Media Office Hizb ut-Tahrir Pakistan

Title of your new page

بسم اللہ الرحمن الرحیم

America and Russia in their Savage Attacks on the Syrian Lands are Two Sides of the Same Coin of an American Creation!

The Syrian forces supported by Russian air power engaged yesterday, Saturday 10/10/2015, in fierce battles with the armed opposition in the north-western region of Syria… “This is considered to represent the first combined land and air attack on a wide scale since Moscow began its military campaign in Syria on the 30th of September… The fighting is focused in the two provinces of Hama and Idlib which in the north of the country where a collection of armed resistance are active in addition to Jubhat An-Nusrah” (Al-Watan, 10/10/2015)…. “In this context it was mentioned that the Syrian government forces supported by Russian air cover began a land campaign against opposition strongholds in the strategic Sahl Al-Ghab close to Hama” (BBC Arabic, 08/10/2015)… And prior to that Russian battleships in the Caspian had “fired 26 cruise missiles upon the Syrian territories” (BBC Arabic, 07/10/2015). Before this Russia had begun air strikes upon Syrian territories on 30/09/2015 after the members of the Russian parliament agreed unanimously upon the decision to allow that… “And the Syrian presidency confirmed that the sending of Russian air forces to Syria had occurred as a result of the Syrian state’s request made in a message that President Assad had sent to President Putin, according to what the Syrian Arab news agency reported.”  (BBC Arabic, 30/09/2015)

The Russian attacks were preceded by American attacks upon Syria in the name of the American (formed) alliance on 23/09/2015. “American officials said that fighter planes, artillery projectiles and missiles were used in continuous attacks… Activists said that five assaults were carried out upon the Military Tabaqah (Class) Airport, three airstrikes were carried out upon the town of Tal Abyad and there were three assaults upon Al-Liwaa 93 and its outskirts in the provincial town of Ain Isa… The US President, Barack Obama, had delegated his air force to carry out air strikes upon Syria and that was according to the BBC correspondent in Washington, Paul Blake… And the Syrian television carried the statement of the government that Washington had informed them in advance that it would target Raqqah.” (Sudan Today, 23/09/2015)

The two savage attacks, the American and Russian, were undertaken under the pretext of fighting terrorism, whilst both America and Russia forgot or rather they have chosen to forget, that if indeed there is terrorism, then it is to be found in the crimes of the tyrant with his missiles and fire bombs in addition to the exploding barrels and the torturing to death that occurs in the spy cellars and their underground chambers… However the truth is not what they are pretending and that is because they are not breaching the Syrian territories with their aggression from the air, land and even the sea for the sake of fighting terrorism which they themselves are its creators. Rather these savage attacks are only for the purpose of protecting the tyrant in Damascus and keeping him alive as the current agent until America succeeds in its production of the next agent. It therefore represents a means of applying pressure as an introduction to political talks between the regime and the opposition after it has been groomed as a new alternative for the tyrannical regime of Bashar so that it can then take its place in serving the American interests. This is all clearly apparent in the statements they have made: “The Russian Foreign Ministry confirmed that all of the steps that Moscow is taking on the Syria track are designed to contribute to a political settlement within the country” (Russia Today, 08/10/2015). America had prepared for that as it had begun to announce that which it had been hiding in respect to not wanting Bashar’s departure immediately but rather after negotiations. This is to guarantee the transfer of the previous agents with the later agents in a consecutive process that guarantees its interests. Kerry said, “During the last year and a half we have been saying that Assad must go however what is the time period of this and how will it occur… This decision must be taken within the scope of the Geneva process and negotiations” and added, “It is not essential for it to be from the first day or the first month…” (Al-Arabiyah 5th Dhul Hijjah 1436 AH, 19/09/2015).

America has found itself in a serious predicament in ash-Sham. It had thought that changing faces would be very easy in Syria just as it had accomplished in the land of Al-Kinanah (Egypt). It infiltrated the revolution in Al-Kinanah and silenced them through those whom they labelled as representing moderate Islam. Then when those people failed, they removed them just as easily as they brought them in; and then they were able to bring back the old guard in a more heinous and terrible form emboldened in falsehood, to the point where this ‘new’ old guard had the gall to even interfere in the area of religious speech in the name of modernisation!

This then is what America had thought… However the omen turned against them so its National Syrian Coalition fell and collapsed. It had prepared it as an alternative however it was unable to find any support base within Syria that spoke well of it. It therefore remained exiled and cast outside of Syria where it sings praises of America so that it will bring them into Syria so that they rule. However how was it possible for it to do this whilst the people (in Syria) were chanting: “It (the revolution) is for Allah, it is for Allah” and they were crying out loud for the separation of the Deen from life?! أَلَا سَاءَ مَا يَحْكُمُونَ “Certainly, evil is what they decide” (An-Nahl: 59)

It then rethought and re-evaluated and feared that the regime would fall before the coalition would reach the stage of weaning! Therefore it supported the regime through Iran’s mercenaries and its party in Lebanon and so they supported it for a while…. This was until the ground was shaken from underneath their feet and no more than a tenth or some of a tenth of the land of Syria remained under its authority or some of its authority… Then America moved to the style of ‘truces’ lasting for six months in order to give the regime an opportunity to regain its breath and despite that the impendent danger for the regime still remained… This was a disaster for America as it had presented itself as being with the revolutionaries and as such it would be difficult to fight against them openly. They were bringing serious harm onto the regime whilst the American replacement had not yet matured. This then is where the dirty hellish ploy of Russia undertaking its task came to play. Its role is to support the regime openly and to oppose the revolutionaries openly whilst being at war with them is justified in their view. This is whilst the regime was prepared to summon Russia through American instruction and this is exactly what came to pass… As such Russia agreed to play this evil dirty role in Syria in service to America! This is whilst it knows without any doubt that the family of Assad from the father to the son are American agents and that America would monopolise the influence in Syria to itself alone if it was capable to upon the heedlessness of the Ummah… At that time influence for Russia would not have been consolidated and indeed it could be removed by the stroke of the pen if America desired that. This is because if Bashar’s support was to become strong America would throw them out of Syria just as Sadat did to them in Egypt! Putin believes that through the service he is providing to America in Syria the problems of Russia’s southern border will be quelled in respect to Ukraine however this is one issue and that is another altogether different one! Indeed Russia’s sliding into a war with the Muslims will afflict Russia with calamities upon calamities that will make the problems of Ukraine pale in insignificance compared to what the anger of the Muslims will bring and indeed tomorrow is close for the one looking forward to it.

O Muslims:

The Russian air assaults by air, sea and even by land through their bases and consultants is being undertaken in coordination with America. Indeed they are at war on their behalf and by their command even bearing witness to by one of their people, “The British Guardian Newspaper reported a statement from the Senator John McCain of the US Senate in which he said that the United States was involved alongside Russia in the war in Syria by way of delegation…” (Al-Jazeera 05/10/2015). In addition it is not farfetched to see that America’s decision to remove its patriot missile system, which had been on the Turkish southern border, to have been for the purpose of enabling Russia to undertake its air attacks without being challenged by the patriot missiles. “After two years since their deployment the missiles which were deployed in the summer of 2013 will be withdrawn during this current month in accordance to what has been decided and in spite of the developments in Syria. (Source: AFP)” (Russia Today 02/10/2015). In addition, if there needs to be another matter, then every sane person comprehends that if the planes of the two states are circling in the same sky, this means that it is happening either through coordination between them as two friends or it means that there is a war taking place between two enemies where they are clashing with one another and pelting each other with missiles like the reality of any other war. However they are two friends who are coordinating the skies between them in order to accomplish one single objective and not two different ones. Statements that have been made by the two sides confirm such coordination. The Russian Foreign Ministry said in a statement it published upon its internet site on Thursday 08/10/2015, “In line with the authorisation of the Russian President Putin and his American counterpart President Barack Obama at the end of their meeting on the sidelines of the UN General Conference, the two respective foreign ministers sought to finalise discussing the ways of settling the situation in Syria, which from one angle includes the necessity to avoid accidents happening in the sky above Syria in addition to strengthening the political settlement in Syria in accordance to the Geneva declaration on 30/06/2012”. The statement added that the two ministers: “Also sought to present steps for implementing the Minsk agreements in respect to Ukraine that was signed on the 12th of February…” (Al-Hayat: Electronic copy, Wednesday 7 October 2015).

This is not all but rather America silenced Turkey in respect to confronting these Russian attacks which are upon its borders and even penetrating its airspace. Despite that the weapons were silenced and even the tongues were silenced. Indeed it uttered out of shame to save face by saying that it would never be silent if it happened again and then it did happen again and again whilst they remained silent. This is because America wants Russia to undertake its attacks without its aircrafts being challenged by anyone. Indeed this military silence in respect to the Russian planes breaching its air space was not a concealed matter but was rather open… “Turkey mentioned that the Russian fighter planes violated its air space close to the Syrian border last Saturday and Sunday… And Turkey said yesterday that a ‘Mig-29’ aircraft whose identity was unknown harassed eight Turkish F-16 aircraft… And the Turkish military said that the plane readied its radar to lock on to its target in preparedness to fire a missile at the Turkish planes…” (Al-Hayat: Electronic copy, Wednesday 7 October 2015). Despite that no effective steps were undertaken but rather all that happened was a summoning of the ambassador and a warning of losing the friendship! “From his side the Turkish president warned Russia saying that it would lose a lot if it destroyed its friendship with Ankara and he said that Turkey’s patience would not remain forever with the violation of Russian war planes in its air space. Turkey summoned the Russian ambassador in Ankara for the second time in two days to ‘strongly protest’ after Russian fighters violated Turkey’s airspace again near to the Syrian border, as was announced by an official in the foreign ministry…” (Ad-Dustoor, Wednesday 07/10/2015).

O Muslims:

It is very painful for the Muslim lands to become a ground for the enemies’ aircraft, missiles and warships. It is not only that but indeed it is the very first time in the history of the Islamic Ummah for the enemy to attack it and then for that to be applauded, praised and called for. Indeed this is regarded as being treacherous to Allah, His Messenger and the believers. They are meant to fight the enemy so that they are defeated and victory is achieved and not to commend their aggression against the Muslims or call them so that they can vie with their planes over the land of Islam! But today we hear and witness those who praise the American coalition in its acts of aggression and underneath they even complain if their daily strikes decrease… On the other side, we hear and witness those who praise the Russian aggression whilst considering their air attacks as splendid heroic acts! Verily it is but one of the greatest calamities. Even the agents a while ago would be ashamed to declare their agency to the colonial disbelievers. They would rather serve them without announcing it let alone declare their support towards their aggression against the Muslim lands… And today America is forming an alliance from a number of states to aggress against the Muslim lands under the pretext and argument of fighting terrorism. This is whilst Russia is forming an alliance with Iran which Baghdad and Damascus are subservient to also using the argument of fighting terrorism. This is at a time when they represent the very core of terrorism and its source whilst acts of savagery follow them whether they turn. They have agreed to make war against Islam and its people and this is the habit of the enemies of Islam. This is because they have differed amongst themselves in issues whereas in their opposition to Islam they are united. هُمُ الْعَدُوُّ فَاحْذَرْهُمْ قَاتَلَهُمُ اللَّهُ أَنَّى يُؤْفَكُون “They are the enemy so beware of them. May Allah destroy them; how they are deluded” (Al-Munafiqun: 3)

O Muslims:

This situation that we are currently in has a known treatment and not unknown and its success by the permission of Allah is definite and not a matter of doubt. It has been uttered by the cave of Hira, the Hijrah of the Messenger , the rightly guided Khilafah, the shores of ‘Uqbah, Tariq of Andulus, the word of Haroon, the response of Mu’tasim, the Hitteen of Salaah ud-Deen the liberator of Al-Aqsa and vanquisher of the crusaders, Ain Jaloot of Qutz and Berbas the destroyed of the Tartar and how good is the Ameer the Fateh of Constantinople… It is settled by France’s seeking help from Al-Qanooni, the Khalifah of the Muslims, to save their king from his captivity and it is confirmed by America’s submission to the tax of the Islamic State for safe passage in the Mediterranean… And the statement of Abdul Hameed about Palestine and the Jews warned about losing it when he said, “If the Khilafah is destroyed then they will take Palestine without a cost…” This is what happened so they took Palestine and our lands became an open house for every sinful aggression… This is the treatment and solution; that we return to the fortified pillar, to the rightly guided Khilafah, because within it lies the honour of the life of this world and the Hereafter…This is the solution…. Imprinted in the Book of Allah and cannot be erased and mentioned in the Sunnah of the Messenger of Allah and it will not be forgotten… Engraved in the pages of history with ink of light by which every person can be reminded, إِنَّ فِي ذَلِكَ لَذِكْرَى لِمَنْ كَانَ لَهُ قَلْبٌ أَوْ أَلْقَى السَّمْعَ وَهُوَ شَهِيدٌ “Indeed in that is a reminder for whoever has a heart or who listens whilst he is heedful” (Qaaf: 37)

Hizb ut-Tahrir                                                              27th Dhul Hijjah 1436 AH

                                                                                                         11/10/2015 CE

بسم اللہ الرحمن الرحیم

امریکہ اور روس شام کی سرزمین پر اپنے وحشیانہ حملوں میں ایک ہی سکّے کے دو رخ ہیں جس سکّے کو بنانے والا امریکہ ہے!

ہفتہ 10 اکتوبر 2015  کو شام کے شمال مغربی میںروسی فضائیہ کی مدد سےشامی فورسز کا مسلح اپوزیشن کے ساتھ خونریز تصادم ہوا۔۔۔ "ماسکو کی جانب سے 30 ستمبر سے شام میں عسکری حملہ شروع کرنے کے بعد اِس کو پہلا وسیع پیمانے پر بیک وقت فضائی اور زمینی حملہ سمجھا جا رہا ہے۔۔۔ لڑائی کا مرکز ملک کے شمالی علاقوں میں حماۃ اور ادلب کے صوبے ہیں، جہاں کئی مسلح اپوزیشن گروپ سرگرم ہیں، جس میں جبهة النصرةبھی شامل ہے" (الوطن10 اکتوبر2015)۔۔۔" اسی دوران شامی حکومتی فورسز نے، جن کو روسی فضائیہ کی مدد حاصل ہے، حماۃ کے قریب سٹریٹیجک اہمیت کے حامل سہل الغاب میں اپوزیشن کے ٹھکانوں کے خلاف زمینی حملہ کیا ہے" (بی بی سی عربی 8 اکتوبر 2015 )۔۔۔ اس سے قبل بحیرہ کیسپئین (Caspian Sea) میں موجود روسی بحری بیڑے نے "شامی سرزمین پر 26 کروز میزائل فائر کیے" (بی بی سی عربی 7 اکتوبر 2015)۔ اس سے قبل 30 ستمبر 2015 کو روس شامی سرزمین پر فضائی حملے شروع کر چکا تھا جب روسی پارلیمنٹ کی جانب سے ایک متفقہ فیصلے میں اس کی اجازت دے دی گئی تھی۔۔۔"اور جمہوریہ شام کی صدارت نے تصدیق کی کہ شامی ریاست کے مطالبے پر ہی روس کی جانب سے روسی فضائی قوت کو شام بھیجا گیا اور اس کے لیے صدر بشار الاسد نے صدر پوٹین کو پیغام بھیجا تھا، جیسا کہ شامی عرب نیوز ایجنسی نے خبر دی ہے" (بی بی سی عربی 30 ستمبر 2015)۔

روسی حملوں سے پہلے امریکہ بھی امریکی اتحاد کے نام پر شام پر 23 ستمبر 2015 کو حملے کر چکا ہے:" امریکی عہدیداروں نے کہا کہ اِن پے درپے حملوں میں لڑاکا طیارے، راکٹ لانچر اور میزائل استعمال کیے گئے۔۔۔ اس حوالے سے سرگرم لوگوں نے کہا ہے کہ الطبقۃ کے فوجی فضائی اڈے پر پانچ حملے کیے گئے، تین حملے تل ابیض شہر پر کیے گئے اور تین حملےعین عیسیٰ قصبےکے اطراف اور اللواء 93 پر کیے گئے۔۔۔ واشنگٹن میں بی بی سی کے نمائندے پال بلیک نے خبر دی کہ امریکی صدر باراک اوباما نے اپنی فوج کو شام میں فضائی حملے کرنے کا اختیار دے دیا ہے۔۔۔ اورشامی ٹی وی نے حکومت کا بیان نشر کیا کہ واشنگٹن نے اس کو پہلے ہی اطلاع دی تھی کہ وہ الرقۃ کو نشانہ بنائے گا" ( السودان الیوم 23 ستمبر 2015)۔

امریکہ اور روس کے یہ وحشیانہ حملے نام نہاد دہشت گردی کے خلاف جنگ کے بہانے کیے گئے۔ امریکہ اور روس یہ بھول گئے بلکہ انہوں نے جانتے بوجھتے ہوئے بھول جانا بہتر سمجھا کہ اگر کوئی دہشت گردی ہو رہی ہے تو وہ سرکش بشارکی جانب سے ہے جو اپنے ہی لوگوں پر میزائیلوں، آگ لگانے والے بموں اور بیریل بموں کی بارش کر رہا ہے اور اپنے عقوبت خانوں اور تاریک زندانوں میں قید لوگوں پر اس وقت تک  تشدد کرتا ہے کہ انہیں موت آ جائے۔۔۔ حقیقت وہ نہیں جس کا وہ دعویٰ کر رہے ہیں۔ انہوں نے بحری، بری اور فضائی حملوں کے ذریعے شام کی سرزمین پر یلغار دہشت گردی کے خلاف جنگ لڑنے کے لیے نہیں کی ہے کیونکہ دہشت گردی کے خالق تو وہ خود ہیں۔ یہ حملے صرف دمشق کے سرکش بشار کو بچانے اور اس وقت تک اس کو زندہ رکھنے کے لیے کیے جا رہے ہیں جب تک امریکہ موجودہ ایجنٹ کی طرح اگلا ایجنٹ تیار کرنے میں کامیاب نہیں ہو جاتا۔ یہ سب کچھ سرکش بشار کی حکومت کا متبادل تیار کرنے اور حکومت اور حزب اختلاف کے درمیان سیاسی بات چیت شروع کرنے کے لئے دباو ڈالنے کے لیے کیا جا رہا ہے، تاکہ یہ حزب اختلاف امریکی مفادات کی خدمت کرنے کے لیے بشار کی متبادل اور اس کی جانشین بنے۔ یہ سب کچھ ان کے بیانات سے واضح ہے: "روسی وزیر خارجہ نے اس بات کی تصدیق کی کہ ماسکو شام کے حوالے سے جو بھی اقدامات اٹھا رہا ہے اس کا ہدف ملک میں سیاسیحل میں اپنا حصہ ڈالنا ہے" (رشیا ٹو ڈے 8 اکتوبر 2015)۔ امریکہ نے بھی اسی کے لیے راہ ہموار کی اور جس بات کو اس نے چھپا رکھا تھا اس کو ظاہر کر دیا کہ وہ  بشار کو فی الحال فوراً فارغ کرنا نہیں چاہتا بلکہ ایسا مذاکرات کے بعد کیا جائے گا۔ ایسا کرنے کا مقصد یہ ہے کہ پچھلے ایجنٹ کو ہٹا کر نئے لائے جانے والے ایجنٹ کے درمیانی وقفے کے دوران ایک تسلسل قائم رہے اور اس کے مفادات کے تحفظ کا سلسلہ بھی نہ ٹوٹے۔ امریکی سیکریٹری خارجہ جان کیری نے کہا کہ" گزشتہ ڈیڑھ سال سے ہم کہتے آئے ہیں کہ اسد کو تو جانا پڑے گا لیکن کب اور کس طریقے سے۔۔۔ یہ فیصلہ جنیوا فریم ورک کے دائرے کے تحت اور مذاکرات کے ذریعےسے ہونا چاہیے"۔ اس نے مزید کہا کہ "یہ ضروری نہیں کہ یہ پہلے ہی دن یا پہلے ہی مہینے سے ہو۔۔۔" (العربیۃ ہفتہ 5 ذی الحجۃ 1436 ہجری- 19 ستمبر 2015)۔

امریکہ نے خود کو شام میں ایکسخت مشکل میں پایا ہے۔ وہ یہ سمجھتا تھا کہ شام میں بھی چہروں کی تبدیلی ویسے ہی آسان ہوگی جیسا کہ اس نے کنانہ کی سرزمین (مصر) میں کیا۔ اس نے کنانہ کی تحریک کو ہائی جیککیا اور انقلابیوں کو ان لوگوں کے ذریعے خاموش کر دیا جنہیں وہ نام نہاد معتدل اسلام کا نمائندہ کہتا تھا۔ جب یہ لوگ ناکام ہو گئے تو ان کو اتنی ہی آسانی سے نکال دیا جس آسانی سے امریکہ انہیں لایا تھا۔ پھر امریکہ اُسی پرانے چوکیدار کو زیادہ ڈراؤنی اور خوفناک شکل میں واپس لے آیا جو پوری طرح سے گناہ میں ڈوبا ہوا ہے اور اس حد تک شیطان کی راہ پر چلنے کے لئے تیار اور اس قدر بے شرم ہے کہ اس نےجدیدیت کے نام پر دین کی بھی نئی تشریح کرنے کی جسارت کر دی ہے!

امریکہ نے یہی سوچا تھا۔۔۔ مگر معاملہ اس کے اُلٹ ہو گیا اور اس کی کھڑی کی ہوئی نیشنل سیرین کونسلز میں بوس ہوگئی۔ امریکہ نے اس کو ایک متبادل کے طور پر تیار کیا تھا لیکن اسے شام میں کہیں بھی کوئی حمایت میسر نہ آسکی۔ لہٰذا امریکہ کی کھڑی کردہ یہ متبادل قیادت جلا وطن اور شام سے باہر ہی رہی جہاں سے بیٹھ کر وہ امریکہ کی تعریفیں کرتی رہی تاکہ امریکہ انہیں شام لے جا کر اقتدار کی کرسی پر بیٹھا دے۔ مگر یہ کہاں ممکن تھا جبکہ عوام یہ نعرہ لگا رہے تھے کہ" یہ (انقلاب) اللہ کے لیے ہے یہ اللہ کے لیے ہے" جبکہ امریکہ کےحواری دین کو زندگی سے الگ کرنے کی صدا ئیں لگا رہے تھے:

)أَلَا سَاءَ مَا يَحْكُمُونَ("

کیا ہی برے فیصلے یہ کرتے ہیں" (النحل:59)۔

اس کے بعد امریکہ نے دوبارہ خوب سوچ بچار کی، حالات کا دوبارہ تجزیہ کیا اوراسے یہ خوف ہو گیا کہ اس کونسل کے اپنے پیروں پر کھڑا ہونے سے قبل ہی حکومت گر جائے گی! اس لیے امریکہ نے ایران کے اجرتی قاتلوں اور لبنان میں ایرانی تنظیم کے ذریعے حکومت کو سہارا دینا شروع کیا، انہوں نے بشار کو کچھ عرصے کے لئے سہارا فراہم کیا۔۔۔ یہاں تک کہ اس کے پیروں تلے سے زمین کھسکنے لگی اور شام کی زمین میں سے دسواں حصہ یا اس دسویں کا بھی کچھ حصہ اس کے ماتحت اور تسلط میں رہ گیا یا اس پر اس کا کسی درجے کنٹرول باقی بچا۔۔۔ تب امریکہ نے "جنگ بندی" کے اسلوب کو اختیار کیا جوکہ چھ مہینے تک چلا تاکہ حکومت کو اپنی سانسیں بحال کرنے کی مہلت مل جائے، لیکن اس کے باوجود حکومت خطرات سے دو چار تھی۔۔۔ یہ صورتحال امریکہ کے لئے تباہ کن تھی کیونکہ اب تک امریکہ یہ ظاہر کرتا آیا تھا کہ وہ انقلابیوں کے ساتھ ہے اور اب انہی کے خلاف اعلانیہ لڑنا مشکل تھا۔ انقلابیوں نے حکومت کو اس قدر کمزور کر دیا تھا کہ وہ کسی بھی وقت گرسکتی تھی لیکن امریکہ کا متبادل ابھی تک تیار نہیں تھا۔ اور یہیں سے روسی مداخلت کی صورت میں آگ اور خون کا گندا کھیل شروع کیا گیا ۔روس کا کام کھل کر حکومت کی مدد کرنا اور کھل کر انقلابیوں کے خلاف لڑنا ہے کیونکہ اس کے نزدیک ان کے خلاف لڑنے کا اس کے پاس جواز موجود ہے۔ شامی حکومت بھی امریکہ کے حکم پر روس کو بلانے پر تیار تھی اور ایسا ہی ہوا۔۔۔ روس امریکہ کی مرضی سے اور اس کے مفاد میںشام میں یہ شرانگیز اور گندا کر دار ادا کرنے پر تیار ہوا! حالانکہ روس بلا شبہ یہ جانتا ہے کہ آلِ اسد، باپ سے لے کر بیٹے تک، امریکی ایجنٹ ہیں اور یہ بھی کہ اگر امریکہ کے لئے ممکن ہو تو امت کی غفلت سے فائدہ اٹھا کر وہ شام پر اکیلے اپنا ہی اثر و نفوذ برقرار رکھے گا۔۔۔ اُس صورت میں وہ یہاں روسی اثر و نفوذ کو قدم جمانے نہیں دے گا، بلکہ جب وہ (امریکہ) چاہے گا بیک جنبشِ قلم روس کو فارغ کر دے گا۔ وہ بشار جس کو بچانے کے لیے روس لڑ رہا ہے اگر اس کے قدم دوبارہ مضبوط ہو جاتے ہیں تو وہ شام سے روس کو ایسے ہی بھگا دے گا جیسا کہ سادات نے مصر سے ان کو دھتکار دیا تھا! لیکن پوٹین یہ سوچ رہا ہےکہ شام میں امریکہ کی خدمت کی بدولت روس کی جنوبی سرحدیں یوکرائن کے حوالے سے پرسکون ہوجائیں گی، حالانکہ یہ دونوں الگ الگ معاملات ہیں! روس کا مسلمانوں کے خلاف جنگ میں ملوث ہونا روس کو ایک کے بعد دوسری مصیبت میں مبتلا کرتا چلا جائے گااور اس کے مقابلے میں یوکرائن کی مصیبت کم لگنے لگے گی کیونکہ اس کے مقابلے میں مسلمانوں کا غصہ اس کے لئے زیادہ بڑے مصائب کا باعث بنے گا اور جو مستقبل پر نظر رکھتا ہے اس کے لئے آنے والا کل بہت قریب ہے۔

اے مسلمانو! بے شک فضاء سے روسی طیاروں کی بمباری، سمندر سے حملے، حتیٰ کہ شام کے اڈوں سے زمینی  حملے اور روسی  ماہرین کی آمد سب کچھ امریکہ کے ساتھ سازباز کا نتیجہ ہے۔ یقیناً روس ہمارے خلاف امریکہ کی حمایت میں اور اس کے حکم پر حملے کر رہا ہے اور انہی کے لوگوں میں سے ایک نے اس کی گواہی بھی دی ہے۔ "برطانوی اخبار گارڈین نےامریکی سنیٹر جان مکین سے اس کا بیان نقل کیا ہے جس میں اس نے کہا کہ امریکہ شام کی جنگ میں روس کے ساتھ اپنے نمائندوں کے ذریعے  شامل ہے" (الجزیرہ 5 اکتوبر 2015)۔ اس کے علاوہ یہ بات بھی بعید از امکان نہیں کہ امریکہ کی جانب سے ترکی کی جنوبی سرحد پر نصب پیٹریاٹ میزائل نظام کو ہٹانے کا فیصلہ اس لیے کیا گیا ہو تاکہ روس ان میزائلوں سے بے خوف ہو کر اطمینان سے فضائی حملے کرسکے۔ "یہ میزائل، جنہیں 2013 کی گرمیوں میں نصب کیا گیا تھا، اپنی تنصیب کے صرف دو سالوں کے بعد ہی، اسی مہینے، ان کے درمیان ہونے والے فیصلے کے مطابق ہٹا لئے جائیں گے باوجود اس کے کہ شام میں صورتحال تیزی سے بدل رہی ہے۔ (مصدر اے ایف پی)" (رشیا ٹو ڈے 2 اکتوبر 2015)۔ مزید برآں، اگر مزید کسی دلیل کی ضرورت ہو، تو ہر عقل رکھنے والا شخص یہ جانتا ہے کہ اگر دو ملکوں کے جنگی ہوائی جہاز ایک ہی ملک کی فضاؤں میں اکٹھے اُڑ رہے ہوں تو یہ یا تو ان کے درمیان دوستی اور افہام و تفہیم سے ہی ممکن ہے یا پھر ان دونوں کے درمیان جنگ ہو رہی ہو اور وہ ایک دوسرے کے دشمن ہوں۔ اس صورت میں ان کے درمیان تصادم ہوگا اور وہ ایک دوسرے پر میزائل فائر کریں گے جیسا کہ کسی بھی جنگ میں ہوتا ہے۔ لیکن درحقیقت یہ دونوں دوست ہیں اور ان کے درمیان ایک ہی ہدف کے لیے فضاء میں اڑنے کے بارے میں سودا بازی ہو چکی ہے۔ دونوں اطراف کے بیانات یہ ثابت کرتے ہیں کہ یہ سودا بازی اور ساز باز کر چکے ہیں۔ روسی وزارت خارجہ نے اپنے ایک بیان میں، جس کو اس نے جمعرات 8 اکتوبر 2015 کو اپنی ویب سائٹ پر جاری کیا کہا کہ "اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے اجلاس کے اختتام کے موقع پر صدر پوٹین اور ان کے امریکی ہم منصب اوباما کے درمیان ہونے والی ملاقات میں دونوں صدور کی طرف سے اختیار ملنے پر دونوں وزرائے خارجہ نے شامکی صورتحال کو ٹھیک کرنے کے لئے مختلف طریقوں پر گفت و شنید کو مکمل کرنے کی کوشش کی، جس میں شام کی فضاء میں کسی بھی تصادم سے اجتناب کی ضرورت بھی شامل ہے، اسی طرح شام میں 30 جون 2012 کو جنیوا 1 اعلامیہ کے مطابق سیاسی حل کے عمل کو مضبوط کرنا بھی شامل تھا"۔ بیان میں مزید کہا گیا کہ" اس کے علاوہ یوکرائن کے حوالے سے مِنسک معاہدے پر عمل درآمد کرنے کے لئے اٹھائے جانے والے اقدامات پر غور کیا گیا جس پر 12 فروری کو دستخط کیے گئے تھے۔۔۔" (الحیاۃ : بدھ 7 اکتوبر 2015)۔

صرف یہی نہیں بلکہ امریکہ نے ترکی کو بھی ان روسی حملوں کے بارے میں خاموش کرا دیا حالانکہ یہ اس کی سرحد پر ہو رہے ہیں اور اس کی فضائی حدود کی خلاف ورزی بھی ہوئی لیکن اس کے باوجود ان کا اسلحہ خاموش کروا دیا گیا اور ان کی زبانیں بھی خاموش کروا دی گئیں۔ ذلت کے مارے، اپنی ساکھ بچانے کے لئے، اگر وہ بولے بھی تو یہ بولے کہ اگر دوبارہ ایسا ہوا تو وہ خاموش نہیں رہیں گے مگر یہ دوبارہ ہوا اور پھر بار بار ہوا مگر ان کی زبانیں پھر بھی گنگ ہی رہیں۔ ایسا اس لئے ہو رہا ہے کیونکہ امریکہ چاہتا ہے کہ روس یہ حملے بے خوف ہو کر جاری رکھے اور اس کے طیاروں کو کوئی نہ چھیڑے۔ روسی طیاروں کی جانب سے فضائی حدود کی بار بار خلاف ورزی پر یہ عسکری خاموشی کوئی خفیہ نہیں ہے بلکہ سب کے سامنے ہے،"۔۔۔ ترکی نے کہا کہ روسی لڑاکا طیاروں نے گزشتہ ہفتہ اور اتوار کے دن شام کی سرحد کے ساتھ اس کی فضائی حدود کی خلاف ورزی کی۔۔۔ ترکی نے کہا کہ کل ایک نامعلوم "مگ 29" طیارے نے ترکی کے 8 "ایف 16" طیاروں کو ہراساں کیا۔۔۔ ترک فوج نے کہا ہے کہ طیارے نے اپنے ہدف کے تعین اور ترک طیاروں پر میزائل داغنے کے لیے اپنے ریڈار کو تیار کیا۔۔" (الحیاۃ :الیکٹرانک کاپی، بدھ 7 اکتوبر 2015)۔ لیکن اس کے باوجود ترکی کی جانب سے کوئی موئثر اقدامات نہیں کیے گئے بلکہ صرف سفیر کی طلبی اور دوستی کو نقصان پہنچنے کی تنبیہ پر ہی اکتفا ء کیا گیا! "دوسری طرف ترک صدر نے یہ کہہ کر روس کو خبردار کیا کہ اگر اس نے انقرہ کے ساتھ اپنی دوستی کو نقصان پہنچایا تو اس کا بڑانقصان ہوگا۔ اسنے کہا کہ روسی جنگی جہازوں کی جانب سے ترکی کی فضائی حدود کی خلاف ورزی کا سلسلہ جاری رہا تو ترکی کے صبر کا پیمانہ لبریز ہو جائے گا۔ ترکی نے انقرہ میں روسی سفیر کو دو دنوں میں دوسری بار طلب کیا اور ایک بار پھر روسی لڑاکا طیاروں کی جانب سے شام کی سرحد کے قریب ترکی کی فضائی حدود کی خلاف ورزی پر 'شدید احتجاج' کیا جیسا کہ وزارت خارجہ کےایک عہدیدار نے کہا۔۔۔" (الدستور بدھ 7 اکتوبر2015)۔

اے مسلمانو! یہ یقیناً انتہائی تکلیف دہ بات ہے کہ مسلمانوں کے علاقے دشمنوں کے طیاروں، ان کے میزائلوں اور بحری جہازوں کے لیے میدان بنے ہوئے ہیں۔ صرف یہی نہیں امت مسلمہ کی تاریخ میں پہلی بار ایسا ہوا کہ کوئی دشمن حملہ کرتا ہے اور اس کی تعریف کی جاتی ہے، اس پر جشن منایا جاتا ہے اور مزید حملوں کا مطالبہ کیا جاتا ہے۔ یقیناً ایسے رویے کو اللہ، اس کے رسول اور مومنوں کے ساتھ خیانت سمجھا جاتا ہے۔ دشمن کے ساتھ تو صرف جنگ کی جاتی ہے، اس کو شکست دی جاتی ہے، اس پر فتح حاصل کی جاتی ہے نہ کہ مسلمانوں پر ان کے حملوں کی تعریف کی جائے یا ان کو یہ دعوت دی جائے کہ وہ اپنے طیاروں کو لے کر اسلامی زمین پر یلغار کر دیں! لیکن آج ہم دیکھ رہے ہیں کہ کچھ لوگ امریکی اتحاد کے حملوں پر مدح سرائی کر تے ہیں بلکہ اگر کسی دن کم حملے ہوں تواس کمی پر اس کی ملامت کی جاتی ہے۔۔۔ اسی طرح دوسری جانب ہم ان لوگوں کو دیکھتے ہیں جو روسی یلغار کی تعریفیں کر رہے ہیں اور اس کے فضائی حملوں کو زبردست کارنامہ قرار دے رہے ہیں! یقیناً یہ بہت بڑی بدبختی ہے۔ کچھ عرصے قبل تک یہ ایجنٹ، استعماری کفار کے ایجنٹ ہونے کے کھلم کھلا اظہار سے شرم محسوس کرتے تھے، بلکہ وہ خفیہ طریقے سے ان کی خدمت کرتے تھے، چہ جائیکہ وہ اسلامی سرزمین پر دشمن کے حملوں کی حمایت کا اعلان کریں۔۔۔آج امریکہ نے دہشت گردی کے خلاف جنگ کی آڑ میں مسلمانوں کے خلاف کثیر الملکی اتحاد قائم کرلیا ہے۔ اسی طرح روس نے دہشت گردی کے خلاف جنگ کے پردے میں ایران کے ساتھ اتحاد قائم کرلیا ہےجس میں دمشق اور بغداد بھی شامل ہیں۔ یہ سب کچھ اس وقت ہو رہا ہے جبکہ یہ خود دہشت گردی کے موجد اور اس کے ماخذہیں اور یہ جہاں جاتے ہیں ان کے وحشیانہ اعمال ان کے ساتھ ہوتے ہیں۔ انہوں نے اسلام اور اہل اسلام کے خلاف جنگ پر اتفاق کرلیا ہے اوراسلام کے دشمنوں کی یہی نشانی ہے کہ آپس میں کئی امور میں اختلاف کرتے ہیں مگر اسلام کے خلاف اکھٹے ہو جاتے ہیں:

(هُمُ الْعَدُوُّ فَاحْذَرْهُمْ قَاتَلَهُمُ اللَّهُ أَنَّى يُؤْفَكُونَ)"

یہی دشمن ہیں ان سے ہو شیار رہو اللہ ان کو ہلاک کرے کہا ں بھٹکے جا رہے ہیں" (المنافقون:4

اے مسلمانو! آج جس صورتحال میں ہم مبتلا ہیں اُس کا علاج معلوم میں سے ہے اور یہ نامعلوم نہیں ہے، اور اس کی کامیابی بھی اللہ کے اذن سے قطعی ہے جس میں کوئی شک و شبہ نہیں ہے۔ اس علاج کا ذکر غارِ حرا ،رسول اللہ کی ہجرت، خلافتِ راشدہ، عقبہ کا ساحل، اندلس کا طارق، ہارون رشید کی گفتگو، معتصم کا جواب، حطین کا صلاح الدین جو مسجد اقصی کو آزاد کرانے والا اور صلیبیوں کو ذلیل کرنے والا ہے، عین جالوت کا قطز، تاتاریوں کو تہس نس کرنے والا بیبرس اور بہترین امیر جو  قسطنطینہ کا فاتح ہے کرچکے ہیں۔۔۔ یہ علاج ثابت شدہ ہے، جب فرانس مسلمانوں کےخلیفہ القانونی سے اپنے قیدی بادشاہ کی رہائی کے لیے التجا کرتا ہے اور اس علاج کی تائید امریکہ کا اسلامی ریاست کے سامنے جھک کر بحیرہ روم میں اپنی کشتیوں کی حفاظت کو یقینی بنانے کے لیے جزیہ ادا کرنے سے ہو تی ہے۔۔ اور عبد الحمید کے اس قول سے ہوتی ہے جب یہود نے فلسطین کے کھو جانے کی دھمکی دی تو انہوں نے کہا کہ "اگر خلافت ختم ہو گئی تو وہ فلسطین کو بغیر قیمت کے ہی لے لیں گے۔۔۔" ایسا ہی ہوا اور انہوں نے فلسطین لے لیا اور ہماری سرزمین ہر ظالم دشمن کی آماجگاہ بن گئی۔۔۔ یہی وہ علاج اور حل ہے؛ کہ ہم اس مضبوط قلعے کی طرف لوٹ جائیں، خلافتِ راشدہ کی طرف، کیونکہ اس ہی میں دنیا اور آخرت کی عزت ہے۔۔۔ یہی وہ علاج ہے۔۔۔ یہ کتاب اللہ میں نقش ہے جس کو مٹایا نہیں جاسکتا، اور یہی سنت رسول میں مذکور ہے جس کو بھلایا نہیں جاسکتا۔۔۔ یہی تاریخ کے اوراق میں سنہرے حروف میں محفوظ ہے اور ہر صاحبِ عقل اور صاحبِ سماعت اس سے نصیحت حاصل کرسکتا ہے:

(إِنَّ فِي ذَلِكَ لَذِكْرَى لِمَنْ كَانَ لَهُ قَلْبٌ أَوْ أَلْقَى السَّمْعَ وَهُوَ شَهِيدٌ)"

بے شک اس میں ہر اس شخص کے لیے نصیحت ہے جو دل رکھتا ہے یا وہ کان لگا کر سننے اور گواہی دینے کی صلاحیت رکھتا ہے" (ق:37)۔

27 ذی الحجۃ 1436 ہجری                                                                                              حزب التحریر

11 اکتوبر 2015ٍ


Today 2653 visitors (8661 hits) Alhamdulillah
=> Do you also want a homepage for free? Then click here! <=