Media Office Hizb ut-Tahrir Pakistan

Yemen Crisis

بسم الله الرحمن الرحيم

Finally, the fighter jets of the agent rulers mobilize - But only to kill Muslims, not to fight the enemies!

The Saudi ambassador to the United States, Adel al-Jubair, announced on Thursday morning, 26/03/2015, the beginning of a military offensive against the Houthis comprising of air-strikes launched by a ten-state coalition, including all the Gulf states, except Oman. He mentioned that Saudi Arabia had consulted with the United States before taking this step. The Egyptian Foreign Minister announced the participation of Egypt and that four Egyptian naval warships were on their way to the Gulf of Aden. For his part, the Sudanese army spokesperson said, “Sudan will participate based on our Islamic responsibility. We will not remain idle while the Muslim’s Qibla and the land of Revelation is facing danger.”

The jets and battleship of these rulers have mobilized to invade Yemen, instead of attacking the Jewish entity, even though it is closer to them! The worst of their justifications is that this attack is to protect the Qibla of the Muslims, whilst it is has not been invaded. On the other hand, the first Qibla of the Muslims has been invaded, screaming and shouting out for help! The jets of these rulers have been mobilized towards Yemen in service of the agendas of the disbelieving colonialists, after never being mobilized to save the Blessed Land that has been occupied by those most severe in  enmity against the Muslims!

It is clear to those of insight that what is occurring in Yemen is a struggle between America and its partisans, the Houthis and others, on one side, and Britain and its partisans, Hadi, Saleh and their followers on the other side, as per what we elucidated in our previous releases on this matter:

The struggle in Yemen rages between two sides: America, its followers and agents and Britain, its followers and agents. Each side employs its own political styles. America proceeds by employing the material force of the Houthis, the movement in the South and Iran, in addition to negotiations by way Jamal Benomar (UN Special Advisor on Yemen). Britain employs political shrewdness by way of using Hadi and his presidency to resist US pressure and prevent her from taking any sensitive position of power. Concurrently, it pushed Saleh and his men with the Houthis, such that if Hadi fails against them, Britain still acquires a portion in the ruling through Saleh. This is what is occurring in Yemen. Britain no longer has overriding dominance in Yemen as she did in the past. At the same time, she is unable to militarily confront America and her agents. Thus, she opted for the way of shrewd political maneuvers through her two agents, Hadi and Saleh.” (01/10/2014)

America has supported the Houthis through Iran with weapons so that they are able to dominate Yemen by force. She realizes that the political medium in Yemen is dominated by Britain’s men. Thus, the Houthis thought they had the power to dominate Yemen. They besieged the president to force him to give them what they sought for the laws they had issued. He would agree, then delay in implementation…until they imposed house arrest on him but he escaped, moving to Aden. They pursued him there, but he escaped again. Thus the struggle became prolonged for the Houthis who spread themselves in the land, but without getting what they wanted, except for Saleh’s men who went with them, in order to share in the prize if they won against Hadi, but to leave them if they failed or even came close!

The first indications of this are now apparent. The General People’s Congress, headed by ex-President Ali Abdullah Saleh, announced that, “it has nothing to do with moves by the Houthi armed group and its attempts to overthrow the southern provinces and the completion of the coup against the legitimate authority in the country.” A statement issued by the General Committee of its Political Bureau said, “What is happening in Yemen is the result of a power struggle between other parties to which the General People’s Congress has no relation at all.” (al-Arabiya, 26/03/2015) As if it had not been an ally in war and peace with the Houthis just yesterday! Of course, it will not be strange if it returns to its original position, if the Houthis are successful, for agents swiftly change their skin, in accordance with the role set for them by their masters! Despicable, indeed, is what they do.

America realized that the Houthis found themselves in a shambles. They had extended themselves across Yemen, but were unable to either successfully dominate or to return to their stronghold in the north. She therefore decided to save them through limited military action, by which she seeks to hit two birds with one stone: to show them as victims, after the people had begun to see them as aggressors; and to create the atmosphere for emergency negotiations, to come thereby to a compromise solution. This is her well-trodden path, with respect to what she is unable to take alone.

All of this has become clearer by following what took place, and is taking place. Saudi Arabia consulted with America before the military action and those undertaking the active military role – Salman and Sisi – are American agents. As for the Gulf states, Jordan and Morocco, their role is more political, as per the British habit in countering America, such that she remains in the picture and has a place in the forthcoming negotiations, in order to take a share in the distribution of influence. While pressing military action succeeds at times, in opening the door of negotiation, it also fails at times, destabilizing matters anew, engulfing Yemen in its fire – Yemen, who was content and happy a time not long ago…when her pure land was not desecrated by the feet of agents and disbelieving colonialists.

O Muslims! These are our rulers. They are the biggest calamity afflicting us. If we do not exert all effort in removing this calamity from us it will envelop us resulting in great loss and corruption. Our resources have been pillaged, our blood spilled and we did not give due regard to the saying of Allah:

وَاتَّقُوا فِتْنَةً لَا تُصِيبَنَّ الَّذِينَ ظَلَمُوا مِنْكُمْ خَاصَّةً وَاعْلَمُوا أَنَّ اللَّهَ شَدِيدُ الْعِقَابِ

Fear the tribulation that will not afflict those of you who oppressed alone and know that Allah is severe in retribution,”

And the saying of the Messenger (saw):

«إِنَّ النَّاسَ إِذَا رَأَوْا ظَالِمًا، فَلَمْ يَأْخُذُوا عَلَى يَدَيْهِ أَوْشَكَ أَنْ يَعُمَّهُمُ اللَّهُ بِعِقَابٍ مِنْهُ»

When the people see an oppressor and do not prevent him, it is near that Allah encompasses them all with punishment.” (Tirmidhi)

These are our rulers. Palestine, the land of Isra and Mi’raj and the first Qibla, screams out for help, but their refuse. It seeks their support but they do not respond, as if there are covers over their eyes and ears. Yet they rush in subservience to execute the interests of the disbelieving colonialists. You do not see their jets, tanks and battleships mobilizing against the enemies of Islam and Muslims. Nay, they remain parked in their barracks, resting. However, they awaken and roar at the mere indication of political leaders who have no regard for the believer, of relation or covenant. They show themselves as grand and mighty to their people, but are smaller than children in front of the enemies. Allah destroys them, how they are perverted!

O Muslims: saving Yemen from this tribulation will neither be realised by supporting the partisans of Britain or America, nor by pretending to support one or the other. Rather, it will be realised by its people vigorously mobilizing, sincerely for Allah, the Exalted, remaining truthful to His Messenger (saw), to remove the oppressors from both sides, save the land from their treachery, and return Yemen to its origin: the land of Iman and Hikmah, raising the al-Uqab, the banner of the Messenger of Allah (saw), and ruling by the Shariah of Allah under the Khilafah Rashidah on the model of Prophethood:

وَيَوْمَئِذٍ يَفْرَحُ الْمُؤْمِنُونَ ۞ بِنَصْرِ اللَّهِ يَنْصُرُ مَنْ يَشَاءُ وَهُوَ الْعَزِيزُ الرَّحِيمُ

That day, the believers will rejoice with the victory of Allah; He gives victory to whom He wills, the Mighty, the Merciful.”

O Muslims, O people of Yemen: Hizb ut-Tahrir directs you honestly and sincerely to be aware. Do not let the arrogance of America and its partisans scare you and do not let the malice of Britain and its partisans beguile you. They are the enemy, so beware of them! Support the deen of Allah, He will support you and make strong your foothold.

﴿إِنَّ فِي ذَلِكَ لَذِكْرَى لِمَنْ كَانَ لَهُ قَلْبٌ أَوْ أَلْقَى السَّمْعَ وَهُوَ شَهِيدٌ﴾

Indeed, there is a lesson in all this for him who has a heart and gives ear (to the truth) attentively.

Hizb ut-Tahrir                                  Jumada al-Thaniya 1436 AH

                                                        27 March 2015 CE

بسم اللہ الرحمٰن الرحیم

بالآخر ایجنٹ حکمرانوں کے طیارے حرکت میں آگئے

مگر دشمنوں سے لڑنے کے لئے نہیں بلکہ مسلمانوں کو قتل کرنےکے لئے!

اقوامِ متحدہ کے لئے سعودی سفیر عادل الجبیر نے جمعرات کی صبح26 مارچ 2015 کو یمن کے حوثیوں کے خلاف عسکری آپریشن کا اعلان کردیا۔ اس آپریشن کے دوران فضائی کاروائیوں میں حصہ لینے والا اتحاد دس ممالک پر مشتمل ہے، جس میں عمان کے سواء باقی تمام خلیجی ممالک شامل ہیں۔ سعودی سفیر نے واضح کیا کہ سعودی عرب نے حوثیوں کے خلاف آپریشن شروع کرنے سے قبل امریکہ سے مشاورت کی تھی۔ مصر کے وزیر خارجہ نے اس آپریشن میں شرکت کا اعلان کیااور بتایا کہ چار مصری بحری جہاز خلیجِ عدن کی طرف روانہ ہوچکے ہیں۔ جبکہ سوڈانی مسلح افواج کے ترجمان نے  اعلان کیا کہ"اپنی اسلامی ذمہ داری کی بنیاد پر سوڈان اس(حملے) میں شرکت کرے گا۔ہم ایسی صورتحال میں ہاتھ پر ہاتھ رکھ کر نہیں بیٹھ سکتے جبکہ مسلمانوں کے قبلہ اور وحی کے نزول کی سر زمین پر خطرات کے بادل منڈلا رہے ہوں"۔

یوں بجائے یہ کہ حکمرانوں کے طیارے اور جنگی بحری جہازیہود یوں سے لڑنےکے لیے حرکت میں آتے وہ یمن پر بم برسانے کے لئے حرکت میں آئےحالانکہ سبا(یمن )کی سرزمین کی بنسبت یہودی وجود ان کے زیادہ قریب واقع ہے!اس کاروائی کے لیے جو جواز پیش کیے گئے ہیں ان میں سے بد ترین جوازیہ ہے کہ یہ حملہ مسلمانوں کے قبلہ کےتحفظ کی خاطر ہے، حالانکہ  حرم شریف پر تو حملہ ہوا بھی نہیں جبکہ مسلمانوں کا قبلہ اول جس پر یہودی حملہ کر کے قبضہ کر چکے ہیں اور وہ کئی دہائیوں سے یہودیوں کے قبضے میں ہے ، اورپکار پکار کر اِن حکمرانوں سے مدد کے لئے فریاد کرتا آرہا ہے،اس کی خاطریہ حکمران حرکت میں نہیں آتے!ان کے طیارے یمن کی طرف اس لئے پرواز کرتے ہیں تاکہ استعماری کفار کے منصوبوں کو مکمل کیا جائے، یہ طیارے فلسطین کی ارضِ مقدس کو چھڑوانے کے لئےکبھی نہیں اُڑتے جس پرمسلمانوں کے شدید ترین دشمن قابض بنے بیٹھے ہیں!

ہر صاحب بصیرت شخص جانتا ہے کہ یمن میں اس وقت جو کچھ ہو رہا ہے ، یہ امریکہ اور اس کے حوثی حواریوں اور ان کے ہمنوا ؤں اوردوسری طرف برطانیہ اور اس کے حواریوں ہادی،عبد اللہ صالح اور ان کے ہمنواؤں کی باہمی کشمکش ہے ،جیسا کہ ہم نے اس معاملے کے متعلق سابقہ دستاویزات میں لوگوں پر یہ واضح کیا تھا کہ"حقیقت یہ ہے کہ یمن میں جاری جنگ دوفریقوں کے درمیان ہورہی ہے: فریق اول امریکہ ،اس کے حواری اور ایجنٹ اورفریقِ ثانی برطانیہ ، اس کے حواری اور ایجنٹ۔ دونوں فریق اپنے اپنے وسائل اور اسالیب استعمال کررہے ہیں .... امریکہ یمن میں حوثیوں کی مادی قوت ، جنوبی علاقوں میں جاری تحریک اور ایران کے ذریعے معاملات کو آگے بڑھارہا ہے اور مذاکرات کے میدان میں یمن کے لئے اقوام متحدہ کے خصوصی مشیرجمال بن عمرکو استعمال کر تا ہے۔جبکہ برطانیہ اپنی سیاسی مکاری کو بروئے کار لاتا ہے اورامریکی دباؤ کے خلاف مزاحمت کے طور پر ہادی اور اس کی صدارت کو استعمال کررہا ہے اور اس بات کو یقینی بنارہاہے کہ کوئی امریکی حواری طاقت کے اہم مراکز میں سے کسی پربھی قابض نہ ہوسکے۔ساتھ ہی ساتھ برطانیہ نے بذاتِ خود علی صالح اور اس کے آدمیوں کو حوثیوں کے ساتھ اتحاد میں شامل ہونے کی اجازت دی تا کہ اگر ہادی اپنے مقصد میں ناکام ہوجائے اور حوثی اقتدار پر قابض ہو جائیں تب بھی برطانیہ علی صالح کے ذریعے اقتدار کے کچھ حصے پر قابض رہ سکے۔یہ ہے یمن کی صورتِ حال کی حقیقت۔چونکہ برطانیہ اب پہلے کی طرح یمن پر اپنی بالادستی قائم رکھنےکے قابل نہیں رہا ،جبکہ دوسری طرف وہ امریکہ اور اس کے ایجنٹوں کا عسکری طور پر مقابلہ نہیں کر سکتا اس لیے وہ اپنے ایجنٹ ہادی اور علی صالح کے ذریعے سیاسی مکاری پر ہی بھروسہ کرتا ہے،جنہوں نے اپنا کردار بخوبی ادا کیاہے "(یکم اکتوبر 2014)۔

امریکہ نے ایران کے ذریعے حوثیوں کو انواع واقسام کا اسلحہ اور سامان ِجنگ فراہم کرکے ان کی مدد کی تاکہ وہ طاقت کے بل بوتے پر یمن پر تسلط حاصل کرلیں۔ امریکہ یہ جانتا ہے کہ سیاسی میدان میں زیادہ تر برطانیہ کے پروردہ سیاست دان چھائے ہوئے ہیں۔ لہٰذا امریکہ نے حوثیوں کے ذریعے طاقت کے بل بوتے پریمن پر تسلط جمانے کی راہ اختیار کی۔حوثیوں نے صدر کا محاصرہ کر لیااور اس پر زور ڈالا کے وہ ان کی مرضی کے قوانین منظور کرے۔ یمن کا صدر ہادی ان قوانین کے نفاذ پرحوثیوں کے ساتھ اتفاق کرلیتا اور پھر اِن معاہدوں اور قوانین کو عملی جامہ پہنانے میں ٹال مٹول کرنے لگتا تھا ، یہ کھیل جاری رہا اور پھر وہ وقت آگیا جب حوثیوں نے صدر کو اس کے گھر میں قید کردیا لیکن وہ کسی طرح فرار ہو کر عدن پہنچ گیا۔ حوثیوں نے عدن تک اس کا پیچھا کیا، مگر وہ دوبارہ ان کے ہاتھوں بچ نکلا۔ یوں یہ کشمکش طویل ہوتی چلی گئی اور حوثیوں کی طاقت کسی ایک مرکز پر جمع نہ رہ سکی بلکہ پورے ملک کے اندر پھیل جانے سے کمزور ہوگئی اور حوثی وہ کچھ حاصل نہ کرسکے جو وہ چاہتے تھے سوائے اس کے کہ علی صالح اور اس کے حواریان کے ساتھ شامل ہوگئے تا کہ اگر حوثی ، صدر ہادی کے خلاف کامیاب ہو جاتے ہیں تو حاصل ہونے والے انعام میں سے وہ بھی اپنا حصہ وصول کرسکیں۔ اور اگر حوثی ناکام ہو جاتے ہیں تو انہیں چھوڑ دیا جائے۔ برطانوی ایجنٹوں کی اس حکمتِ عملی کے ابتدائی آثار دکھائی دے رہے ہیں۔ پس عوامی نیشنل کانگریس ، جس کی سربراہی سابق یمنی صدر علی عبد اللہ صالح کررہا ہے، نے اعلان کیا کہ "حوثی ملیشیا کی تحریک ، حوثیوں کی جانب سے جنوبی صوبوں پر قبضہ کرنے کی کوشش اور ملک کی قانونی اتھارٹی کے خلاف بغاوت کرنے کے عمل سے ہمارا کوئی تعلق نہیں ہے "۔ عوامی کانگریس پارٹی کے پولیٹیکل آفس کی جنرل کمیٹی کی طرف سے بیان دیا گیا کہ "یمن میں جو کچھ ہورہا ہے، یہ بعض دھڑوں کے درمیان اقتدار کی کشمکش ہے، اور نیشنل کانگریس کا اس سے دور ونزدیک کا کوئی واسطہ نہیں"(العربیۃ26 مارچ 2015)۔ عوامی نیشنل کانگریس کی طرف سے یہ بیان سامنے آیا حالانکہ کل تک وہ اس صلح یاجنگ میں حوثیوں کی حلیف تھی! اور یہ کوئی تعجب کی بات نہیں ہوگی کہ اگرمستقبل میں حوثیوں کا پلڑا بھاری ہو جائے تو عوامی کانگریس دوبارہ حوثیوں کی اتحادی بن جائے۔ اِن ایجنٹوں کا یہی وطیرہ ہوتا ہے کہ وہ ضرورت کے لحاظ سے اپنے آقا کے تیار کردہ کردار کے مطابق اپنےرنگ بدل لیتے ہیں!کیا ہی برا اُن کا یہ چلن ہے...!

جب امریکہ نے دیکھا کہ ان کے حوثی  حواری مخمصے کا شکار ہیں ، انہوں نے اپنی قوت کو پورے یمن میں پھیلا دیا ہے جس کے باعث نہ تو وہ مکمل طور پر اپنی بالادستی کو قائم کر پارہے ہیں اور نہ ہی وہ شمال میں اپنے مرکزکی طرف واپس جاسکتے ہیں،تو امریکہ نے محدود فوجی آپریشن کے ذریعے انہیں اس صورتحال سے نکالنے کا فیصلہ کیاکہ ایک تیر سے دو شکار ہوجائیں۔ پہلا :لوگ حوثیوں کو ایک جابر کی نظر سے دیکھنا شروع ہو گئے ہیں یہ فوجی حملے ان کے مظلوم ہونے کا تاثر قائم کریں گے اور دوسرا یہ کہ بحران کے بڑھنے سے ہنگامی مذاکرات کے لئے ماحول بن سکے گا اور کوئی مصالحتی حل سامنے آئے گا۔ ہر اس معاملے میں جہاں امریکہ تنہا کوئی مفاد حاصل کرنے کی طاقت نہیں رکھتا تو وہ یہی روش اختیار کرتا ہے۔

جو کچھ پہلے ہوچکا ہے اور جو کچھ اب ہورہا ہے اس نے صورتحال کو واضح کردیا ہے۔ سعودی عرب نے عسکری کاروائی سے قبل امریکہ  سے مشاورت کی ، اورامریکہ کے ایجنٹ ہی اس آپریشن میں پیش پیش ہیں یعنی سعودی عرب کا شاہ سلمان اورمصر کا جنرل سیسی۔ جہاں تک باقی خلیجی ریاستوں اور اُردن ومراکش کا تعلق ہے تو ان کا کردار زیادہ تر سیاسی ہے ، ان کا رویہ برطانیہ جیسا ہے، کہ برطانیہ امریکہ کا ساتھ دیتا ہے ، تا کہ یہ نظر آئے کہ وہ بھی متحرک ہے اور عنقریب ہونے والے مذاکرات میں اس کا بھی کچھ نہ کچھ کردار ہو اور اس طرح جو بھی حل سامنے آئے اس کے نتیجے میں طاقت کے مراکز میں اس کا بھی اثرو رسوخ موجود رہے۔اگر چہ فوجی کاروائی کو مسلط کرنا بسا اوقات مذاکرات کا سلسلہ شروع کرانے میں کا میاب رہتا ہے ، مگر کبھی یہ حربہ ناکام بھی ہو جاتا ہے ، جس کے نتیجے میں یمن کی صورتحال مزید غیر مستحکم ہو سکتی ہے اور اسے جنگ کی آگ میں دھکیل سکتی ہے۔ زیادہ عرصہ نہیں گزرا جب یمن  مستحکم اور خوشحال تھا جب اس کی پاک مٹی پر  ایجنٹوں اور استعماری کفار کے ناپاک قدم نہیں پڑے تھے۔

اے مسلمانو! یہ ہیں ہمارے حکمران۔ یہ حکمران ہی وہ سب سے بڑی مصیبت ہیں کہ جس سےآج ہم دوچار ہیں۔ اگر ہم نے اس مصیبت سے چھٹکارا حاصل کرنے اور ان کے ظلم وستم سے نجات کے لیے کوشش نہیں کی تو یہ ہمارے لئے مزید تباہی و بربادی کا باعث بن جائیں گے۔ ہمارے ذخائر لوٹے گئے ،ہمارا خون بہایا گیا ،جبکہ ہم نے اللہ سبحانہ وتعالیٰ کےاس قول کواپنے سامنے نہیں رکھا کہ:

﴿وَاتَّقُوا فِتْنَةً لَا تُصِيبَنَّ الَّذِينَ ظَلَمُوا مِنْكُمْ خَاصَّةً وَاعْلَمُوا أَنَّ اللَّهَ شَدِيدُ الْعِقَابِ﴾

"ڈرو اس فتنے سے جس کا شکار صرف وہ لوگ نہیں ہوں گے جو تم میں سے ظالم ہیں ، اور جان لو کہ اللہ کا عذاب شدید ہے"

اور آپ کے اس ارشاد کو بھی کہ:

«إِنَّ النَّاسَ إِذَا رَأَوْا ظَالِمًا، فَلَمْ يَأْخُذُوا عَلَى يَدَيْهِ أَوْشَكَ أَنْ يَعُمَّهُمُ اللَّهُ بِعِقَابٍ مِنْهُ»"

بے شک جب لوگ کسی کو ظلم کرتا دیکھیں اور اس کا ہاتھ نہ روکیں ، تو قریب ہے کہ اللہ تعالیٰ سب کو اپنے عذاب میں گھیر لے"(ترمذی)۔

یہ ہیں ہمارے حکمران۔ کہ اسراء ومعراج کی سرزمینِ فلسطین اور قبلۂ اول فریاد کررہےہیں ،مگر وہ اس کی فریاد پر کان نہیں دھرتے ،وہ ان سے مددطلب کررہے ہیں ، مگر وہ مدد کے لئے آگے نہیں بڑھتے گویا ان کے کانوں اور آنکھوں پر پردے پڑے ہوئے ہیں...لیکن جب بات ہوتی ہے کفر یہ استعماری ریاستوں کے مفادات کی تکمیل اور نفاذ کی تو یہ  ذلیل بن کر دوڑتے ہوئے آتے ہیں اور اپنے آقاؤں کی خدمت گزاری کواپنے لیے فخر کا باعث سمجھتے ہیں۔ چنانچہ ان کے طیارے ،ٹینک اور جنگی کشتیاں اسلام کی ترویج اور دشمنانِ اسلام کے مقابلے کے لئے حرکت میں نہیں آتے بلکہ بیرکوں میں پڑے رہتے ہیں۔ لیکن جب وہ  مغربی استعماری طاقتیں کہ جنہیں ایمان والوں سے نفرت ہے،صرف اشارہ ہی کرتی ہیں تویہ حکمران اس وقت اٹھ کھڑے ہوتے ہیں اور شیر کی طرح دھاڑنا شروع کردیتے ہیں۔ یہ حکمران اہل وطن کے سامنے توبڑے تکبر سے آتے ہیں ،مگر دشمنوں کے سامنے بھیگی بلی بن جاتے ہیں ، اللہ ان کو غارت کرے۔

اے مسلمانو! امریکہ یا برطانیہ کی حمایت کر کے یا ان کے ایجنٹوں میں سے کسی ایک کی حمایت کر کےیمن کو تباہ کن صورتحال سے نہیں نکالا جاسکتا بلکہ یمن کو اس کے عوام اس صورت بچا سکتے ہیں اگر وہ بھر پور قوت کے ساتھ صرف اور صرف اللہ سبحانہ و تعالٰی اور اس کے رسول کے لئے متحرک ہوجائیں ، دونوں جانب کے جابروں کو ہٹا دیں،  ملک کو ان کی خیانتوں سے محفوظ بنائیں اور یمن کو اس کی اصل کی طرف لوٹا دیں یعنی اسے دوبارا ایمان وحکمت کی سرزمین بنا دیں ، جو عقاب کے جھنڈے کو بلند کرے، جو اللہ کے رسول کا جھنڈ ا ہے ، اور نبوت کے نقشِ قدم پر قائم خلافت کی موجودگی میں اللہ کی شریعت کے ذریعے فیصلے کیے جائیں:

﴿وَيَوْمَئِذٍ يَفْرَحُ الْمُؤْمِنُونَ * بِنَصْرِ اللَّهِ يَنْصُرُ مَنْ يَشَاءُ وَهُوَ الْعَزِيزُ الرَّحِيمُ﴾

"اوراس روز مومن خوش ہوجائیں گے ،اللہ کی مدد سے ،وہ جسے چاہتاہے مدد دیتاہے اوروہ غالب اورمہربان ہے "

(الروم : 4-5)

اے مسلمانو! اے یمن والو!حزب التحریر اخلاص اور صدق کے ساتھ آپ سے مخاطب ہے کہ آپ کو امریکہ کے تکبراور ان کے حواریوں کے غرور سے ہرگزخائف نہیں ہونا چاہئے اور نہ ہی برطانوی خباثت اور اس کے حواریوں کی فریب کاریوں سے دھوکہ کھانا ہے۔ یہی دشمن ہیں لہٰذا ان سے محتاط رہو!  اور تم اللہ کے دین کی مدد کرو، اللہ تمہاری مدد کرے گا اور تمہارے قدم جمادے گا۔

(إِنَّ فِي ذَلِكَ لَذِكْرَى لِمَنْ كَانَ لَهُ قَلْبٌ أَوْ أَلْقَى السَّمْعَ وَهُوَ شَهِيدٌ)

"یقیناً اس میں اس شخص کے لئے بڑی نصیحت کا سامان ہے جس کے پاس دل ہو یا جو حاضر دماغ بن کر کان دَھرے"

(ق:37)

7 جمادل الثانی 1436 ہجری                                                   حزب التحریر

بمطابق 27 مارچ 2015ء


Today 1570 visitors (5226 hits) Alhamdulillah
=> Do you also want a homepage for free? Then click here! <=