Media Office Hizb ut-Tahrir Pakistan

Goal of Vienna Convention: Enforce Pluralistic Democratic Secular System on Syria


بسم الله الرحمن الرحيم

Goal of Vienna Convention: Enforce Pluralistic Democratic Secular System on Syria, and Fight the Callers to the Establishment of the Khilafah Rashidah State under the Name of “Fighting Terrorism”

(Translated)

On Friday 30/10/2015 CE, the lengthy second meeting took place in Vienna, the capital of Austria, in order to find a solution for the situation in Syria, and it was attended by representatives of the 17 countries headed by America, in addition to the United Nations and the European Union. Upon concluding it, they called for bringing together the opposition and Syrian government to the discussion table for a political process to lead towards forming a trustworthy, non-sectarian government that doesn’t exclude anyone, followed by placing a new constitution and holding elections. They also called for making treaties all over the country, and they agreed to set a date for another meeting after two weeks.

Whoever observes this convention would see that its core, it is not much different from the Geneva Convention that was held in 2012 except in few details which are not reliable. As for those who follow the political and military news occurring on earth, they will see that there is a huge difference that occurred on the ground between the two conventions. As in the Geneva Convention, America was not in a hurry, and it gave the green light for its agent Bashar to kill people and destroy their revolution, and it gave him all the military and political support via its agents in the area, and it ignored all of his crimes. However, it has failed in subjugating the people of Ash-Sham and in breaking their will, and failed with it were each of Iran and Russia who provided him with all sorts of killing and destructive means. As such, it reached an extent where Obama has to announce that he expects a surprising fall of the Syrian regime, and fear spread through the American, European, and Russian decision-making circles from the surprising collapse of the Syrian regime army and its disintegration before the end of next year, and the fear from the Islamists to fill in the emptiness, and this fear is focused more on the outskirts of Damascus due to its proximity to the capital. Therefore, the clenching fist has tightened its grip on not surpassing the red lines which America has placed in order to stop the armed forces of the opposition from occupying the capital. Afterwards, the Russian military’s direct involvement came into the picture in order to rescue America and its agents, and help the Iranian failure to float, and one can notice that this barefaced Russian aggression on the Muslims in Syria, publically coming under the pretext of fighting Da’esh, while it has focused all of its airstrikes on the areas protecting the regime’s sect, and areas that isn’t allowing the regime to fall if the capital falls such as Dara’a, Ar-Reef, and Ad-Dimashqi.

It is imperative to stop here in front of the legendry and heroic tenacity shown by the Muslim fighters in front of this aggression, and they are the ones who forced the International members to hurry up and hold a convention in Vienna, though it was decided to continue the barbaric Russian airstrikes, and accomplish the retrieval of the areas surrounding the area of the head of the regime, and occupy Aleppo. However, it is failure all over again which pushed the members of the aggression to this convention, even though the meeting agenda mentioned the formation of a government… placement of a constitution… without showing the hidden even though the head of the convention is John Kerry and “his assistant” Lavrov! Whatever was hidden has been revealed on Thursday 22/10/2015 when Kerry said, “The International Quartet countries agreed upon Syria being united under a secular democratic pluralistic system”, stressing on the “necessity to fight the factions refusing the peaceful solution in Syria”. This means that they have agreed that the new, yet old, ruling system for the believing Muslim Syrian people to be civil, secular, and opposite to the Deen of Allah (swt), and fighting all factions refusing it. Meanwhile, we know that there is only Da’wah and working towards establishing the Khilafah Rashidah as a project that gathers the Muslims in Syria, and so we know that what is meant by the war is to break down this Divine project:

﴿يُرِيدُونَ لِيُطْفِئُوا نُورَ اللَّهِ بِأَفْوَاهِهِمْ وَاللَّهُ مُتِمُّ نُورِهِ وَلَوْ كَرِهَ الْكَافِرُونَ

They intend to put out the Light of Allah (i.e. the religion of Islam, this Quran, and Prophet Muhammad SAW) with their mouths. But Allah will complete His Light even though the disbelievers hate (it).

[As-Saff: 8]

O Muslims in Syria, Ash-Sham, the Abode of Islam:

You have seen yourselves how the infidel Kaffir West works on painting your future and specifying the system of ruling you; so he specifies it as a secular democratic system… You have seen yourselves how it supports its agent the criminal Bashar and provides him with all sorts of life support despite all the genocides he has committed against you, which never happened except with a green light from his masters… You have seen yourselves how the Muslim rulers who claim that they support you but they walk alongside their maters towards achieving their interests step by step on the expense of your blood and your sacrifice… You have seen yourselves how the Kaffir West tries to delude us from its goal in enforcing a secular democratic system by making the problem limited to shedding the light on the destiny and future of its agent Bashar, and making him the axis of negotiations and a base to the solution…

O Muslims in Syria, Ash-Sham, the Abode of Islam:

Is it possible for you to accept that America and Russia, with them being the horns of the damned devil, to be the caretaker of your safety and security, and since when did wolves took care of the sheep?! The solution is in your hands and not in the hands of your enemies, it is in your Deen and not in the International Law, it is from Allah (swt) and not from His enemies… Do not ever be fooled by them saying that you are weak, you are rather strong with Allah (swt) along your side, and let the enemy know before the friend, as you are the ones who stood in front of the tyrant of this dissolute regime and you have made it fail, and you stood in front of the spiteful Iranian intervention and you made it stand helplessly without being able to move forward not even one kilometer towards your legendry steadfastness, and here you are causing the Russian intervention to fail from its very beginning, and you are making it win only in false military data.

Your steadfastness has become a source of fear for the West and East; because they know that believing in Allah (swt) alone is the reason that makes you heroes, and you are relying on Allah (swt) when it comes to the martyrs from your children, fathers, mothers, and brothers… the destruction of your homes and the ruining of your livelihood, you yearn for His Jannah and you fear His Punishment, but what we are still missing in order for our victory to be achieved and to prevail over our enemy is just to adopt a clear project emanated from the Islamic Aqeedah, the project of the Khilafah Rashidah which the Prophet of Allah (saw) gave glad tidings about, as it will be the one dominating after the oppressive ruling we are living today. Let us walk upon the method of the Prophet of Allah (saw) which Allah (swt) has ordered us to adhere to, and let our power unite with our popular supporters to establish the Khilafah after it has become the public opinion. Hizb ut Tahrir has also presented to the Islamic Ummah the project of the constitution for the Khilafah, deducing it from legitimate Sharia sources, and this project still needs Ansar (supporters) such as the Ansar of the Prophet of Allah (saw) and be united upon it, especially that the Khilafah Rashidah became the demand of most of the people of Ash-Sham, and the demand of the all of the Islamic Ummah.

Allah (swt) says:

﴿قُلْ هَذِهِ سَبِيلِي أَدْعُو إِلَى اللَّهِ عَلَى بَصِيرَةٍ أَنَا وَمَنِ اتَّبَعَنِي وَسُبْحَانَ اللَّهِ وَمَا أَنَا مِنَ الْمُشْرِكِينَ

Say (O Muhammad SAW): "This is my way; I invite unto Allah (i.e. to the Oneness of Allah - Islamic Monotheism) with sure knowledge, I and whosoever follows me (also must invite others to Allah i.e. to the Oneness of Allah - Islamic Monotheism) with sure knowledge. And Glorified and Exalted be Allah (above all that they associate as partners with Him). And I am not of the Mushrikun (polytheists, pagans, idolaters and disbelievers in the Oneness of Allah; those who worship others along with Allah or set up rivals or partners to Allah).

[Yusuf: 108]

Saturday, 18th of Muharram, 1437 AH                             Hizb ut Tahrir

Corresponding to 31/10/2015 CE                                    Wilayah Syria

بسم اللہ الرحمن الرحیم

ویانا کانفرنس کا ہدف: سیکولر جمہوری شراکتی نظام کو شام پر مسلط کرنا اور "دہشت گردی کے خلاف جنگ" کے نام پر خلافت راشدہ کی دعوت دینے والوں کے خلاف جنگ کرنا ہے

30 اکتوبر 2015 بروز جمعہ، آسٹریا کے دار الحکومت ویانا میں شام کی صورت حال کا حل نکالنے کے لیے دوسرا طویل اجلاس ہوا، جس میں  اقوام متحدہ اور یورپی یونین کے علاوہ امریکہ کی قیادت میں 17 ممالک نے شرکت کی۔ اس کانفرنس کے اختتام پر اس کے شرکاء نے اپوزیشن اور حکومت کو ایسی سیاسی پیش رفت کے لیے ایک میز پر اکھٹا کرنے کی دعوت دی تاکہ ایک ایسی قابل بھروسہ اور فرقہ واریت سے پاک مشترکہ حکومت تشکیل دی جا سکے جس سے کوئی باہر نہ ہو اور اس کے بعد نیا دستور وضع کر کے انتخابات کرائے جائیں۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ پورے ملک میں جنگ بندی کے معاہدے کیے جائیں اور اس بات پر متفق ہوئے کہ اگلی ملاقات کے لیے دو ہفتے بعد کی تاریخ مقرر کی جائے۔

اس کانفرنس کا مشاہدہ کرنے والا یہ دیکھ سکتا ہے کہ یہ 2012 میں منعقد ہونے والی جنیوا کانفرنس سے چند انتہائی معمولی معاملات کے سواء قطعی مختلف نہیں ہے۔ دنیا میں سیاسی اور عسکری صورت حال پر نظر رکھنے والا ان دو کانفرسوں کے درمیان ایک واضح فرق کو دیکھ سکتا ہے۔ جنیوا کانفرنس کے وقت امریکہ کو کوئی جلدی نہیں تھی، اسی لیے اس نے اپنے ایجنٹ بشار کو قتل و غارتگری جاری رکھنے اور لوگوں کی تحریک ختم کرنے کے لیے گرین سگنل دیا، اپنے علاقائی ایجنٹوں کے ذریعے بشار کو ہر قسم کی سیاسی اور عسکری مدد فراہم کی، اس کے تمام جرائم سے نظریں پھیر لی۔ لیکن اس کے باوجود وہ اہل شام کو جھکانے اور ان کے ارادوں کو متزلزل کرنے میں کامیاب نہیں ہوا، اس کے ساتھ اس کو قتل وغارت کے تمام وسائل مہیا کر نے والے ایران اور روس بھی فیل ہو گئے۔ حالت یہاں تک پہنچی کہ اوباما کو یہ کہنا پڑا کہ اسے لگتا ہے کہ شامی حکومت اچانک گر جائے گی اورامریکی، یورپی اور روسی فیصلہ سازوں کے اندر یہ خوف پیدا ہو گیا کہ شام کی سرکاری فوج رواں سال کے اختتام سے پہلے ہی اچانک گر سکتی ہے اور اسلام پسند اس خلا کو پر کر سکتے ہیں اور یہ خوف اس لئے بھی تھا کیونکہ اسلام پسند دمشق کے مضافات تک پہنچ چکے تھے۔ اسی لیے امریکہ نے اپنی جانب سے کھینچی گئی سرخ لکیروں کو پار کرنے سے روکنے کے لئے کوشش تیز کر دی تاکہ مسلح اپوزیشن کو دمشق پر قبضہ کرنے سے روکا جا سکے۔ اس کے بعد ہی امریکہ اور اس کے ایجنٹ کو بچانے کے لیے روس نے براہ راست عسکری مداخلت کی، تاکہ ایران کی ناکامی پر بھی پردہ ڈالا جا سکے۔ قابل غور بات یہ ہے کہ شام کے مسلمانوں کے خلاف روس کی یہ ننگی جارحیت داعش کے خلاف جنگ کے نام پر کی گئی، جبکہ اس کے تمام فضائی حملوں کا رخ ان علاقوں پر تھا جن سے حکومتی فرقے کا دفاع ہو اور ان علاقوں کو حکومتی قبضے سے نکلنے سے روکا جائے کہ جس کے بعد دارلحکومت کو بچانا ممکن ہی نہ رہے جیسے درعا، الریف اور دمشق کے مضافات۔

یہاں اس حملے کے سامنے مسلمان جنگجووں کی افسانوی بہادری کا ذکر ضروری ہے جس نے عالمی فریقوں کو ویانا کانفرنس کے جلد انعقاد پر مجبور کیا، حالانکہ فیصلہ روسی وحشیانہ بمباری کو اس وقت تک جاری رکھنے کا کیا گیا تھا جب تک حکومت کے گڑھ سے ملحقہ علاقوں اور حلب کو واپس نہیں لے لیا جاتا۔ مگر ہر جگہ ناکامی کا منہ دیکھنے کی وجہ سے ہی مسلمانوں پر جنگ مسلط کرنے والے یہ ممالک جلد کانفرنس کرنے پر مجبور ہوئے۔ اگرچہ کانفرنس کے اعلامیے میں حکومت کی تشکیل ۔۔۔ دستور وضع کرنے کی بات کی گئی ہے ۔۔۔ مگر راز سے پردہ نہیں اٹھایا گیا تھا۔ تاہم کانفرنس کے سربراہ جان کیری اور اس کے "معاون" لاوروف نے جمعرات 22 اکتوبر 2015 کو اس راز سے پردہ اٹھا دیا۔ کیری نے کہا "بین الاقوامی چار کے گروہ نے شام میں کثیر جہتی سیکولر جمہوری نظام پر اتفاق کرلیا ہے"، اور اس نے " شام میں پر امن حل کو مسترد کرنے والے گروپوں کے خلاف لڑنے پر زور دیا"۔ اس کا یہ مطلب ہے کہ انہوں نے اس بات پر اتفاق کرلیا ہے کہ شام کے مسلمانوں کے لئے نیا نظام جو درحقیقت پرانا ہی ہے یعنی اللہ سبحانہ وتعالیٰ کے دین کے مخالف سیکولر جمہوری ہونا چاہیے اور اس کی مخالفت کرنے والے تمام گروپوں کے خلاف جنگ کی جائے۔ اس وقت ہم یہ بات بھی جانتے ہیں کہ خلافت راشدہ کے قیام کی دعوت اور جدو جہد ہی شام کے مسلمانوں کو اکٹھا کرسکتی ہےاور ہم یہ بھی جانتے ہیں کہ جنگ کا مقصد اس ربانی منصوبے کو ناکام بنا نے کی کوشش کرنا ہے:

﴿يُرِيدُونَ لِيُطْفِئُوا نُورَ اللَّهِ بِأَفْوَاهِهِمْ وَاللَّهُ مُتِمُّ نُورِهِ وَلَوْ كَرِهَ الْكَافِرُونَ

"وہ اپنے پھونکوں سے اللہ کے نور کو بھجانا چاہتے ہیں مگر اللہ  اپنے نور کو مکمل کر کے رہے گا چاہے یہ کافروں کو ناگوار ہو"

(الصفت:08)۔

اے اسلام کے مسکن شام کے مسلمانو! تم اپنی آنکھوں سے دیکھ رہے ہو کہ کس طرح کافر مغرب تمہارے مستقبل کا فیصلہ کرنے اور تمہارے لیے نظام حکومت کا تعین کرنے کے لیے ہاتھ پاوں مار رہا ہے؛ تو وہ اس بات کا تعین کرتا ہے کہ وہ نظام سیکولر جمہوریت ہونی چاہیے ۔۔۔ تم یہ بھی دیکھ رہے ہو کہ وہ اپنے ایجنٹ بشار کی کس طرح مدد اور تمہارے خلاف تمام تر قتل و غارت کے باوجود اس کی زندگی کے تمام اسباب کے ذریعے معاونت کر رہا ہے، اور بشار یہ قتل و غارت کبھی نہ کرسکتا اگر اسے اپنے آقاوں کی جانب سے مثبت اشارہ نہ ملتا ۔۔۔ اب تم ہی دیکھ رہے ہوکہ کس طرح مسلمانوں کے حکمران جو تمہاری مدد کا دعوی کرتے تھے اپنے مفادات کے لیے تمہارے خون اور قربانیوں کی قیمت پر اپنے آقا کے قدم سے قدم ملا کر چل رہے ہیں ۔۔۔ اور تم خود یہ دیکھ رہے ہوکہ کس طرح کافر مغرب ہمیں اپنے ہدف کے بارے میں دھوکہ دینے کی کوشش کر رہا ہے جو کہ سیکولر جمہوری نظام کو مسلط کرنا ہے اور وہ ایسا ظاہر کرنے کی پوری کوشش کر رہا ہے کہ جیسے اصل مسئلہ اس کے ایجنٹ بشار کے انجام اور اس کے مستقبل  کا فیصلہ کرنا ہے اور اسی کو مذاکرات کا محور اور حل کا اساس بنا دیا ہے۔۔۔

اے اسلام کے مسکن شام کے مسلمانو! کیا یہ عقل کی بات ہے کہ امریکہ اور روس، جو کہ شیطان ِ مردود کے دو سینگ ہیں، تمہاری سلامتی اور امن کے نگہبان بن جائیں؟ بھیڑیا کب سے بھیڑ بکریوں کا چرواہا بن گیا ہے؟! یقیناً حل تمہارے دشمن کے ہاتھ میں نہیں تمہارے ہاتھ میں ہے، بین الاقوامی قانون میں نہیں تمہارے دین میں ہے، صرف اللہ کی طرف سے ہے اس کے دشمنوں کی طرف سے نہیں ۔۔۔ خبردار اس کہاوت سے دھوکہ مت کھانا کہ تم کمزور ہو، بلکہ تم اللہ کی مدد سے طاقتور ہو، یہ بات دوست سے پہلے دشمن جانتا ہے کہ تم ہی نے تو اس جابر حکومت کے ظلم و ستم کے سامنے ڈٹ کر اس کو ناکام بنا دیا ہے، کینہ ور ایرانی مداخلت کے سامنے سینہ تان کر اس کو بے بس کر دیا ہے، اور وہ تمہاری افسانوی ثابت قدمی کے سامنے ایک کلومیٹر بھی آگے نہیں بڑھ سکا، اور اب تم نے روسی مداخلت کو ابتدا ہی سے ناکام بنا دیا ہے، اورتم نے اس کا یہ حال کر دیا ہے کہ وہ کامیابی کے لیے صرف جھوٹے عسکری اعداد و شمار پر انحصار کرنے پر مجبور ہو گیا ہے۔

تمہاری یہ ثابت قدمی ہی مشرق و مغرب کے لیے خوف کا سرچشمہ بن گئی ہے، کیونکہ وہ جانتے ہیں کہ اللہ وحدہ لاشریک پر تمہارے ایمان ہی نے تمہیں بہادر بنا دیا ہے اور تم اپنی اولاد، اپنے ماں باپ اور اپنے بھائیوں کی شہادت کو باعث اجر سمجھتے ہو ۔۔۔ تم اپنے گھروں کی بربادی اور اپنی معیشت کی تباہی پر اللہ سے اجر کی امید کرتے ہو، تم اس کی جنت کے طلبگار ہو اور اس کے عذاب سے ڈرتے ہو؛ مگر دشمن پر غلبہ حاصل کرنے کے لیے جس چیز کی کمی ابھی تک ہے وہ اسلام کے عقیدے سے نکلنے والے واضح منصوبے کو اختیار کرنا ہے، یہ منصوبہ اس خلافت راشدہ کا منصوبہ ہے جس کی بشارت رسول اللہ نے دی ہے کہ وہ اس جابرانہ حکمرانی کے بعد ہے جس میں آج ہم رہ رہے ہیں۔ ہمیں رسول اللہ کے طریقے پر ہی چلنا چاہیے جس پر چلنا ہم پر فرض کیا گیا ہے، ہماری قوت اس عوام تائید کے ساتھ یکجا ہونی چاہیے جو کہ اب رائے عامہ بن چکی ہے۔ اس کے ساتھ حزب التحریر نے امت مسلمہ کو ریاست خلافت کا مسودہ دستور پیش کیا ہے جو کہ مکمل طور پر معتبر شرعی مصادر سے اخذ کیا گیا ہے، اور اس منصوبے کو رسول اللہ کے انصار کی طرح انصار کی ضرورت ہے جس پر یہ سب متحد ہوں، خاص کر جبکہ خلافت راشدہ  اہل شام کے دل کی آواز بن چکی ہے، بلکہ پوری امت مسلمہ کے دل کی آواز بن چکی ہے۔ اللہ  سبحانہ و تعالیٰ فرماتا ہے:

﴿قُلْ هَذِهِ سَبِيلِي أَدْعُو إِلَى اللَّهِ عَلَى بَصِيرَةٍ أَنَا وَمَنِ اتَّبَعَنِي وَسُبْحَانَ اللَّهِ وَمَا أَنَا مِنَ الْمُشْرِكِينَ

"کہ دیجئے یہی میرا راستہ ہے کہ میں بصیرت کے ساتھ اللہ کی طرف دعوت دیتا ہوں، میں بھی اور وہ سب لوگ بھی جو میری پیروی کرتے ہیں اور اللہ پاک ہے اور میں مشرکین میں سے نہیں"

(یوسف:108)۔

ہفتہ 18 محرم 1437 ہجر                                                                  حزب التحریر

31 اکتوبر2015                                                                            ولایہ شام


Today 2592 visitors (8403 hits) Alhamdulillah
=> Do you also want a homepage for free? Then click here! <=