Media Office Hizb ut-Tahrir Pakistan

PR 19 12 2014

 

Friday, 27th Safar 1436 AH                               19/12/2014 CE                         No: PR14079

Press Release

End of US presence in Pakistan, End of terrorism

Seeking US help to Eliminate Terrorism is Treachery to Martyrs of Peshawar

On Thursday 18 December, the Interior Ministry contacted the US embassy and asked to provide experts in the field of security issues for South Asia so they can help the committee comprising of all parliamentary parties, which has been assigned to formulate strategy to fight terrorism.

Every Muslim in Pakistan is aware of the fact that America directly takes benefit from terrorism in the country. After every big terrorist activity in the country traitors in the political and military leadership never resign or accept their failure to protect the people. Rather, they exploit these incidents and formulate draconian laws like the Pakistan Protection Act to suppress every voice raised for Islam, no matter how peaceful. They initiate new operations to kill the Mujahideen who fight American forces in Afghanistan. But the Muslims of this region refuse to accept American servitude in any case. Because of this the US conducts terrorist activities through the C.I.A and the Raymond Davis Network, while the traitors in the political and military leadership facilitate the opportunity for them to roam freely around sensitive military installations and in the tribal regions, recruiting agents and using them for the execution of their evil plans. On 21st February 2011, US paper New York Times quoted a senior official in the Punjab police saying, “Davis was masterminding terrorist activities in Lahore and other parts of Punjab…[he was] instrumental in recruiting young people from Punjab…[to] fuel the bloody insurgency…recovered digital camera had photographs of Pakistan’s defence installations”.

Seeking help to end terrorism in Pakistan from the head of terrorism, America, is a treachery to the blood of 141 children and adults who were killed in Peshawar on Tuesday. In the last thirteen years America was given room to get her foot in Pakistan in the name of fighting terrorism but ironically as her presence increased so too did terrorism. After knowing this fact, seeking help from this snake shows that the Raheel-Nawaz regime has no interest in ending terrorism from the country nor do they want to stop the spilling of innocent blood of their countrymen at all.

People of Pakistan must know that as long the American embassy and consulates are not closed and her diplomats, military and intelligence personal, who plan terrorist activities and provide funds for their execution, are not expelled, this fire will not be put out no matter how many operation or negotiations are conducted. Therefore, the people of Pakistan must demand from the Raheel-Nawaz regime that they must end the American presence from Pakistan which is the root cause of terrorism.

Shahzad Shaikh

Deputy to the Spokesman of Hizb ut-Tahrir in the Wilayah of Pakistan

 

جمعہ، 27 صفر ، 1436ھ                            19/12/2014                              نمبرPR14079:

پریس ریلیز

پاکستان سے امریکی وجود کا خاتمہ، دہشت گردی کا خاتمہ

دہشت گردی کے خاتمے کے لئے امریکہ سے مدد مانگناشہدائے پشاور کے خون سے غداری ہے

جمعرات کو وزارت داخلہ نے امریکی سفارت خانے سے رابطہ کیا کہ وہ جنوبی ایشیا کے سیکورٹی معاملات کے  ماہر ین پاکستان بھیجے تا کہ وہ تمام پارلیمانی جماعتوں پر مشتمل کمیٹی کو انسداد دہشت گردی کا منصوبہ بنانے میں مدد فراہم کرسکیں۔

ہر پاکستانی مسلمان اس بات سے باخبر ہے کہ ملک میں دہشت گردی کا براہ راست فائدہ امریکہ اٹھاتا ہے ۔ ملک میں کسی بھی بڑے دہشت گردی کے واقعے کے بعد کبھی بھی سیاسی فوجی قیادت میں موجود غدار عوام کے تحفظ میں ناکامی کا اعتراف کرتے ہوئے اپنے عہدوں سے مستعفی نہیں ہوتے بلکہ ان واقعات کو جواز بنا کر تحفظ پاکستان ایکٹ جیسے کالے قوانین بناتے ہیں تا کہ اسلام کے نام پر اٹھنے والی ہر آواز کو ، چاہے وہ کتنی ہی پرامن کیوں نہ ہو، دبا دیا جائے اور امریکہ کے خلاف لڑنے والے مجاہدین کو نشانہ بنانے کے لئے نئے آپریشن شروع کردیتے ہیں۔ لیکن اس خطے کے مسلمان کسی صورت امریکہ کی غلامی تسلیم کرنے کے لئے راضی نہیں ہورہے جس کی وجہ سے امریکہ سی۔آئی۔اے اور ریمنڈ ڈیوس نیٹ ورک جیسے اداروں سے پاکستان میں دہشت گردی کی کاروائیاں کرواتا ہےاور سیاسی و فوجی قیادت میں موجود غدار سی۔آئی۔اے اور ریمنڈ ڈیوس نیٹ ورک کو ، حساس فوجی تنصیبات سے لے کر قبائلی علاقوں تک میں گھومنے بھرنے ، ایجنٹ بنانے اور ان ایجنٹوں کے ذریعے سے حملے کروانے کی آزادی فراہم کرتے ہیں۔ 21 فروری 2011 کو امریکی اخبار نیویارک ٹائمز نے پنجاب پولیس کے ایک عہدیدار کے حوالے سے اس بات کا انکشاف کیا کہ "ریمنڈ ڈیوس لاہور اور پنجاب کے دیگر حصوں میں دہشت گردی کی کاروائیوں کی منصوبہ بندی کررہا تھا۔۔۔۔پنجاب سے نوجوانوں کو خونی کاروائیوں کے لئے بھرتی کررہاتھا۔۔۔ اس کے ڈیجیٹل کیمرے سے دفاعی تنصیبات کی تصویریں برآمد ہوئیں"۔

پاکستان سے دہشت گردی کے خاتمے کے لئے دہشت گردی کے سرغنہ،امریکہ سےمدد طلب کرنا پشاور میں قتل ہونے والے 141 معصوم بچوں اور بڑوں کے خون سے غداری اور مذاق ہے۔ پچھلے تیرہ سالوں میں دہشت گردی کے خلاف جنگ کے نام پر جتنا امریکہ کو پاکستان میں قدم جمانے اور آزادی سے کام کرنے کی اجازت دی گئی اسی قدر دہشت گردی میں اضافہ ہی ہوا کمی بالکل بھی نہیں ہوئی۔ اس حقیقت کے باوجود راحیل-نواز حکومت کا ایک بار پھر اس ملک کے معصوم لوگوں کے تحفظ کے لئے خونی امریکی بھیڑیے سے مدد مانگنا اس بات کا ثبوت ہے کہ حکمران اس ملک سے دہشت گردی اور اس کے معصوم عوام کا خون ناحق کو بہنے سے روکنے میں کوئی دلچسپی نہیں رکھتے۔

پاکستان کے عوام کو یہ بات جان لینا چاہیے کہ جب تک امریکی سفارت خانہ ، قونصل خانےبند اور سفارتی ، فوجی اور انٹیلی جنس اہلکار ملک بدر نہیں کئے جاتے ، جو دہشت گردی کی کاروائیوں کی منصوبہ بندی اور دہشت گردوں کو مادی وسائل فراہم کرتے ہیں، یہ آگ کسی صورت نہیں بھجے گی چاہے کتنے ہی آپریشن یا مذاکرات کر لئے جائیں۔ لہذا عوام کو راحیل-نواز حکومت کو پاکستان سے امریکی موجودگی کے خاتمے کا مطالبہ کرنا چاہیے جو اس دہشت گردی کا ماخذ ہے۔

شہزاد شیخ

ولایہ پاکستان میں حزب التحریر کے ڈپٹی ترجمان


Today 3595 visitors (11173 hits) Alhamdulillah
=> Do you also want a homepage for free? Then click here! <=