Media Office Hizb ut-Tahrir Pakistan

PR 06 03 2014


 

Thursday, 05 JamadiulAwwal 1435 AH                                    06/03/2014 CE                           No: PR14012

Press Release

Pakistan’s current regime sides with America in its war to prevent the return of the Khilafah in Syria

The Raheel-Nawaz regime’s policy on Syrian issue is in complete compliance with American interests and this is becoming clear to the people. Hizb ut-Tahrir notices the growing frustration in the regime over criticism over response to Syria. On 28 February 2014, the Foreign Office spokesperson, Tasneem Aslam responded to criticism in anger, “Pakistan’s position on Syria has been explained ad nauseam. If still there is no understanding, I would say the criticism, in the first place, is motivated or there will be questions about the intelligence level of those who are indulging in this debate.”

We say to the regime that it is the regime that lacks intelligence and vision, not the people. It is clear to the wise that the Muslims of the blessed lands of Ash-Sham are undertaking a blessed revolution for Islam. Contrary to uprisings elsewhere, the people of Syria have rejected the American plan to install a new agent in place of Bashar and the continuation of Kuffer civil democratic state. Their demand shakes the thrones of the tyrants as they cry الشعب یرید الخلافة  من جدید “The people want the Khilafah again.” The wise know that the world is about to change dramatically and prepare for that accordingly.

However rather than siding with Islam and Muslims, the regime has sided with the West and tyrant Bashaar in their war against the return of the Khilafah. Syrian Muslims have been calling for help from every Muslim country, but the Raheel-Nawaz regime has kept our soldiers in their barracks, though it is willing to send them to far flung places like Liberia upon the request of its Western masters. Adding salt to the wounds of the Muslims of Syria, Pakistan officially accepted the demands of Geneva-2 which states the formation of a transitional government comprises of the present butcher regime and the so-called opposition that cannot even enter Syria, such is its support! Thus Hizb ut-Tahrir Wilayah Pakistan warns and reminds the traitors in the political and military leadership that whatever efforts you exhaust against the establishment of Khilafah, it is going to happen soon Insha Allah. If not in Syria soon it will be here in Pakistan باذن الله and the Ummah will not forget those who assisted her enemies and most importantly nor will Allah SWT. Surely, the intelligent would heed!

And Hizb ut-Tahrir calls upon the sincere in Pakistan’s armed forces for the Nussrah to establish Khilafah, reminding them that it upon us to extend them the support of our armed forces, the seventh largest in the world, armed with nuclear weapons. RasulAllah صلى الله عليه و سلم  said:

مَا مِنِ امْرِئٍ يَخْذُلُ امْرَأً مُسْلِماً عِنْدَ مَوْطِنٍ تُنْتَهَكُ فِيهِ حُرْمَتُهُ وَيُنْتَقَصُ فِيهِ مِنْ عِرْضِهِ إِلاَّ خَذَلَهُ اللَّهُ عَزَّ وَجَلَّ فِى مَوْطِنٍ يُحِبُّ فِيهِ نُصْرَتَهُ، وَمَا مِنِ امْرِئٍ يَنْصُرُ امْرَأً مُسْلِماً فِى مَوْطِنٍ يُنْتَقَصُ فِيهِ مِنْ عِرْضِهِ وَيُنْتَهَكُ فِيهِ مِنْ حُرْمَتِهِ إِلاَّ نَصَرَهُ اللَّهُ فِى مَوْطِنٍ يُحِبُّ فِيهِ نُصْرَتَهُ

There is no man who lets a Muslim down in a situation where his honor is disparage and his sanctity violated, but that Allah will abandon him in a situation in which he wished for His Support. And there is no man who helps a Muslim in a situation in where his honor is disparaged and his sanctity violated except that Allah will help him in a situation in which he wished for His Support.”

[Ahmad]

Shahzad Shaikh

Deputy spokesman of Hizb ut-Tahrir in Wilayah Pakistan

پیر، 05 جمادی الاول ، 1435ھ                           06/03/2014                              نمبرPR14012:

پاکستان کی حکومت شام میں خلافت کے قیام کو روکنے کی  امریکی جنگ میں اس  کا ساتھ دے رہی ہے

شام کے مسئلہ پر راحیل-نواز حکومت کی پالیسی عین امریکی مفادات کے مطابق ہے اور یہ بات اب لوگوں پر بھی واضح ہوتی جا رہی ہے۔ حزب التحریر  یہ دیکھ رہی  ہے کہ حکومت شام کے مسئلہ پر اس کی پالیسی کے حوالے سے ہونے والی شدید تنقید سے بوکھلا گئی ہے۔ 28 فروری 2014 کو وزارت خارجہ کی ترجمان تسنیم اسلم نے اس تنقید پر غصے میں جواب دیتے ہوئے کہا کہ "شام کے حوالے سے پاکستان کے مؤقف کو وضاحت سے بیان کردیا گیا ہے ،لیکن اس کے باوجود اگر اس مؤقف کو نہیں سمجھا جارہا تو میں یہ کہوں گی کہ یہ تنقید کسی کے کہنے پر کی جارہی ہے اور وہ لوگ جو اس بحث کو اٹھا رہے ہیں ان کی ذہانت پر سوال اٹھائے جاسکتے ہیں"۔

ہم حکومت سے کہیں گے کہ عوام میں نہیں بلکہ حکومت میں ذہانت اور دوراندیشی کی شدید کمی ہے۔ یہ بات ذہین لوگوں پر آشکار ہوچکی ہے کہ شام کی بابرکت زمین کے مسلمان اسلام کے قیام کے لئے ایک مقدس انقلاب برپا کر رہے ہیں۔ دوسرے ممالک میں اٹھنے والی انقلابی تحریکوں کے برعکس شام کے عوام نے بشار کی جگہ کسی نئے امریکی ایجنٹ کو اقتدار میں لانے اور کفریہ جمہوری ریاست کے تسلسل کے امریکی منصوبے کو مسترد کردیا ہے۔ اور جب شام کے مسلمان یہ نعرے لگاتے ہیں کہ الشعب یرید الخلافة من جدید "لوگ ایک بار پھر خلافت کا قیام چاہتے ہیں" تو ظالموں اور جابروں کے تخت لرز جاتے ہیں۔ ذہین اور باخبر لوگ جانتے ہیں کہ دنیا میں جلد ہی  ایک انقلابی تبدیلی آنے والی ہے اور وہ اس کے لئے تیاری کررہے ہیں۔

لیکن حکومت نے اسلا م اور مسلمانوں کا ساتھ دینا گوارا نہیں کیا بلکہ خلافت کے قیام کو روکنے کی مغرب اور جابر بشار کی جنگ کا حصہ بننا قبول کر لیا۔ شام کے مسلمان مسلسل مسلم ممالک سے مدد کے لئے  پکار کررہے ہیں لیکن راحیل-نواز حکومت نے ہماری افواج کو بیرکوں میں بِٹھا رکھا ہے اور اگر  ان کےمغربی آقا اپنے مفادات کی تکمیل کے لئے مسلم افواج کو حرکت میں لانے کا مطالبہ کرتے تو لائبیریا جیسے دور دزار کے ملک بھی اپنی افواج کو فوراً روانا کردیتے۔ حکومت پاکستان نے جنیوا-2 کے مطالبات کو منظور کر کے شام کے مسلمانوں کے زخموں پر نمک چھڑکا ہے جس کے تحت شام میں ایک عبوری حکو مت قائم کی جائے جو لاکھوں مسلمانوں کے قاتل بشار حکومت کے نمائندوں اور نام نہاد اپوزیشن پر مشتمل ہو گی جبکہ اس  اپوزیشن کی شام میں مقبولیت کا یہ حال ہے کہ وہ وہاں اُن علاقوں میں بھی داخل بھی نہیں ہوسکتی جو بشار حکومت کے قبضے میں نہیں ہیں۔  لہٰذا حزب التحریر  ولایہ پاکستان سیاسی و فوجی قیادت میں موجود غداروں کو خبردار کرتی ہے اور یاد دہانی کراتی ہے کہ تم خلافت کے قیام کو کو روکنے کی چاہے کتنی ہی زبردست کوشش کیوں نہ کرلو وہ انشاء اللہ جلد ہی قائم ہو گی۔ اور اگر وہ شام میں  قائم نہیں ہوتی تو اللہ کے حکم سے پاکستان میں قائم ہوگی اور امت ان لوگوں کو کبھی نہیں بھولے گی جنھوں نے اس کے دشمنوں کا ساتھ دیا تھا اور سب سے اہم یہ کہ اللہ  تعالٰی تو بالکل بھی بھولنے والے نہیں ہیں۔ یقیناً ذہین لوگ سبق حاصل کریں گے!

حزب التحریر  افواج پاکستان میں موجود مخلص افسران کو پکارتی ہے کہ وہ خلافت کے قیام کے لئے نصرۃ فراہم کریں اور انھیں یادہانی کراتی ہے کہ یہ ہم پر لازم ہے کہ شام کے مسلمانوں کی اپنی افواج کے ذریعے مدد کریں جو ایٹمی اسلحے سے لیس دنیا کی ساتویں بڑی فوج ہے۔ رسول اللہ ﷺ نے فرمایاکہ

مَا مِنِ امْرِئٍ يَخْذُلُ امْرَأً مُسْلِماً عِنْدَ مَوْطِنٍ تُنْتَهَكُ فِيهِ حُرْمَتُهُ وَيُنْتَقَصُ فِيهِ مِنْ عِرْضِهِ إِلاَّ خَذَلَهُ اللَّهُ عَزَّ وَجَلَّ فِى مَوْطِنٍ يُحِبُّ فِيهِ نُصْرَتَهُ، وَمَا مِنِ امْرِئٍ يَنْصُرُ امْرَأً مُسْلِماً فِى مَوْطِنٍ يُنْتَقَصُ فِيهِ مِنْ عِرْضِهِ وَيُنْتَهَكُ فِيهِ مِنْ حُرْمَتِهِ إِلاَّ نَصَرَهُ اللَّهُ فِى مَوْطِنٍ يُحِبُّ فِيهِ نُصْرَتَهُ

"ایسا کوئی شخص نہیں ہے جو مسلمان کو اس صورتحال میں بے یارو مدد گار چھوڑ دے جہاں اس کو بے عزت کیا جائے اور اس کی حرمت کو پامال کیا جائے  (اور اگر وہ ایسا کرے) تو اللہ اسے اس وقت بے یارو مدد گار چھوڑ دے گا جب وہ اللہ سے مدد کا طلبگار ہوگا۔ اور ایسا کوئی شخص نہیں جو مسلمان کی اس وقت مدد کرے جب اس کو بے عزت کیا جارہا ہو اور اس کی حرمت کو پامال کیا جارہا ہو کہ اللہ اس کی اس وقت مدد فرمائیں گے جب وہ اللہ سے مدد کا طلب گار ہوگا"

(احمد)

شہزاد شیخ

ولایہ پاکستان میں حزب التحریر کے ڈپٹی ترجمان


Today 1855 visitors (6412 hits) Alhamdulillah
=> Do you also want a homepage for free? Then click here! <=