرمایا تھا کہ "اگر عراق کے زمین پر کوئی جانور بھی گر پڑا تو مجھے ڈر ہے کہ اللہ سبحانہ و تعالٰی سڑک کو ٹھیک نہ رکھنے پر میرا محاسبہ کریں گے"۔ پاکستان کے عوام کو یہ جان لینا چاہیے کہ چاہے جمہوریت ہو یا آمریت دونوں میں حکمران خود کو عوام اور اپنے رب اللہ سبحانہ و تعالٰی کے سامنے جوابدہ نہیں سمجھتے۔ یہ صرف خلافت کا نظام ہے جس میں خلیفہ، عوام اور اللہ سبحانہ و تعالٰی، دونوں کے سامنے جوابدہ ہوتا ہے اور اللہ کے سامنے جوابدہی سب سے سخت ہے۔ رسول اللہﷺ نے فرمایاکہ:

مَا مِنْ وَالٍ يَلِي رَعِيَّةً مِنْ الْمُسْلِمِينَ فَيَمُوتُ وَهُوَ غَاشٌّ لَهُمْ إِلَّا حَرَّمَ اللَّهُ عَلَيْهِ الْجَنَّةَ

"اس شخص کا کوئی والی نہیں جو مسلمانوں کے امور کی ذمہ داری لیتا ہے اور انہیں دھوکہ دیتے دیتے مر جاتا ہے سوائے اس کے کہ اللہ اس پر جنت کو حرام کردیتے ہیں" (بخاری)۔

          تو پاکستان کے عوام کو جمہوریت اور آمریت دونوں کو رد کرتے ہوئے خلافت کے قیام کی جدوجہد میں حزب التحریر کا ہمسفر بن جانا چاہیے کہ صرف خلافت کا قیام ہی ہمیں دنیا میں ہماری مشکلات کو دور کرنے میں ہماری معاون ہوگی اور آخرت میں اللہ سبحانہ و تعالٰی کی خوشنودی کا باعث بنے گی۔

شہزاد شیخ

ولایہ پاکستان میں حزب التحریر کے ڈپٹی ترجمان


Today 3595 visitors (11185 hits) Alhamdulillah
=> Do you also want a homepage for free? Then click here! <=