Media Office Hizb ut-Tahrir Pakistan

PC 09 05 2014

Friday, 10th Rajab 1435 AH                                               09/05/2014 CE                                     No: PN14027

Press Release

Naveed Butt’s Family Holds Press Conference

Naveed Butt's Abduction: Two Years, Too Much! He Must Be Released Immediately

Today, the wife of Naveed Butt, Advocate Sadia Rahat and other members of his family held a press conference at the Islamabad Press Club. Advocate Sadia Rahat briefed the media regarding Naveed Butt’s abduction and the judicial process that has taken place since his abduction on 11th May 2012, two years ago.

Advocate Sadia Rahat said that Naveed Butt was abducted by government agencies two years ago and so far his whereabouts are not known. He was abducted because he is a spokesman in Wilayah Pakistan of a global Islamic political party, Hizb ut-Tahrir. Since his abduction his family has not been given an opportunity to see him and often her young children, who witnessed his abduction, suddenly awake, crying in the middle of the night and asking when their father will come back. And this severe injustice and oppression is taking place in a country which was created on the basis of "لا إله إلا الله".

Advocate Sadia Rahat briefed the media regarding the judicial process so far took place since his abduction. He told that just after his abduction on 11th May 2012, a Constitutional Petition was filed in Islamabad High Court. The Chief Justice of Islamabad High Court issued notices to respondents including the Director-General (DG) Inter-Services Intelligence (ISI) and DG Military Intelligence (MI) and ordered them to produce Naveed Butt on next hearing.  Also a F.I.R 12/566 was registered in Liaqatabad, Lahore police station which included DG ISI and DG MI as accused. The admission of DGs ISI and MI as accused in a civilian court is a first in Pakistani legal history.

But after few hearings Islamabad High Court suddenly refused to further hear the case on a plea that since this incident happened in Lahore and its FIR is also registered their so Lahore High Court has the jurisdiction to hear this case. We challenged this judgment in Supreme Court of Pakistan but they upheld the decision of the Islamabad High Court.

Since June 2013, this case is under proceeding in Lahore High Court but so far no serious progress has taken place. So it appears after pressurizing the Islamabad High Court regarding a case which could have been a historical precedent, the agencies succeeded in allowing the case to rot in a legal graveyard. This is evidence that the regime does not have a word of truth on its side, as it fears the propagation of Naveed's call in court and having to answer for its injustice.

Advocate Sadia Rahat and the family members of Naveed Butt asked the government to secure his release, as he has neither committed any crime nor he is wanted in any criminal case, rather he is a respectable and highly qualified engineer working to free Pakistan and its people from the shackles of American hegemony and to provide them an opportunity to live under the shade of Islam, so he must be released immediately.

And Hizb ut-Tahrir in the Wilayah of Paksitan assures the Muslims that it will not slow down in its efforts to secure the Khilafah, for fear of the tyrants. It asserts that the day is not far inshaaAllah that the Khilafah will return to the lands of Pakistan, the Pure, the Good, and Naveed Butt will be hoisted on the shoulders of Muslims to welcome it.  Allah (swt) said,:

أَتَخْشَوْنَهُمْ فَاللَّهُ أَحَقُّ أَنْ تَخْشَوْهُ إِنْ كُنتُمْ مُؤْمِنِينَ

"Do you fear them, Allah is more worthy to be fearful of, if you are Believers.”  [Surah At-Tawba 9:13]

Media office of Hizb ut-Tahrir in the Wilayah of Pakistan

جمعہ، 10، رجب، 1435                                   09/05/2014                              نمبرPN14027 :

نوید بٹ کے خاندان نے  پریس کانفرنس منعقد کی

نوید بٹ کا اغوا: دو سال، حد ہوگئی! نوید بٹ کو فوری رہا کیا جائے

آج نوید بٹ کی اہلیہ محترمہ سعدیہ راحت ایڈووکیٹ اور ان کے  خاندان کے دیگر افرادنے اسلام آباد پریس کلب میں پریس کانفرنس سے خطاب کیا۔ محترمہ سعدیہ راحت ایڈووکیٹ نے میڈیا کو نوید بٹ کے اغوا اور اب تک  کی عدالتی کاروائی سے آگاہ کیا۔

محترمہ سعدیہ راحت ایڈووکیٹ نے کہا کہ نوید بٹ کو دو سال قبل حکومتی ایجنسیوں نے اغوا کیا تھا اور اب تک وہ لاپتہ ہیں۔ انہیں اس لیے اغوا کیا گیا  کیونکہ وہ ایک عالمی اسلامی سیاسی جماعت حزب التحریر کے ولایہ پاکستان میں ترجمان ہیں۔ اغوا کے دن سے آج تک ان کے خاندان کو انہیں دیکھنے تک کا موقع فراہم نہیں کیا گیا۔میرے بچے جن کی آنکھوں کے سامنے ان کے والد کو اغوا کیا گیا تھا ، اکثر رات کو روتے ہوئے اٹھ جاتے ہیں اور سوال کرتے ہیں کہ ان کے ابو کب آئیں گے؟  یہ ظلم اور ناانصافی اُس ملک میں ہورہی ہے جس کی تخلیق  "لا إله إلا الله" کی بنیاد پر ہوئی تھی۔

محترمہ سعدیہ راحت ایڈووکیٹ نے نوید بٹ کے اغوا سے لے کر آج کے دن تک ہونے والی عدالتی کاروائی سے میڈیا کو آگاہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ 11 مئی 2012 کو ان کے اغوا کے فوراً بعد اسلام آباد ہائی کورٹ میں ایک آئینی پٹیشن داخل کی گئی۔ چیف جسٹس اسلام آباد ہائی کورٹ نے  مسؤل علیہان کے نام نوٹس جاری کیے جن میں ڈائریکٹر جنرل آئی۔ایس۔آئی اور ڈائریکٹر جنرل ایم۔آئی بھی شامل تھے اور ساتھ ہی یہ حکم بھی دیا کہ نوید بٹ کو اگلی پیشی پر حاضر کیا جائے۔ اس کے علاوہ  لاہور کے لیاقت آباد پولیس اسٹیشن میں ایف۔آئی۔آر نمبر 12/566 درج کی گئی جس میں ڈائریکٹر جنرل آئی۔ایس۔آئی اور ڈائریکٹر جنرل ایم۔آئی کو ملزمان نامزد کیا گیا تھا۔ پاکستان کی تاریخ میں یہ پہلا موقع تھا جب ڈائریکٹر جنرل آئی۔ایس۔آئی اور ڈائریکٹر جنرل ایم۔آئی کو ایک سول عدالت میں ملزمان کے طور پر نامزد کیا گیا ۔ لیکن چند پیشیوں کے بعد اسلام آباد ہائی کورٹ نے اچانک اس مقدمے کو یہ کہہ کر سننے سے انکار کردیا کہ یہ واقع کیونکہ لاہور میں پیش آیا ہے اور اس کی ایف۔آئی۔آر بھی لاہور میں ہی درج ہوئی ہے لہٰذا  یہ مقدمہ اس کے دائرہ اختیار میں نہیں آتا اور لاہور ہائی کورٹ میں یہ مقدمہ سنا جانا چاہیے۔ ہم نے اس فیصلے کو سپریم کورٹ میں چیلنج کیا لیکن انہوں نے اسلام آباد ہائی کورٹ کے فیصلے کو برقرار رکھا۔

جون 2013 سے یہ مقدمہ لاہور ہائی کورٹ میں زیر سماعت ہے لیکن اب تک کوئی خاص پیش رفت نہیں ہوسکی۔ ایسا معلوم ہوتا ہے کہ اسلام آباد ہائی کورٹ کو دباؤ میں لانے کےبعد ایجنسیاں اپنے اس مقصد میں کامیاب ہو جائیں گی کہ یہ مقدمہ عدالتی قبرستان میں دفن ہوجائے جبکہ یہ  مقدمہ ایک تاریخی روایت قائم کرسکتا تھا۔ حکومت ایسا اس لیے کررہی ہے کہ حکومت کے پاس اپنے حق میں کہنے کو ایک بھی لفظ سچائی کا نہیں ہے اور وہ اس بات سے خوفزدہ ہے کہ اگر اسے عدالت میں اس ناانصافی کا جواب دینا پڑا تو نوید بٹ جس دعوت کا داعی ہیں اسے مزید مقبولیت حاصل ہوگی۔

محترمہ سعدیہ راحت ایڈووکیٹ اور نوید بٹ کے خاندان کے دیگر افراد نے حکومت سے نوید بٹ کی فوری بازیابی کا  مطالبہ کیا کیونکہ نہ تو اس نے کوئی جرم کیا ہے اور نہ ہی وہ کسی مجرمانہ مقدمے میں مطلوب ہے بلکہ وہ ایک معزز اور انتہائی قابل انجینئر ہے جو پاکستان اور اس کے لوگوں کو امریکی غلامی کی قید سے نکلانے کی جدوجہد کررہا ہے اور انہیں یہ  موقع فراہم کرنا چاہتا ہے کہ وہ اسلام کے زیر سایہ اپنی زندگی بسر کرسکیں، لہٰذا نوید بٹ کو فوری رہا کیا جائے۔

حزب التحریر ولایہ پاکستان مسلمانوں کو یہ یقین دلانا چاہتی ہے کہ وہ جابروں کے ظلم سے خوفزدہ ہو کر خلافت کے قیام کی جدوجہد سے  دست بردار نہیں ہو گی اور نہ ہی اپنی رفتار میں کوئی کمی لائے گی اور حزب یہ یقین رکھتی ہے کہ انشاء اللہ وہ دن اب دور نہیں جب خلافت پاکستان کی سرزمین پر قائم ہو گی اور لوگ نوید بٹ کو اپنے کندھوں پر اٹھائے خلافت کا استقبال کریں گے۔ اللہ سبحانہ و تعالٰی فرماتے ہیں،

أَتَخْشَوْنَهُمْ فَاللَّهُ أَحَقُّ أَنْ تَخْشَوْهُ إِنْ كُنتُمْ مُؤْمِنِينَ

" کیا تم ان سے ڈرتے ہو؟ اللہ ہی زیادہ مستحق ہے کہ تم اس کا ڈر رکھو، اگر تم ایمان والے ہو"(التوبۃ:13)

ولایہ پاکستان میں حزب التحریر کا میڈیا آفس


Today 30 visitors (591 hits) Alhamdulillah
=> Do you also want a homepage for free? Then click here! <=