Media Office Hizb ut-Tahrir Pakistan

PR 03 11 2014



Monday
, 10th Muharram 1436 AH                                  03/11/2014 CE                           No: PR14066

Press Release

Hizb ut-Tahrir Harshly Condemns the Bomb Blast at the Wagah Border

To End Terrorism, its Mastermind, the US, Must be Expelled from the Region

On 2 November 2014, sixty people were killed in a bomb blast, whilst returning from a flag lowering ceremony at the Wagah Border, near Lahore. Hizb ut-Tahrir Wilayah Pakistan harshly condemns this brutal act of terrorism and prays for the deceased ones, so that may Allah grants them Jannah and fills the hearts of their relatives with patience over their loss.

Since the US occupation of Afghanistan, when America entered this region as a greatly expanded physical presence, Pakistan has become a hub of deadly bomb blast attacks. Pakistan did not experience such carnage when Soviet Russia occupied Afghanistan. Nor could India take advantage of that situation, although she was an ally of Soviet Russia. However, since traitors in Pakistan’s political and military leadership extended support to the US in occupying Afghanistan and fighting the tribal Muslims who resist the US occupation, they opened Pakistan’s territory to American terrorist organizations as the CIA, FBI, Black Water and the Raymond Davis Network. Now, Pakistan’s military and civilian installations are continuously under deadly bomb attacks. Pakistan was successful in stopping a superpower, USSR, and its ally, India, from launching bombing campaigns in Pakistan solely because their agencies were not allowed to roam around, acquire residential houses, plan evil campaigns and then execute them freely. Moreover, the rulers now claim that we have the support of American intelligence agencies and we are not facing a superpower, rather we are facing small militant organizations. So how can such a small force be so successful in conducting such horrific acts of terrorism, whereas a superpower failed previously?

In reality, the traitors in Pakistan’s political and military leadership have never been able to present any credible excuse for Pakistan’s participation in America’s so called War on Terror. If fighting the Soviet occupation was Jihad, then how could fighting the US occupation be declared as terrorism? So, in order to create an excuse for participating in the US crusade, American terrorist organizations were let loose to roam freely in Pakistan, so they can plan and execute bomb blasts like the Wagah border attack. They then put the blame on the tribal Muslims, claiming that they have the support of Indians sitting in Afghanistan, even though it is the US that allowed India its footprint in Afghanistan. Thus, America and its agents have tried to change a strong opinion against the US war, found within our armed forces and the general public. That is why Obama in 2009 said, “In the past, there have been those in Pakistan who have argued that the struggle against extremism is not their fight...as innocents have been killed from Karachi to Islamabad... Public opinion has turned".

For peace in Pakistan and this region, America must be expelled and India must be reminded of her actual stature. Peace can never be achieved by allowing the US to stay in the region and giving India economic and political concessions. The sincere amongst the armed forces must cleanse the political and military leadership from traitors and give the Nussrah to Hizb ut-Tahrir for the establishment of Khilafah. Only the establishment of Khilafah will unify the Muslims of the region against American terrorism. The Khilafah will expel the US from the region, restoring peace to it

Shahzad Shaikh

Deputy to the Spokesman of Hizb ut-Tahrir in the Wilayah of Pakistan

پیر، 10 مھرم ، 1436ھ                                  03/11/2014                              نمبرPR14066:

حزب التحریر واہگہ بارڈر پر بم دھماکے کی شدید مزمت کرتی ہے

دہشت گردی کے خاتمے کے لئے اس کے ماسٹر مائنڈ امریکہ کو خطے سےنکالا جانا ضروری ہے

کل لاہور واہگہ بارڈر پر پرچم اتارنے کی تقریب سے واپس آنے والے لوگوں کو بم دھماکے کا نشانہ بنایا گیا جس میں  ساٹھ افراد لقمہ اجل بن گئے۔ حزب التحریر ولایہ پاکستان دہشت گردی کی اس واردات کی شدید مذمت کرتی ہے اور دعا گو ہے کہ مرنے والوں کو اللہ اپنی جوار رحمت میں جگہ اور لواحقین کو صبر جمیل عطا فرمائے (آمین)۔

جب سے امریکہ افغانستان اور اس خطے میں داخل ہوا ہے پاکستان خوفناک دھماکوں کی آماجگاہ بن گیا ہے۔ اس قسم کی طویل  اور خوفناک دہشت گردی کا سامنا تو پاکستان کو اس وقت بھی نہیں کرنا پڑا تھا جب سوویت یونین افغانستان پر قابض ہوا تھا اور نہ ہی بھارت  سوویت یونین کا اتحادی ہونے کے باوجوداس صورتحال سے فائدہ اٹھا سکا تھا ۔ لیکن جب سےسیاسی و فوجی قیادت میں موجود غداروں نے افغانستان پر امریکی قبضے کو مستحکم کرنے اور اس قبضے کے خلاف مزاحمت کرنے والے قبائلی مسلمانوں کے خلاف امریکہ کو مددو معاونت فراہم کرنے کے لئے پاکستان کی سرزمین کو امریکی دہشت گرد تنظیموں سی۔آئی۔اے، ایف،بی،آئی،بلیک واٹر اور ریمنڈ ڈیوس جیسی تنظیموں کے لئے کھول دیا ہے پاکستان کی فوجی و شہری تنصیبات مسلسل خوفناک حملوں کی زد میں ہیں۔ اگرپاکستان  تنہا سوویت یونین جیسی خوفناک سپر پاور سمیت بھارت  کو بھی پاکستان میں دہشت گردی کی کاروائیاں کرنے سے روکنے میں کامیاب رہا تو اس کی وجہ صرف یہ تھی کہ ان کی ایجنسیوں کو پاکستان بھر میں آزادانہ گھومنے، رہائش اختیار کرنے ، منصوبے بنانے اور ان پر عملدرآمد کروانے کی اجازت نہیں دی گئی تھی۔ حکمران یہ کہتے ہیں ہمیں امریکی انٹیلی جنس ایجنسیوں کی مدد و معاونت حاصل ہے اور مد مقابل دنیا کی کوئی سپر پاور نہیں بلکہ چھوٹی چھوٹی عسکری تنظیمیں ہیں تو پھر کس طرح یہ چھوٹی تنظیمیں اس قدر خوفناک دہشت گردی کی کاروائیاں کر سکتی  ہیں جو ماضی میں ایک سپر پاور نہیں کرسکی؟ دراصل پاکستان کی سیاسی و فوجی قیادت میں موجود غدار کبھی بھی امریکہ کی نام نہاد دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پاکستان کی شمولیت کا کوئی جواز پیش نہیں کرسکے۔ اگر سوویت یونین کے قبضے کےخلاف لڑنا جہاد تھا تو امریکی قبضے کے خلاف لڑنا دہشت گردی کیسے ہوگیا؟تو امریکی صلیبی جنگ میں شرکت کے جواز کو پیدا کرنے کے لئے ہی ان امریکی دہشت گرد تنظیموں کو پاکستان میں کھلا چھوڑ دیا گیا ہے تا کہ وہ واہگہ بارڈر جیسے خوفناک حملوں کی منصوبہ بندی کریں اور ان پر عمل درآمد کروا کر ان حملوں کی ذمہ داری قبائلی مسلمانوں پر ڈال دیں اور یہ کہیں کہ ان قبائلیوں کوافغانستان میں موجود ہمارے دشمن بھارت کی حمائت حاصل ہے جبکہ بھارت کو  بھی افغانستان میں بیٹھ کر پاکستان کے خلاف کاروائیاں کرنے کی اجازت امریکہ ہی نے دی ہے۔  اس طرح امریکی جنگ کی خلاف افواج پاکستان اور پاکستان کی عوام میں موجود طاقتور رائے عامہ کو تبدیل کیا جائے اور وہ اس جنگ کو اپنی جنگ سمجھنے پر مجبور ہو جائیں۔ اسی لئے 2009 میں اوبامہ نے یہ کہا تھا کہ "ماضی میں پاکستان میں ایسے لوگ رہے ہیں جو یہ کہتے تھے کہ انتہا پسندوں کے خلاف جدوجہد ان کی جنگ نہیں ہے۔۔۔لیکن جب معصوم لوگ کراچی سے اسلام آباد تک قتل ہوئے تو رائے عامہ تبدیل ہوگئی"۔

لہذا پاکستان اور خطے میں حقیقی امن صرف امریکہ کو بے دخل کر کے  اور بھارت کو اس کی اوقات یاد دلا کر ہی حاصل ہوسکتا ہے۔   امریکہ کو مزید خطے میں رہنے کی اجازت دینے سے اور بھارت کو اقتصادی و سیاسی مراعات فراہم کرنے امن حاصل نہیں ہوگا ۔ افواج پاکستان میں موجود مخلص افسران پر لازم ہے کہ وہ سیاسی و فوجی قیادت  میں موجود غدار امریکی ایجنٹوں سے قوم کو نجات دلائیں اور  خلافت کے قیام کے لئے حزب التحریر کو نصرۃ دیں کہ  یہ کام ان کے سوا اور کوئی نہیں کرسکتا۔ صرف خلافت کا قیام ہی خطے کے تمام مسلمانوں کو امریکی دہشت گردی کے خلاف یکجا کردے گا اورخلافت  خطے کو امریکی دہشت گردی سے ہمیشہ ہمیشہ کے لئے نجات دلائے گی۔

شہزاد شیخ

ولایہ پاکستان میں حزب التحریر کے ڈپٹی ترجمان


Today 30 visitors (612 hits) Alhamdulillah
=> Do you also want a homepage for free? Then click here! <=