Media Office Hizb ut-Tahrir Pakistan

Defy the Treacherous Rulers who Use Force to Silence Our Voices for Islam

بسم الله الرحمن الرحيم

Defy the Treacherous Rulers who Use Force to Silence Our Voices for Islam

          A major act of betrayal by Pakistan's current rulers has now unfurled to its full height, the "National Action Plan," which is an American plan to forcibly suppress Islam and Muslims. The purpose of this plan is clear from its frantic implementation, wherein the regime has sought to fill prisons with politicians and Ulema, simply for calling for Islam as a way of life, authority and state. Using operations against lowly criminals and sectarian miscreants as a cover, the regime has violated the sanctity of homes and work places of the sincere and aware Muslims, arresting engineers, teachers, doctors, the elderly, the severely ill and even the woman with a child in her arms.

          The “National Action Plan” has not even left the electronic and press media in peace, with the regime using the threat of force against journalists to prevent the political expression of Islam. The “National Action Plan” has strong-armed the judiciary, with the regime using intimidation against our judges to prevent the release of sincere Muslims who are calling for Islam, in a country which was created in the name of Islam and whose noble and lively people have been bound to Islam for over a millennium.

          As with every major policy of the current regime, it is in blind compliance with the commands of America, despite all its lies denying that fact. With the return of the Khilafah on the horizon, America is frantically struggling against the return of Islam as a political force and has mobilized its agents throughout the Muslim World, from Tunisia to Bangladesh, to forcibly suppress Muslims. Today, America is fully focussed on ensuring that Islam no longer serves as a narrative and standard for the Muslim World.

          Specifically in Pakistan, with reference to the U.S.-Pakistan Strategic Dialogue Joint Statement of 13 January 2015, the US State Department emphasized the need to “share best practices towards developing a counter-narrative to militancy and violent extremism.” American officials and elected representatives repeatedly direct the key figures of the Raheel-Nawaz regime to prevent “hate speech,” “Islamism” and “radicalism”, cover words for Islam and its political expression. American intelligence is, above all, concerned about certain key concepts, such as the rejection of man-made law, including democracy, the dominance of Islam, liberation of occupied Muslim Lands, unification of Muslim Lands and the return of the Khilafah. And America has provided its agents in Pakistan with hundreds of millions of dollars to be spent on “reforming” our judiciary, media, education and security services, so as to turn Pakistan into a state of force, a police state, to prevent the return of the Khilafah Rashidah.

          O Muslims of Pakistan!

          How can we be silent regarding the current rulers' alliance with America, when Allah (swt) said, إِنَّمَا يَنْهَاكُمْ اللَّهُ عَنْ الَّذِينَ قَاتَلُوكُمْ فِي الدِّينِ وَأَخْرَجُوكُمْ مِنْ دِيَارِكُمْ وَظَاهَرُوا عَلَى إِخْرَاجِكُمْ أَنْ تَوَلَّوْهُمْ وَمَنْ يَتَوَلَّهُمْ فَأُوْلَئِكَ هُمْ الظَّالِمُونَ Allah forbids your alliance with those who fight you because of your Deen, and drive you from your homelands, or aid others to do so: and as for those who turn to them in alliance, they are truly oppressors.” [Surah al-Mumtahina 60:9]? How can we be silent about the colonialist exploitation of our resources, when the Lord of the Worlds (swt) said, مَا يَوَدُّ الَّذِينَ كَفَرُوا مِنْ أَهْلِ الْكِتَابِ وَلاَ الْمُشْرِكِينَ أَنْ يُنَزَّلَ عَلَيْكُمْ مِنْ خَيْرٍ مِنْ رَبِّكُمْ وَاللَّهُ يَخْتَصُّ بِرَحْمَتِهِ مَنْ يَشَاءُ وَاللَّهُ ذُو الْفَضْلِ الْعَظِيمِ Neither those who followed earlier revelation who deny the truth, nor the Mushrikeen like to see good bestowed upon you from your Sustainer; but Allah bestows grace upon whom He chooses- for Allah is limitless in His great bounty.” [Surah al-Baqara 2:105]? How can we be silent regarding the duty of the armed forces to liberate Muslim Lands, including Afghanistan, Kashmir and Palestine, when RasulAllah (saaw) said, ما ترك قوم الجهاد إلاّ ذُلّوا "No people abandon Jihad expect that they are humiliated” [Ahmad]? How can we be silent about our demand to  end of the rule of force and the re-establishment of the Khilafah, when the Mercy to Humankind (saaw) said, ثُمَّ تَكُونُ مُلْكًا جَبْرِيَّةً فَتَكُونُ مَا شَاءَ اللَّهُ أَنْ تَكُونَ ثُمَّ يَرْفَعُهَا إِذَا شَاءَ أَنْ يَرْفَعَهَا ثُمَّ تَكُونُ خِلَافَةً عَلَى مِنْهَاجِ النُّبُوَّةِ ثُمَّ سَكَتَThen there will be rule of force, and it will remain as long as Allah will it to remain. Then Allah will end it when He wills. Then there will be a Khilafah on the Way of the Prophetood.” Then he fell silent. [Ahmad]?

          And, O Muslims of Pakistan, how can we remain silent when there is great reward in speaking out against the unjust ruler? RasulAllah (saw) said, أَفْضَلَ الْجِهَادِ كَلِمَةُ حَقٍّ عِنْدَ سُلْطَانٍ جَائِرٍ  “The best Jihad is the word of truth before the unjust ruler” [an-Nisai]. Indeed, the Muslim is the one who strengthens when faced with tyranny, rather than bending before it, just as steel is hardened in the raging furnace.

          It is upon us to defy the agent rulers, who are striving for a future of humiliation, exploitation and surrender before our enemies. It is up to us to raise our voices against the traitors in the political and military leadership, who are acting as obstacles to Islam as our political future, a Khilafah on the methodology of RasulAllah (saaw). The shebaab of Hizb ut-Tahrir are amongst us and in our front rows of this struggle for the Truth, so let us join them in raising our voices, fearing none but Allah (swt). RasulAllah (saaw) said, «أَلَا لَا يَمْنَعَنَّ أَحَدَكُمْ رَهْبَةُ النَّاسِ أَنْ يَقُولَ بِحَقٍّ إِذَا رَآهُ أَوْ شَهِدَهُ فَإِنَّهُ لَا يُقَرِّبُ مِنْ أَجَلٍ وَلَا يُبَاعِدُ مِنْ رِزْقٍ» Do not fear the people from speaking the Truth, when it is witnessed or seen, for it will neither shorten the life span nor cause loss in rizq.”

          O Officers of Pakistan's Armed Forces!

          Traitors within the political and military leadership are forcibly suppressing our voices for Islam, voices that call upon you to play your role in re-establishing Islam as a state and authority. You saw this forceful suppression in the time of Musharraf and you did not act then, though you now curse him. You saw this abuse of force again in the time of Kayani and you did not act then, though you now despise him. You are seeing forceful silencing of Islam yet again in the time of Raheel, yet you have not acted until now. The time to act has come for arrogance blinds the one who uses force and prevents him from seeing the growing anger, resentment and rejection of the regime. Indeed, criminal regime's mask is slipping now and a great opportunity has arrived.

          You are the people of power and force, who can within hours uproot the American project and the agents which implement it, were you to abide by your oath to protect your people from the enemy. It is upon you to overturn the American Raj by giving Nussrah to Hizb ut-Tahrir for the return of the Khilafah. Move now with Hizb ut-Tahrir under its Ameer, the eminent statesman and profound jurist, Sheikh Ata ibn Khaleel Abu Al-Rashta, ushering in a new era of dominance of Islam, so that the light of Islam can be a beacon of hope and guidance for the people of the world as it was for centuries.

يُرِيدُونَ أَن يُطْفِئُوا نُورَ اللَّهِ بِأَفْوَاهِهِمْ وَيَأْبَى اللَّهُ إِلَّا أَن يُتِمَّ نُورَهُ وَلَوْ كَرِهَ الْكَافِرُونَ

They seek to extinguish the light of Allah ; but Allah refuses everything except that He will perfect His light howsoever the kafireen might abhor it.”

[Surah At-Tawba 9:32]

03 Muharram1437 Hijri                                                                      Hizb ut-Tahrir

16 October 2015                                                                                Wilayah Pakistan

ٍٍبسم اللہ الرحمن الرحیم

غدار حکمرانوں کو مسترد کر دو جو طاقت کے ذریع

اسلام کی آوازوں کو کچل رہے ہیں

پاکستان کے موجودہ حکمرانوں کی جانب سے کی جانے والی ایک بڑی غدّاری، "نیشنل ایکشن پلان"، اب پوری طرح بے نقاب ہو چکی ہے جو کہ درحقیقت اسلام اور مسلمانوں کو کچلنے کا امریکی منصوبہ ہے۔ اس پلان کے دیوانہ وار نفاذ سے اِس کی حقیقت کھل کر سامنے آگئی ہے جہاں حکومت نے ہنگامی بنیادوں پر جیلوں کو ان سیاست دانوں اور علماء سے بھرنے کی کوشش کی جو اسلام کو ایک مکمل ضابطہ حیات، اقتدار اور ریاست کی صورت میں نافذ کرنے کا مطالبہ کرتے ہیں۔ نچلے درجے کے جرائم پیشہ اور فرقہ واریت میں ملوث افراد اور گروہوں کے خلاف آپریشن کو پردے کے طور پر استعمال کرتے ہوئےحکومت نے مخلص اور باشعور مسلمانوں کے گھروں اور دفاتر کے تقدس کو پامال کیا اور انجینئرز، ڈاکٹرز، اساتذہ، بوڑھے، شدید بیمار یہاں تک کہ اس خاتون کو بھی گرفتار کیا جس کی گود میں اُن کا بچہ تھا۔

نیشنل ایکشن پلان کے شر سے الیکٹرونک اور پرنٹ میڈیا بھی محفوظ نہیں رہا جہاں حکومت نے اسلام کے سیاسی اظہار کو روکنے کے لئے صحافیوں کو ریاستی قوت استعمال کرنے کی دھمکیاں دیں۔ نیشنل ایکشن پلان نے عدلیہ کو بھی اپنی لپیٹ میں لے لیا اور ججوں پر شدید دباؤ ڈالا گیا کہ وہ اُن مخلص مسلمانوں کو رہا نہ کریں جو اُس ملک میں اسلام کی دعوت دیتے ہیں جو اسلام کے نام پر بنا تھا اور جس کے معزز اور زندہ دل لوگ ایک ہزار سال سے اسلام سے جڑے ہوئے ہیں۔

حکومت، باقی تمام اہم پالیسیوں کی طرح، اِس نیشنل ایکشن پلان میں بھی، امریکی احکامات کی اندھی پیروی کر رہی ہے اور اِس حقیقت کو جھٹلانے کے لئے سفید جھوٹ بول رہی ہے۔ ایک ایسے وقت میں جب خلافت کا قیام کسی بھی وقت ہوا چاہتا ہے، امریکہ پاگلوں کی طرح اسلام کی ایک سیاسی قوت کے طور پر واپسی کو روکنے کی کوشش میں پوری مسلم دنیا میں تیونس سے لے کر بنگلادیش تک اپنے ایجنٹوں کو حرکت میں لے آیا ہے تاکہ وہ مسلمانوں کو قوت کے زور پر کچل دیں۔ آج امریکہ کی توجہ کا مرکز اس امر کو یقینی بنانا ہے کہ اسلام کسی بھی صورت مسلم دنیا کا نقطہ نظر اور مقیاس نہ بننے پائے۔

خاص طور پر پاکستان کے حوالے سے 13 جنوری 2015 کو امریکہ اور پاکستان کے اسٹریٹیجک مذاکرات کے مشترکہ اعلامیہ کے متعلق امریکی دفتر خارجہ نے اس بات پر زور دیا کہ "عسکریت اور متشدد انتہاپسندی کے خلاف متبادل تصورات کی تیاری کے لئے بہترین ضابطہ عمل کا تبادلہ کیا گیا"۔ امریکی حکام اور منتخب نمائندے مسلسل راحیل-نواز حکومت کی اہم شخصیات کو یہ ہدایت دیتے رہتے ہیں کہ وہ "نفرت انگیز تقاریر"، "اسلام ازم" اور "انتہا پسندی " کو روکیں۔ امریکی انٹیلی جنس خاص طور پر چند مخصوص تصورات کے متعلق پریشان ہے جیسا کہ جمہوریت سمیت انسانوں کے بنائے ہوئے نظاموں کو مسترد کرنا، غلبہ اسلام کا تصور، مقبوضہ مسلم علاقوں کی آزادی، مسلم علاقوں کو یکجا کرنا اور خلافت کی واپسی کا تصور۔ اور امریکہ نے پاکستان میں موجود اپنے ایجنٹوں کو ہماری عدلیہ، میڈیا، تعلیم اور سیکیورٹی اداروں میں "اصلاحات" کرنے کے لئے کروڑوں ڈالرز فراہم کیے ہیں تاکہ پاکستان میں خلافتِ راشدہ کی واپسی کو روکنے کے لئے اِسے طاقت پر مبنی ریاست یعنی ایک "پولیس سٹیٹ "میں تبدیل کر دیا جائے۔

اے پاکستان کے مسلمانو!

ہم موجودہ حکمرانوں کے امریکہ سے اتحاد پر کیسے خاموش رہ سکتے ہیں جبکہ اللہ سبحانہ و تعالیٰ فرماتے ہیں، إِنَّمَا يَنْهَاكُمْ اللَّهُ عَنْ الَّذِينَ قَاتَلُوكُمْ فِي الدِّينِ وَأَخْرَجُوكُمْ مِنْ دِيَارِكُمْ وَظَاهَرُوا عَلَى إِخْرَاجِكُمْ أَنْ تَوَلَّوْهُمْ وَمَنْ يَتَوَلَّهُمْ فَأُوْلَئِكَ هُمْ الظَّالِمُونَ" اللہ تمہیں انہی لوگوں سے دوستی کرنے سے روکتا ہے جنہوں نے تم سے دین کے بارے لڑائی لڑی اور تمہیں تمہارے علاقوں سے نکالا اور نکالنے والوں کی مدد کی۔ جو لوگ ایسے کفار سےدوستی کریں گے وہی ظالم ہیں" (الممتحنہ:09)؟ استعماری طاقتوں کی جانب سے ہمارے وسائل کے استحصال پر ہم کیسے خاموش رہ سکتے ہیں جبکہ اللہ سبحانہ و تعالیٰ فرماتے ہیں، مَا يَوَدُّ الَّذِينَ كَفَرُوا مِنْ أَهْلِ الْكِتَابِ وَلاَ الْمُشْرِكِينَ أَنْ يُنَزَّلَ عَلَيْكُمْ مِنْ خَيْرٍ مِنْ رَبِّكُمْ وَاللَّهُ يَخْتَصُّ بِرَحْمَتِهِ مَنْ يَشَاءُ وَاللَّهُ ذُو الْفَضْلِ الْعَظِيمِ" جو لوگ کافر ہیں، اہل کتاب یا مشرک، وہ اس بات کو پسند نہیں کرتے کہ تم پر تمہارےرب کی طرف سے خیر وبرکت نازل ہو۔ اور اللہ تو جس کو چاہتا ہے، اپنی رحمت کے ساتھ خاص کر لیتا ہے اور اللہ بڑے فضل کا مالک ہے "(البقرۃ:105)؟ ہم کیسے مسلم علاقوں کو آزاد کرانے کی افواج پر عائد ذمہ داری کے پورا نہ ہونے پر خاموش رہ سکتے ہیں جیسا کہ، افغانستان، کشمیر، اور فسلطین کے علاقے، جبکہ رسول اللہ نے فرمایا کہ، ما ترك قوم الجهاد إلاّ ذُلّوا "وہ قوم ذلیل ہو جائے گی جس نے جہاد کو ترک کیا" (احمد)؟ ہم کیسے اپنے اس مطالبے پر خاموشی اختیار کرلیں کہ ظلم و جبر کی حکمرانی کا خاتمہ ہو اور خلافت راشدہ ایک بار پھر قائم ہو جبکہ محسن انسانیت رسول اللہ نے فرمایا کہ، ثُمَّ تَكُونُ مُلْكًا جَبْرِيَّةً فَتَكُونُ مَا شَاءَ اللَّهُ أَنْ تَكُونَ ثُمَّ يَرْفَعُهَا إِذَا شَاءَ أَنْ يَرْفَعَهَا ثُمَّ تَكُونُ خِلَافَةً عَلَى مِنْهَاجِ النُّبُوَّةِ ثُمَّ سَكَتَ "پھر جبر کی حکمرانی ہوگی اور وہ اس وقت تک رہے گی جب تک اللہ چاہے گا۔ پھر اللہ اسے ختم کر دے گا جب وہ چاہے گا۔ پھر اس کے بعد نبوت کے طریقے پر خلافت ہو گی" اور اس کے بعد آپ خاموش ہو گئے۔(احمد)؟

اور اے پاکستان کے مسلمانو! ہم کیسے خاموش رہ سکتے ہیں جبکہ ظالم حکمرانوں کے خلاف کلمہ حق بلند کرنے پر بہت عظیم اجر رکھا گیا ہے؟ رسول اللہ نے فرمایا کہ، أَفْضَلَ الْجِهَادِ كَلِمَةُ حَقٍّ عِنْدَ سُلْطَانٍ جَائِر "ظالم حکمران کے سامنے کلمہ حق کہنا افضل ترین جہاد ہے" (نسائی)۔ بلا شبہ، مسلمان وہ ہے کہ جب وہ ظلم و جبر کا سامنا کرتا ہے تو استقامت کا پہاڑ بن جاتا ہے نہ کہ اس کے سامنے جھک جاتا ہے بالکل ویسے ہی جیسے فولاد بھٹی میں دہک کر مزید مضبوط بن جاتا ہے۔

ہم پر لازم ہے کہ ہم ایجنٹ حکمرانوں کو مسترد کر دیں جو ہمارے مستقبل کو ذلت و رسوائی، دشمنوں کی غلامی اور استحصال کی دلدل میں دھکیل رہے ہیں۔ ہم پر لازم ہے کہ ہم سیاسی و فوجی قیادت میں موجود غداروں کے خلاف کلمہ حق بلند کریں جو اسلام کو ہمارا سیاسی مستقبل بننے سے روک رہے ہیں یعنی رسول اللہ کے طریقے پر چلتے ہوئے ہوئے خلافت راشدہ کے قیام میں رکاوٹ ڈال رہے ہیں۔ حزب التحریر کے شباب ہمارے درمیان موجود ہیں اور حق کی اس جدوجہد میں  اگلی صفوں میں کھڑے  ہیں، توآئیے، سوائے اللہ سبحانہ و تعالیٰ کے، ہر کسی کے خوف کو بالائے طاق رکھتے ہوئے ان کے ساتھ شامل ہو جائیں اور اس کلمہ حق میں اپنی آوازوں کو شامل کر دیں۔ رسول اللہ نے فرمایاکہ، أَلَا لَا يَمْنَعَنَّ أَحَدَكُمْ رَهْبَةُ النَّاسِ أَنْ يَقُولَ بِحَقٍّ إِذَا رَآهُ أَوْ شَهِدَهُ فَإِنَّهُ لَا يُقَرِّبُ مِنْ أَجَلٍ وَلَا يُبَاعِدُ مِنْ رِزْقٍ "تم جب بھی مْنکر دیکھو، تو لوگوں کا خوف تمہیں حق بات کہنےسےنہ روکے، کیونکہ یہ (حق بات کہنا) نہ تو تمہاری زندگی کو کم کرتا ہے اور نہ ہی تمہارے رزق میں کچھ کمی لاتا ہے" (احمد)۔

اے افواج پاکستان کے افسران!

سیاسی و فوجی قیادت میں موجود غدار طاقت کے بل بوتے پر ہماری اسلام کی آوازوں کا گلا گھونٹ رہے ہیں، یہ وہ  پکار ہے جو آپ سے یہ مطالبہ کرتی ہے کہ اسلام کو اقتدار اور ریاست کی شکل میں دوبارہ نافذ کرنے کے لئے اپنا کردار ادا کریں۔ آپ نے اس جبرکا مشاہدہ  مشرف کے دور میں کیا لیکن آپ حرکت میں نہیں آئے جبکہ آج آپ اس پر لعنت بھیجتے ہیں۔ پھر آپ نے دوبارہ ریاست کی قوت کے اس غلط استعمال کا مشاہدہ کیانی کے دور میں کیا لیکن آپ حرکت میں نہیں آئے جبکہ اب آپ اس سے نفرت کرتے ہیں۔ ایک بار پھر آپ اسلام کی پکار کو کچلنے کے لئے قوت کے استعمال کا مشاہدہ راحیل کے دور میں کر رہے ہیں لیکن آپ اب تک حرکت میں نہیں آئے۔ اب وہ وقت آچکا ہے کہ آپ حرکت میں آئیں کیونکہ تکبر اس شخص کو اندھا کر دیتا ہے جو قوت کو استعمال کرتا ہے اور وہ اس قابل نہیں رہتا کہ یہ دیکھ سکے کہ حکومت کے خلاف غم و غصہ اور مخالفت بڑھتی چلی جا رہی ہے اوراسے مسترد کیا جا رہا ہے۔ بلا شبہ اس مجرم حکومت کے چہرے پر پڑا نقاب اٹھتا چلا جا رہا ہے اور ایک عظیم موقع آچکا ہے۔

آپ اہل قوت ہیں اور اس قابل ہیں کہ چند گھنٹوں میں امریکی منصوبے اور اس کے ایجنٹوں کو ملیا میٹ کر دیں اگر آپ اپنے اٹھائے ہوئے حلف کی پاسداری کریں کہ آپ دشمن کے خلاف اپنے لوگوں کا دفاع کریں گے۔ یہ آپ پر لازم ہے کہ آپ امریکی راج کے خاتمے اور خلافت کی واپسی کے لئے حزب التحریر کو نصرۃ فراہم کریں۔ حزب التحریر کے ساتھ اس کے امیر، مشہور سیاست دان اور فقیہ، شیخ عطا بن خلیل ابو الرشتہ کی قیادت میں حرکت میں آئیں اور غلبہ اسلام کے دور کا آغاز کریں تاکہ اسلام کی روشنی پوری دنیا کے انسانوں کے لئے رشد و ہدایت کا مینارِ نور بن جائے جیسا کہ ماضی میں صدیوں تک ایسا ہی ہوتا رہا۔

یرِيدُونَ أَن يُطْفِئُوا نُورَ اللَّهِ بِأَفْوَاهِهِمْ وَيَأْبَى اللَّهُ إِلَّا أَن يُتِمَّ نُورَهُ وَلَوْ كَرِهَ الْكَافِرُونَ

"وہ چاہتے ہیں کہ اللہ کے نور کو بھجا دیں لیکن اللہ ماننے والا نہیں جب تک کہ وہ اپنے نور کو مکمل نہ کر دے چاہے کفار کو کتنا ہی ناگوار گزرے"

(التوبۃ:32)

3 محرم 1437 ہجری                                                                                                 حزب التحریر

16 اکتوبر 2015                                                                                                      ولایہ پاکستان


Today 2591 visitors (8366 hits) Alhamdulillah
=> Do you also want a homepage for free? Then click here! <=