Media Office Hizb ut-Tahrir Pakistan

The only relief from corrupt systems and corrupt rulers is the Khilafah

بسم الله الرحمن الرحيم

The only relief from corrupt systems and corrupt rulers is the Khilafah

Our anger against the traitors within Pakistan's civilian and military leadership is unprecedented. As for economic misery, we struggle just to secure fuel, power, food, jobs, health-care and education. As for foreign policy humiliation, our armed forces are slapped in the face by America, in Abbotabad, in Salala and elsewhere, whilst we incur grave losses in lives and property through America’s war. General Kayani, President Zardari and their henchmen have crippled our country, despite its abundant material resources, strong armed forces and a noble and lively people, who love Allah سبحانه وتعالى and His Messenger صلى الله عليه و سلم . Allah سبحانه وتعالى said,

أَلَمْ تَرَ إِلَى الَّذِينَ بَدَّلُوا نِعْمَةَ اللَّهِ كُفْرًا وَأَحَلُّوا قَوْمَهُمْ دَارَ الْبَوَارِ

“Have you not seen those who have changed the Blessings of Allah into disbelief and caused their people to dwell in an abode of destruction?” [Surah Ibraheem 14: 29]

And there is no relief in sight. The impending election drama is only to bring some new faces, along with some old faces. However, the real cause of misery and humiliation, the current democratic capitalist system, will remain firmly in its place. Just as in dictatorship, corruption, misery and humiliation is produced by democracy itself. Just like dictatorship, in democracy too the sovereignty to legislate, deciding what is right and wrong, lies with men and not Allah سبحانه وتعالى. So self-serving individuals know that once they are elected into the democratic system, they can make laws to secure their interests. Any corrupt one amongst us, regards his “investment” of millions of rupees to become a public representative through elections, a wise investment because it will give a good “return.” The assembly is not about taking care of the people's interests, but a way for these corrupt elements to look after their own affairs and the affairs of those who selected and groomed them to rule, the colonialists.

It is democracy that provides the colonialists with a back door entry into our country to secure their interests and undermine ours. Since legislative sovereignty lies in the hands of the elected assemblies, the colonialists control the system in order to exploit the country and its resources. Whilst in dictatorship, colonialists have to secure the service of the dictator and his entourage in order to make laws and policies for their interests, in democracy, colonialists simply secure the agency of a group of politicians for the same thing. So, through democracy, legal sanctity is provided to colonialist policies, whether in our economy or foreign policy or education or any other matter. The Seventeenth Amendment to secure America's war, the National Reconciliation Ordinance to “cleanse” American agents of their previous crimes before they come to rule to commit more crimes, the Twentieth Amendment to bring all party members in line with America's key agents in political parties, are but three examples in a long list of examples. This is how Kayani, Zardari and their henchmen made their continuous treachery against Islam and Muslims into law in the past. As for the future, in democracy, the faces may change but the corruption always remains.

O Muslims of Pakistan! RasulAllah saw said,

لَا يُلْدَغُ الْمُؤْمِنُ مِنْ جُحْرٍ وَاحِدٍ مَرَّتَيْنِ

“The believer is not stung from the same hole twice.”

A thousand elections in this democratic system will never close the doors to your misery and humiliation. The elected rulers and assemblies are allowed to issue hundreds of laws and policies that openly violate the commands and prohibitions mandated by Allah سبحانه و تعالى. We must turn our faces away from the corrupt system of democracy that produces corrupt rulers and corrupt laws, as if it were a factory, just as we turned our faces away from dictatorship. In democracy, traitors enslave others to their own whims and desires and those of their colonialist masters, ignoring the Kitab of Allah and the Sunnah of RasulAllah.

Allah سبحانه و تعالى said,

وَأَنِ احْكُمْ بَيْنَهُمْ بِمَا أَنْزَلَ اللَّهُ وَلَا تَتَّبِعْ أَهْوَاءَهُمْ وَاحْذَرْهُمْ أَنْ يَفْتِنُوكَ عَنْ بَعْضِ مَا أَنْزَلَ اللَّهُ إِلَيْكَ.

“And judge between them by what Allah has revealed, and do not follow their desires, and beware (O Muhammad) that they might seduce you from some of what Allah has sent down to you.” [Surah Al-Maaida 5:49].

We will only find prosperity and security, once we rid ourselves of democracy and implement Islam through its ruling system, the Khilafah. Only the Khilafah closes the door in the face of the colonialists and their agents because the constitution and the laws are extracted from the Quran and the Sunnah exclusively. So, the elected men and women of the Majlis-e-Ummah, will not make laws. Instead, they will advise and account all the rulers on the basis of their ruling by Islam, in a system where Allah سبحانه و تعالى alone is Sovereign. And the Khaleefah has no right to implement any law other than according to what Allah has commanded and forbidden.

Thus, the Khilafah alone will relieve us of corruption, misery and humiliation. Rulers do not make laws and are subject to the laws of Allah as are all the citizens. The Khilafah will estimate the personal wealth of the Walis when they enter ruling and will take back any wealth they acquire during ruling when their rule ends. Islam will bring us relief from the hardship of unaffordable electricity, gas, kerosene, diesel and petrol. This is because in the Khilafah system, public properties, which include fuel and power, can neither be privatized nor even nationalized, rather the people are its actual owners, whilst the state only administers them on people’s behalf. So, the Khilafah will never profiteer from these public properties, rather it will ensure they benefit the entire society. The Khilafah will bring relief from the hardship of crippling taxes under the current system, release us from foreign debt, whilst unleashing huge alternative revenue sources for looking after the affairs of the people. In Islam, Allah سبحانه و تعالى decides which revenues are fair as well as who are able to pay them and taxation upon the poor is forbidden. Islam has its own unique system of revenue collection, including revenue from public properties, such as gas and oil, copper and gold, revenue from agriculture such as ushr and kharaj, and revenue from industrial manufacture, through Zakah on goods. As for the foreign policy, the Khilafah will cut the root of foreign domination over the Muslims, as it will end all relations with hostile kafir states. It will close their embassies, bases, residences for private military organizations and will prevent contact with their military and political officials. Rather than depending upon the kuffar for strength and dignity, the Khilafah will work to unify all the Muslim Lands as one state and it will forge relationships with non-hostile kafir states to facilitate making the call to Islam to them, leaving the hostile states isolated. And this is only some of that which Hizb ut Tahrir has prepared for implementation from the first moment the Khilafah is re-established inshaaAllah.

We must direct all of our efforts to our ruling system and our state, the Khilafah. We must all stand with our Muslim brothers and sisters of Hizb ut Tahrir around the world, in the serious work for the Khilafah. We must break our silence and become the masters of our own affairs, instead of silent spectators over our misery and humiliation. Let the demand for Khilafah resound within the houses, schools, colleges, mosques, offices, streets, markets and public places.

O officers of Pakistan’s armed forces!

The American masters of Kayani and the other traitors have lost their minds. They are grasping to any matter to delay the impending rise of Islam and its state, the Khilafah, whether through new elections in this corrupt system of democracy or persecution of those amongst you who desire the Khilafah. The Americans fear from you lest you establish Khilafah in Pakistan first or annex Pakistan with the Khilafah wherever it arrives first, whether in Syria or Egypt or any other place. Honor yourselves by being of the Ansar of today, those who granted the Nussrah (Material Support) for the establishment of the first Islamic state in Madinah. Give the Nussrah to Hizb ut Tahrir so that the Ummah rejoices at its liberation by its state, the Khilafah today. Allah سبحانه و تعالى said,

وَيَوْمَئِذٍ يَفْرَحُ الْمُؤْمِنُونَ * بِنَصْرِ اللَّهِ يَنْصُرُ مَنْ يَشَاءُ وَهُوَ الْعَزِيزُ الرَّحِيمُ

"And on that day the believers will rejoice, with the victory of Allah. He gives victory to whom He wills, and he is the Mighty, the Merciful.” [Surah al-Rum 30:4-5]

Hizb ut-Tahrir                                             15 Safar 1434

Wilayah Pakistan                                         28 December 2012

بسم الله الرحمن الرحيم

کرپٹ لیڈر کرپٹ نظام

نجات کا راستہ : خلافت کا قیام

پاکستان کی سیاسی و فوجی قیادت میں موجود غداروں کے خلاف عوام کا غصہ شدت کی انتہاء کو پہنچ چکا ہے۔ ان کی معاشی صورتحال اس قدر خراب ہو چکی ہے کہ وہ بڑی مشکل سے اپنا اور اپنے بچوں کا پیٹ پال رہے ہیں، جبکہ گیس، بجلی، صحت اور تعلیم کی سہولتیں اُن کی پہنچ سے باہر ہو چکی ہیں۔ دوسری طرف پاکستان کی خارجہ صورتحال اس مقام پر پہنچ چکی ہے کہ پوری دنیا کے سامنے ہماری بے عزتی کی جاتی ہے، امریکہ ایبٹ آباد اور سلالہ پر فوجی حملہ کر کے ہماری فوج کو ذلیل و رسوا کرتا ہے، جبکہ امریکہ کی نام نہاد "دہشت گردی کے خلاف جنگ" کے نتیجے میں ہمیں سنگین جانی اور مالی نقصانات اٹھانا پڑ رہے ہیں۔ اور اگرچہ اللہ نے پاکستان کو بے پناہ قدرتی وسائل، طاقتور افواج اورغیور لوگوں سے نوازا ہے جو اللہ اور اس کے رسول ﷺ سے محبت کرتے ہیں، لیکن ان تمام تر نعمتوں کے باوجود جنرل کیانی، اس کے فرنٹ مین صد رزرداری اور ان کے حواریوں نے ہمارے ملک کو تباہی کے دہانے پر پہنچا دیا ہے۔ ایسے ہی لوگوں کے متعلق اللہ تعالیٰ نے ارشاد فرمایا:

أَلَمْ تَرَ إِلَى الَّذِينَ بَدَّلُوا نِعْمَةَ اللَّهِ كُفْرًا وَأَحَلُّوا قَوْمَهُمْ دَارَ الْبَوَارِ

"کیا آپ نے ان لوگوں کو نہیں دیکھا جنھوں نے اللہ کی نعمت کے بدلے ناشکری کی اور اپنی قوم کو ہلاکت کے گھر میں لا اتارا" (ابراھیم:28)۔

اس بات کا کوئی امکان نہیں کہ اگر یہی لیڈر اور نظام برقرار رہا تو یہ مسائل کبھی حل ہو پائیں گے۔ آنے والے انتخابات محض ایک ڈرامہ ہوں گے جس میں پرانے چہروں کے ساتھ ساتھ کچھ نئے چہرے متعارف کرائے جائیں گے، لیکن موجودہ جمہوری سرمایہ دارانہ نظام جو کہ اس ذلت اور بدحالی کی بنیادی وجہ ہے اپنی جگہ پر اسی مضبوطی سے قائم رہے گا۔ جمہوریت کی حقیقت یہی ہے کہ آمریت کی طرح یہ بھی بذاتِ خود کرپشن، بدحالی اور ذلت کو جنم دیتی ہے۔ کیونکہ آمریت کی طرح جمہوریت میں بھی قانون بنانے کا اختیار اللہ خالقِ کائنات کا نہیں بلکہ انسان کے ہاتھ میں ہے اور انسان جس چیز کو چاہے جائز یا ناجائز قرار دے سکتا ہے۔ لہٰذا وہ افراد، کہ جن کا مقصد محض اپنے ذاتی مفادات کو پورا کرنا ہے، اس بات کو جانتے ہیں کہ اگر وہ جمہوری نظام میں منتخب ہو گئے تو ان کے پاس یہ اختیار ہوگا کہ وہ ایسے قوانین بنائیں جن سے ان کے ذاتی مفادات پورے ہو سکیں۔ چنانچہ کرپٹ افراد انتخابات میں کروڑوں روپے کی "سرمایہ کاری" کر کے "عوامی نمائندے" بنتے ہیں۔ ان کرپٹ لوگوں کے لیے یہ عقلمندانہ سرمایہ کاری ہے کیونکہ اس کے عوض میں زبردست "منافع" حاصل ہوتا ہے۔ پس جمہوریت میں اسمبلیوں کا مقصد یہ نہیں ہوتا کہ وہ عوام کے مفادات کی نگہبانی کریں بلکہ ان اسمبلیوں کے ذریعے کرپٹ لوگ اپنے اور اُن استعماری طاقتوں کے مفاد کا تحفظ کرتے ہیں جو ان کا چنائو کرتی ہیں اور حکمرانی تک پہنچنے کے لیے ان کی تربیت کرتی ہیں۔

اور جمہوریت ہی استعماری طاقتوں کو ہمارے ممالک میں داخل ہونے کے لیے چور دروازہ مہیا کرتی ہے تاکہ وہ اپنے مفادات کا تحفظ کریں اور ہمارے مفادات کو نقصان پہنچا سکیں۔ چونکہ جمہوریت میں قانون سازی کا اختیار اسمبلیوں کے پاس ہوتا ہے لہٰذا استعماری طاقتیں ان اسمبلیوں کے ذریعے پورے نظام کو کنٹرول کرتی ہیں اور ملک اور اس کے وسائل کا استحصال کرتی ہیں۔ آمریت میں استعماری طاقتوں کو صرف ایک آمر اور اس کے چند ساتھیوں کو کنٹرول کرنا ہوتا ہے تا کہ ایسے قوانین اور پالیسیاں بنائی جائیں جو ان طاقتوں کے مفادات کو پورا کریں، جبکہ جمہوریت میں اسی مقصد کو حاصل کرنے کے لیے استعماری طاقتیں چند سیاست دانوں کوخرید لیتی ہیں۔ یوں جمہوریت کے ذریعے استعماری پالیسیوں کو قانونی تحفظ فراہم ہو جاتا ہے چاہے ان کا تعلق ہماری معیشت سے ہو یا خارجہ پالیسی یا تعلیم یا کسی بھی اور مسئلے سے۔ یہی وجہ ہے کہ ہم نے دیکھا کہ سترہویں آئینی ترمیم کا مقصد مسلمانوں کے خلاف جنگ میں امریکہ کے ساتھ اتحاد کو قانونی جواز فراہم کرنا تھا، اور N.R.O کا مقصد امریکی ایجنٹ حکمرانوں کو ان کے پچھلے گناہوں سے "پاک صاف" کر نا تھا تاکہ وہ دوبارہ اقتدار حاصل کر کے مزید جرائم سرانجام دے سکیں، جبکہ بیسویں ترمیم کا مقصد تمام پارٹی ممبران کو ان کی پارٹیوں میں موجود امریکی ایجنٹوں کی مسلسل حمایت کرتے رہنے پر مجبور کرنا تھا۔ استعمار کی خاطر کی جانے والی قانون سازی کی لمبی فہرست میں سے یہ محض چند مثالیں ہیں۔ یہ ہے وہ طریقہ جس کے ذریعے کیانی، زرداری اور ان کے ساتھیوں کا ٹولہ، ماضی میں، مسلسل اسلام اور مسلمانوں کے خلاف غداری کو قانونی لبادہ پہنا تے رہے ہیں۔ اور جہاں تک مستقبل کی بات ہے تو اس جمہوری نظام میں شاید چند چہرے تو تبدیل ہو جائیں لیکن بدعنوانی اور کرپشن اسی طرح قائم و دائم رہے گی۔

اے پاکستان کے مسلمانو! رسول اللہ ﷺ نے فرمایا:

لَا يُلْدَغُ الْمُؤْمِنُ مِنْ جُحْرٍ وَاحِدٍ مَرَّتَيْنِ

"مومن ایک سوراخ سے دو بار نہیں ڈسا جاتا" (بخاری)۔

اس جمہوری نظام میں ہزاروں بار بھی انتخابات کروا دیے جائیں پھر بھی آپ کی تذلیل اور ابتر صورتِ حال میں تبدیلی نہیں آئے گی، ایک ایسا نظام کہ جس میں منتخب حکمرانوں اور اسمبلیوں کو یہ اختیار حاصل ہوتا ہے کہ وہ ایسی اَن گنت پالیسیاں اور قوانین جاری کریں جو اللہ سبحانہ و تعالی کے احکامات کی کھلم کھلاخلاف ورزی پر مبنی ہوں۔ ہمیں اس کرپٹ جمہوری نظام سے اسی طرح منہ موڑ لینا ہو گا جیسے ہم نے آمریت سے منہ موڑ لیا ہے کیونکہ جمہوریت بھی کرپٹ حکمرانوں اور کرپٹ قوانین کو جنم دینے کی ایک فیکٹری ہے۔ جمہوریت میں چند غدار، عوام کو اپنے اور اپنے استعماری آقاؤں کے مفادات اور خواہشات کاغلام بنا لیتے ہیں اور کتاب اللہ اور سنتِ رسول ﷺ کوپسِ پشت ڈال دیتے ہیں۔ جبکہ اللہ سبحانہ و تعالی نے اسلام کے احکامات کو نافذ کرنے کی بجائے لوگوں کی خواہشات کی پیروی کرنے، سے خبردار کرتے ہوئے ارشاد فرمایا:

وَأَنِ احْكُمْ بَيْنَهُمْ بِمَا أَنْزَلَ اللَّهُ وَلَا تَتَّبِعْ أَهْوَاءَهُمْ وَاحْذَرْهُمْ أَنْ يَفْتِنُوكَ عَنْ بَعْضِ مَا أَنْزَلَ اللَّهُ إِلَيْكَ.

"اور یہ کہ آپ ﷺ ان کے درمیان اللہ تعالیٰ کے نازل کردہ احکامات کے مطابق ہی حکمرانی کریں اور ان کی خواہشات کی پیروی ہرگز نہ کیجئے گا۔ اور ان سے محتاط رہیں کہ کہیں یہ اللہ تعالیٰ کے نازل کردہ بعض (احکامات) کے بارے میں آپ ﷺ کو فتنے میں نہ ڈال دیں" (المائدہ: 49)۔

ہم اسی صورت میں خوشحالی اور تحفظ حاصل کر سکتے ہیں جب ہم جمہوریت کو ہمیشہ کے لیے خیر باد کہہ دیں اور اسلام کے نظامِ حکومت یعنی "خلافت" کے ذریعے اسلام کو مکمل طورپر نافذ کر دیں۔ کیونکہ صرف خلافت ہی اس چور دروازے کو ہمیشہ ہمیشہ کے لیے بند کرے گی جس کے ذریعے استعماری طاقتیں اور ان کے ایجنٹ ہمارے ملک اور ہمارے معاملات میں مداخلت کرتے ہیں کیونکہ خلافت میں آئین اور قوانین صرف اور صرف قرآن اور سنت رسول ﷺ سے اخذ کیے جاتے ہیں۔ اور خلافت میں مجلسِ امت میں موجود منتخب مرد اور خواتین کو قانون سازی کا کوئی اختیار حاصل نہیں ہوتا بلکہ ان کی ذمہ داری یہ ہوتی ہے کہ وہ اسلام کی بنیاد پر حکمرانوں کا محاسبہ کریں اورا نہیں نصیحت کریں کیونکہ خلافت میں حاکمیت اعلیٰ صرف اللہ سبحانہ و تعالی کے لیے خاص ہے اور خلیفہ کو اس بات کا کوئی حق حاصل نہیں ہوتا کہ وہ اللہ کے نازل کردہ قوانین کے علاوہ کوئی بھی دوسرا قانون نافذ کرے۔ اللہ تعالیٰ نے قرآن میں ارشاد فرمایا:

وَمَنْ لَّمْ یَحْکُمْ بِمَا اَنْزَلَ اللّٰہُ فَاُوْلٰئِکَ ھُمُ الْفَاسِقُوْنَ

"اور جو اللہ تعالیٰ کے نازل کردہ احکامات کے ذریعے حکمرانی نہ کرے تو ایسے لوگ ہی فاسق ہیں" (المائدہ: 47)۔

صرف خلافت ہی ہمیں کرپشن، بدحالی اور ذلت کی صورتحال سے نجات دلوائے گی۔ خلافت میں حکمران قوانین ایجاد نہیں کرتے بلکہ حکمران بھی عام شہریوں ہی کی طرح اللہ کے قوانین کی اتباع کرنے کے پابند ہوتے ہیں۔ خلافت میں والیوں (گورنروں) کو نامزد کرتے وقت ان کی ذاتی دولت کو شمار کیا جائے گا اور جب ان کی حکمرانی کی مدت کا خاتمہ ہو گا توجو بھی دولت اصولی حساب سے زائد ہو گی اسے ضبط کر کے بیت المال میں جمع کر دیا جائے گا، جیسا کہ عمر نے اپنے دورِ خلافت میں کیا اور باقی صحابہ نے اس سے اتفاق کیا، کیونکہ حکمرانی کے دوران حکمران کی دولت میں بے پناہ اضافہ کرپشن کے ثبوت کے لیے کافی ہے۔ اسلام کے نظامِ معیشت کا نفاذ ہمیں بجلی، گیس، ڈیزل اور پیٹرول کی ناقابل ِبرداشت مہنگائی کے عذاب سے نجات دلوائے گا۔ یہ اس لیے ممکن ہوگا کیونکہ نظامِ خلافت میں تیل، گیس اور توانائی کے وسائل جیسے عوامی اثاثوں کو کسی بھی صورت پرائیویٹ کمپنیوں کی ملکیت میں نہیں دیا جا سکتا اور نہ ہی حکمران انہیں سرکاری ملکیت بنا سکتا ہے بلکہ عوام ہی ان اثاثوں کے اصل مالک ہوتے ہیں اور ریاست صرف امت کی طرف سے دیے گئے اختیار کی بنا پر ان وسائل کے معاملات کی دیکھ بھال کرتی ہے۔ لہٰذا ریاستِ خلافت کبھی بھی ان عوامی اثاثوں کو اپنے منافع کے لیے استعمال نہیں کرتی بلکہ وہ اس بات کو یقینی بناتی ہے کہ ان عوامی اثاثوں سے پورا معاشرہ فائدہ اٹھائے۔ خلافت موجودہ نظام میں نافذ ظالمانہ ٹیکسوں اور غیر ملکی قرضوں سے نجات دلائے گی اور ایک نئے ٹیکس نظام کو متعارف کروائے گی جس میں غریب عوام پر ٹیکسوں کاکوئی بوجھ نہیں ہوتا، لیکن اس کے ساتھ ساتھ اتنے وسائل دستیاب ہوتے ہیں کہ جس سے امت کے معاملات کی نگہبانی کی جاسکے۔ اسلام کے نظام میں اللہ کا قانون ہی اس بات کا فیصلہ کرتا ہے کہ کون سا ٹیکس منصفانہ ہے اور کون اس کو ادا کرنے کی استعداد رکھتا ہے، جبکہ اسلام میں غریبوں پر ٹیکس لگانا حرام ہے۔ اسلام کا اپنا ایک منفردمحصولات کا نظام ہے جس میں عوامی اثاثوں، جیسے تیل، گیس، تانبہ، سونا وغیرہ سے حاصل ہونے والی آمدن، زراعت کے شعبہ سے حاصل ہونے والا عشر اور خراج اور صنعتی شعبے کی پیداوار پر لگنے والی زکوة وغیرہ شامل ہیں۔ اور جہاں تک خارجہ پالیسی کا تعلق ہے، تو خلافت مسلمانوں پر کفار کے غلبے کی جڑ ہی کاٹ دے گی اور وہ تمام حربی کفار سے تعلق توڑ لے گی، ان کے سفارت خانے، اڈے اور ان کی نجی عسکری تنظیموں کی رہائش گاہوں کو بند کر دے گی، اور ان کے کسی بھی فوجی اور سیاسی عہدیدار کے ریاستِ خلافت میں موجود رابطوں اور تعلقات کو کاٹ دے گی۔ ریاستِ خلافت کو طاقتور اور عزت دار بنانے کے لیے کفارکی طرف رجوع نہیں کیا جائے گا بلکہ خلافت مسلمان علاقوں کو یکجا کرنے کے لیے کام کرے گی تا کہ تمام مسلم علاقوں کو ضم کر کے ایک ریاست کی شکل دے سکے۔ خلافت غیر حربی کفار ممالک سے تعلقات استوار کرے گی تا کہ ان تک اسلام کی دعوت کو پہنچایا جا سکے اور مسلمانوں کے خلاف صف آرا کافر حربی ریاستوں کو تنہا کیا جائے۔ یہ اُن اقدامات میں سے چند ہیں جو حزب التحر نے نفاذ کے لیے تیار کر رکھے ہیں، جنہیں اللہ کے اذن سے ریاستِ خلافت کے قیام کے فوراً بعد نافذ کیا جائے گا۔

ہم مسلمانوں پر لازم ہے کہ ہم اپنی تمام تر توانائی اپنی ریاست، اپنے نظامِ حکومت یعنی خلافت کے قیام کے لیے مختص کر دیں۔ ہم سب کو پوری دنیا میں موجود اپنے اُن بھائیوں اور بہنوں کے شانہ بشانہ کھڑے ہونا چاہیے جو حزب التحریر میں موجود ہیں اور خلافت کے قیام کے لیے سنجیدگی سے مصروفِ عمل ہیں۔ ہمیں اپنی خاموشی کو توڑنا ہوگا اور اپنے امور کا خود مالک بننا ہوگا، نہ کہ ہم محض اپنی تباہی و بربادی کو کھڑے دیکھتے رہیں۔ اُٹھیں اور خلافت کی پکار کو ہر گلی، ہر محلے، ہر بازار اور ہر مسجد کی پکار بنا دیں۔

اے افواج پاکستان کے افسران! کیانی اور اس کا ساتھ دینے والے غدار ٹولے کے آقا امریکہ کا دماغ مائوف ہو رہا ہے۔ وہ اسلام اور اس کی ریاست خلافت کی یقینی واپسی کو ٹالنے کی ہر ممکن مگر ناکام کوشش کر رہا ہے، خواہ یہ کوشش اس کرپٹ جمہوری نظام میں انتخابات کروانا ہو یا آپ کے درمیان موجود اُن افسران کے خلاف کاروائیاں کرنا ہو جو خلافت کا قیام چاہتے ہیں۔ امریکہ آپ سے خوفزدہ ہے کہ کہیں آپ سب سے پہلے پاکستان سے خلافت کا آغاز نہ کر دیں یا پھر آپ شام، مصر یا کسی اور مسلم ملک میں خلافت قائم ہونے پر پاکستان کو اس خلافت کا حصہ نہ بنا دیں۔ پس آپ امریکہ کی ان کوششوں کو ناکام بناتے ہوئے خلافت کے قیام کے لیے نصرة دے کر خود کو آج کا انصار ثابت کریں اور اس عزت و شرف کو حاصل کرلیں جو مدینے میں پہلی اسلامی ریاست قائم کرنے والے انصار کو حاصل ہوئی تھی۔ حزب التحریر کو نصرة فراہم کرو تاکہ امت اپنی ریاستِ خلافت کے قیام کے نتیجے میں کفار کے ہاتھوں اپنی اس طویل غلامی سے نجات پر خوشیاں منائے۔

وَيَوْمَئِذٍ يَفْرَحُ الْمُؤْمِنُونَ * بِنَصْرِ اللَّهِ يَنْصُرُ مَنْ يَشَاءُ وَهُوَ الْعَزِيزُ الرَّحِيمُ

"اس روز مسلمان شادمان ہوں گے، اللہ کی مدد پر۔ وہ جس کی چاہتا ہے مدد کرتا ہے۔ وہی غالب اور مہربان ہے" )الروم:4۔5(

حزب التحریر                                                                15 صفر 1434

ولایہ پاکستان                                                              28 دسمبر 2012


Today 3595 visitors (11162 hits) Alhamdulillah
=> Do you also want a homepage for free? Then click here! <=