Media Office Hizb ut-Tahrir Pakistan

PN 16 02 2014

 

Sunday, 16 Rabi ul-Thani 1435 AH                               16/02/2014 CE                           No: PN14009

Press Note

Hizb ut-Tahrir holds country wide demonstrations to end American presence

US Presence is the Cause of the Bombings & Chaos

Hizb ut-Tahrir Wilayah Pakistan is holding demonstrations across the country against American presence and to end it. Hundreds of people attended these protests. The protesters carried banners and placards saying, “O Armed Forces of Pakistan! End the American embassies, consulates and bases, which are the cause of bombings and insecurity”, “Wiping out the Raymond Davis network, will end the bombing campaign in the country” and “Democracy is the Guardian of the American Raj, Khilafah is the Shield of the Muslims”.

Demonstrators protested against the American presence and its ever increasing hegemony and influence. They held America responsible for the ongoing campaign of bomb blasts and target killings. Protesters were demanding from the armed forces closure of the American bases, embassy, consulates and Raymond Davis network. They called for the armed forces to securing the return of the Khilafah by granting the Nussrah to Hizb ut-Tahrir. Protestors were of the view that such chaos in Pakistan benefits America alone because it wants the Pakistan military to target tribal fighters, who are crossing the border with Afghanistan to fight the American occupation in Afghanistan. They were also of the view that the traitors in our leadership point here and there to deceive us on behalf of their American masters, but they never point out the root cause, which is the American presence. Therefore until America maintains its presence amongst us we cannot even think of peace rather be able to live in peace.

Protestors called for the abolition of the Kufr capitalist democratic system and the establishment of Khilafah, so the Khalifah can gather together the armed forces and the resources of the Ummah in order to expel America from the region.

Media Office of Hizb ut-Tahrir in Wilayah Pakistan

اتوار، 16 ربیع الثانی ، 1435ھ                            16/02/2014                              نمبرPN14009:

ملک سے امریکی موجودگی کے خاتمے کے لیے حزب التحریر کے ملک بھر میں مظاہرے

بم دھماکوں اور بدامنی کی اصل وجہ امریکہ کی موجودگی ہے

حزب التحریر  ولایہ پاکستان ملک بھر میں ملک میں امریکہ کی موجودگی کے خلاف اور اس کے خاتمے کے لیے مظاہرے کیے جس میں سیکڑوں لوگوں نے شرکت کی۔  مظاہرین نے بینرز اور کتنے اٹھا رکھے تھے جن پر تحریر تھا : " اے پاک فوج، امریکی راج ختم کرو، امریکی ایمبیسی اور اڈے ختم کرو ، جودھماکوں اور بد امنی کی اصل وجہ ہیں "، " ریمنڈ ڈیوس نیٹ ورک کا صفایا۔۔۔ملک سے بم دھماکوں کا خاتمہ "، " جمہور یت امریکی راج کی محافظ۔۔۔خلافت مسلمانوں کی ڈھال "۔

مظاہرین ملک میں امریکہ کی موجودگی اور اس کے بڑھتے ہوئے اثرو نفوذ کے خلاف سخت احتجاج کررہے تھے اور ملک میں جاری بم دھماکوں اور قتل و غارت گری کے واقعات کا ذمہ دار امریکہ کو قرار دے رہے تھے۔  مظاہرین افواج پاکستان سے ملک میں موجود امریکی اڈوں ، سفارت خانے، قونصل خانوں اور ریمنڈ ڈیوس نیٹ ورک کے خاتمے اور پاکستان میں خلافت کے قیام کے لیے حزب التحریر کو نصرۃ فراہم کرنے کا مطالبہ کررہے تھے۔ مظاہرین کا یہ کہنا تھا کہ  پاکستان میں اس قسم کی افراتفری صرف اور صرف امریکہ کے لیے فائدہ مند ہے کیونکہ امریکہ یہ چاہتا ہے کہ پاکستان کی فوج  ان  قبائلی جنگجوؤں کو نشانہ بنائے جو پاک افغان سرحد پار کر کے افغانستان پر قابض امریکہ کے خلاف لڑ رہے ہیں۔ ان کہا یہ بھی کہنا تھا کہ  ہماری قیادت میں موجود غدار اس صورتحال کی ذمہ داری کبھی کسی پر ڈالتےہیں  تو کبھی کسی  پر،   تاکہ اپنے آقا امریکہ کی خواہش پر ہمیں دھوکہ دے سکیں لیکن یہ کبھی اس بنیادی وجہ کی نشان دہی نہیں کرتے جو کہ خطے میں امریکہ کی موجودگی  ہے۔ لہٰذا جب تک امریکہ ہمارے درمیان موجود ہے، امن کا قیام تو دور کی بات ہم امن کا تصور بھی نہیں کرسکیں گے۔

مظاہرین ملک سے کفریہ سرمایہ دارانہ جمہوریت کے خاتمے اور خلافت کے قیام کا مطالبہ بھی کررہے تھے تا کہ خلیفہ امت کی افواج اور وسائل کو یکجا کر کے خطے سے امریکہ کو مار بھگائے۔

ولایہ پاکستان میں حزب التحریر کا میڈیا آفس


Today 30 visitors (592 hits) Alhamdulillah
=> Do you also want a homepage for free? Then click here! <=