Media Office Hizb ut-Tahrir Pakistan

PR 04 07 2013 Eygpt

 

Thursday, 25th Shaban 1434 AH                                    04/07/2013 CE                           No: 130704

The army undertakes a coup against the so-called imaginary Democracy

Yesterday evening on Wednesday 03/07/2013 General Abdul Fattah As-Sisi the Minister of Defence and war production announced what he called the 'Future map' for the country. The map includes the temporary abeyance of the constitution, the dismissal of the elected president, holding of early presidential elections, provision for the head of the constitutional court to run the affairs of the country throughout the transitional period and until a new President is elected, and for the head of the constitutional high court to have the right to issue constitutional declarations throughout the transitional period. And he indicated that a government of 'National competencies' would be formed, in addition to a committee that would look into all of the suggested constitutional alterations and an appeal to the high constitutional court to decide upon a law for parliamentary elections.

And in this way the army performed against the so-called supposed Democracy that came with Mursi as the 'Legitimate ruler' for the country, as they claimed. And this coup took place under the excuse that the general leadership had refused: 'The abuse to the national and religious institutions of the State' in addition to the: 'intimidation and threatening of sections of the citizens'. So where are they positioned in respect to that Democracy that they have so often played lip service to? And especially after closing all of the Islamic television channels, arresting and hunting down hundreds from amongst the main figures from the Islamic wing?

And from all this it has been shown without doubt that those who hold the real and effective power throughout the last period were the armed forces and that the President and his group represented no more than a puppet that was moved by the military establishment, and behind it the head of disbelief America whenever they wanted. And it has also been established that it is not possible to bring Islam to the ruling via this democracy and its ballot boxes within its secular system. It is as if they did not learn from what happened to the Islamic Salvation Front in Algeria and it is hoped that now and finally the callers to this methodology will consider and fully realise this reality and truth.

America has exploited the bitter resentment of the Ummah to the callers of what they call 'Moderate Islam' to give a negative image of Islam by illustrating their failing in relation to managing the nation's affairs. And this is despite the fact that they did not implement Islam and despite the fact that they did not hold the real authority in the land. So they used them for their benefit and then gave them this description leaving in their wake a notion of fleeing away from the rule of the 'Islamists,' which affected a section from amongst the people.

So it is necessary for the Muslims to know that there is only one way to establish the rule of Islam and no other way. This is the path that the Messenger of Allah صلى الله عليه وسلم walked when he refused to take the rule that was deficient and incomplete and he refused to participate in a corrupt system that was in violation to Islam. Rather the way is to be patient and persevere until the Nusrah (support) comes in full and to work tirelessly within the Ummah to generate a public opinion amongst her based on a general awareness about the obligation to implement the Shar'a of Allah completely in the Khilafah State. This will happen by engaging in an intellectual clash through presenting the strong challenging Islamic thoughts to struggle against the thoughts of Kufr (disbelief), just as the Messenger of Allah صلى الله عليه وسلم did himself. It will not happen by diluting the Islamic thoughts and attempting to make them fit with the Kufr un-Islamic thoughts. Political struggle is also required in addition to exposing the plans and conspiracies that are being plotted against Islam and the Muslims just as the Messenger of Allah صلى الله عليه وسلم did himself and it will not happen by way of flattery and walking side by side with all the despots and agents of the western disbelievers residing in our country from amongst the politicians, media personalities and those who claim to be thinkers. This is the way in which the public opinion for the Khilafah and the Shari'ah will be generated so that the sincere people from amongst the people of Nusrah (support) in the army can take sides and align themselves with this call. This is because they (the Army) are those who possess the real power as was proven by the declaration of Sisi however it is unfortunate that he gave his support to that which did not deserve it and had no right to be supported! And he gave up on those who had flattered him without having presented to him a real project that emanates from the Aqueedah (belief) of the Ummah.

We in Hizb ut Tahrir are the leader that does not lie to his people. We repeat the invitation to everyone who wants to see Islam established firmly within the real Islamic State, the Khilafah State, to join us and work with us to establish it in accordance to the methodology that the Messenger of Allah صلى الله عليه وسلم proceeded upon. This is because this is the only way that will truly free the people of Egypt and all of the Muslim lands, and indeed the whole world in its entirety from oppression, fighting, bickering and hatred against one another. The people, Muslims and non-Muslims will live under the shade of this state of goodness, the Khilafah State, which had been the beacon of light for the earth, its blossoming flower and bright shining light for more than thirteen centuries.

Allah سبحانه وتعالى says:

وَنُرِيدُ أَنْ نَمُنَّ عَلَى الَّذِينَ اسْتُضْعِفُوا فِي الْأَرْضِ وَنَجْعَلَهُمْ أَئِمَّةً وَنَجْعَلَهُمُ الْوَارِثِينَ

"We desired to show kindness to those who were oppressed in the land and to make them leaders and make them inheritors"

(Al-Qasas, 28:5)

Sharif Zayed

Head of the Media Office of Hizb ut Tahrir, Wilayah of Egypt

جمعرات، 25 شعبان، 1434ھ                                                            04/07/2013نمبر:PR130704

نام نہاد خیالی جمہوریت کے خلاف فوج نے بغاوت کر دی

کل شام بروز بدھ 3 جولائی 2013 کو وزیر برائے دفاع اور پیداوار، جنرل عبدل الفتاح السیسی نے ملک کے لیے "مستقبل کے لائحہ عمل" کا اعلان کیا۔ اس لائحہ عمل میں کچھ عرصے کے لیے آئین کے معطلی، منتخب صدر کے معزولی، وقت سے پہلے صدارتی انتخابات کرانے، عبوری دور کے دوران آئینی عدالت کے سربراہ کی ملکی معاملات کو چلانے اور آئینی ہائی کورٹ کے سربراہ کو اس بات کا اختیار کہ وہ پورے عبوری دور کے دوران آئینی اعلامیے جاری کرنے کے مجاز ہونے ہوں گے، کی بات کی گئی ہے۔ جنرل السیسی نے اس بات کا عندیہ دیا کہ ایک کمیٹی بنائی جائے گی جو تمام آئینی ترامیم کا جائزہ لے گی اور پارلیمانی انتخابات کے حوالے سے ہونے والی قانون سازی کے متعلق اپیلیں اعلی آئینی عدالت میں دائر کی جاسکیں گی اوریہ بھی کہا کہ ایک "باصلاحیت قومی حکومت" بنائی جائے گی۔

اور اس طرح فوج نے نام نہاد خیالی جمہوریت کے خلاف بغاوت کر دی، وہ نام نہاد جمہوریت جس کے دعوے کے مطابق مرسی ملک کے 'قانونی حکمران' ہیں۔ یہ فوجی بغاوت اس بہانے کی گئی کہ یہ اقدام "قومی اور مذہبی اداروں کی تذلیل "کی اور شہریوں کو ڈرانے دھمکانے" کو روکنے کے لیے ہے۔ تو جمہوریت کے لحاظ سے اب ان کی پوزیشن کیا ہے کہ جس جمہوریت کے یہ اکثر گن گاتے رہے ہیں؟ خصوصاً جبکہ انہوں نے تمام اسلامی ٹی وی چینلزبند کر دیے گئے ہیں اور اسلام پسندوں میں سے سینکڑوں اہم لوگوں کو گرفتار کر لیا گیا ہے؟

ان تمام واقعات نے اس بات کو بغیر کسی شک و شبہ کے ثابت کر دیا ہے کہ پچھلی حکومت کے تمام دورِ اقتدارمیں اصل طاقت فوج کے پاس تھی اور صدر اور اس کا گروہ محض ایک کٹھی پتلی تھے جس کی ڈوریاں فوجی اسٹیبلشمنٹ کے ہاتھوں میں تھیں اور اسٹیبلشمنٹ کے پیچھے کفر کا سردار امریکہ تھا جس کے احکامات کے مطابق یہ کام کرتے تھے۔ یہ بات بھی ثابت ہو گئی ہے کہ سیکولر نظام میں جمہوریت اور اس کے بیلٹ بوکسوں کے ذریعے اسلام کی حکمرانی کا قیام ناممکن ہے۔ الجزائر میں اسلامک سالویشن فرنٹ کے ساتھ جو پیش آیا تھا انھوں نے اس سے سبق حاصل نہیں کیا تھا۔ امید کی جاتی ہے کہ اب اس طریقہ کار کے داعی اس بات پر سوچیں گے اور مکمل طور پر حقیقت اور سچائی کا ادراک کرلیں گے۔

"اعتدال پسند اسلام" کے خلاف امت کے شدید غم و غصے کو امریکہ نے استعمال کیا اور یہ کہہ کر اسلام کے متعلق منفی تاثر دیا کہ یہ لوگ قوم کے امور کو سنبھالنے میں ناکام رہیں ہیں۔ اور یہ سب کچھ اس بات کے باوجود ہوا کہ انھوں نے نہ تو اسلام کو نافذ کیا اور نہ ہی وہ اختیار و اقتدار کے حقیقی مالک تھے۔ لہذا انھوں نے انھیں اپنے مفاد کے لیے استعمال کیا اور پھر ان کے متعلق کہا کہ یہ اس قابل نہیں ہیں اور یہ نعرہ دیا گیا کہ اسلام پسندوں کی حکمرانی سے جان چھڑاؤ اور اس نعرے نے معاشرے کے ایک حصے کو متاثر کیا۔

لہذا مسلمانوں کے لیے یہ جاننا ضروری ہے کہ اسلام کی حکمرانی قائم کرنے کا صرف ایک ہی طریقہ اور راستہ ہے اور اس کے علاوہ کوئی دوسرا راستہ نہیں۔ اور یہ راستہ ہے رسول اللہ ﷺ کا کہ جب انھوں نے ایسی حکمرانی کوقبول کرنے سے انکار کر دیا تھا جو نامکمل اور اختیار کے بغیر تھی اور انھوں نے اس کرپٹ نظام کا حصہ بھی بننے سے انکار کر دیا تھا جو اسلام کے احکامات سے مکمل متناقص تھا۔ اصل راستہ صبر و استقامت کے ساتھ امت میں خلافت کے قیام کے ذریعے اسلام کے مکمل نفاذ کی فرضیت کی آگاہی پیدا کرنا اور مکمل نصرة (مدد) کا انتظار کرنا ہے۔ یہ اس صورت میں ہوگا کہ جب اسلام کے مضبوط افکار کو کفریہ افکار کے خلاف مضبوطی سے پیش کیا جائے جس کے نتیجے میں ایک شدید فکری ٹکراو پیدا ہو بالکل ویسے ہی جیسا کہ رسول اللہ ﷺ نے کیا تھا۔ اسلامی افکار کو کمزور کر کے اور انھیں کفریہ غیر اسلامی افکار کے ساتھ ہم آہنگ بنانے کی کوشش کرنے سے یہ منزل حاصل نہیں ہو گی۔ اس کے علاوہ ایک سیاسی جہدوجہد کی ضرورت ہے جو اسلام اور مسلمانوں کے خلاف کی جانے والی سازشوں اور منصوبوں کو بالکل ویسے ہی بے نقاب کرے جیسا کہ رسول اللہﷺ کیا کرتے تھا۔ اور ایسا اس صورت میں نہیں ہوسکتا کہ آپ اپنے ملک کے سیاست دانوں، میڈیا اور دانشوروں میں موجود مغربی کفار کے ایجنٹوں کے ساتھ کام کرنے کی کوشش کریں۔ یہ وہ طریقہ ہے جس کے ذریعے خلافت اور شریعت کے لیے عوامی رائے عامہ پیدا ہو گی تاکہ فواج میں موجود مخلص افسران جو حامل نصرة ہیں اس دعوت کے ساتھ جڑ سکیں۔ یہ اس لیے ہے کیونکہ فوج ہی وہ ادارہ ہے جن کے پاس حقیقی طاقت موجود ہے اور السیسی کے اعلان سے ایک بار پھر یہ ثابت بھی ہوا ہے لیکن یہ انتہائی بدقسمتی کی بات ہے کہ السیسی نے اس چیز کی حمائت کی ہے جو اس کی حق دار نہیں تھی اور نہ ہی اس کے لائق تھی۔ اور السیسی نے ان کو حمائت فراہم کی جنھوں نے اسے اعزاوں سے نوازا تھا جبکہ انھوں نے ایسا کوئی منصوبہ پیش نہیں کیا تھا جو امت کے عقیدہ سے تعلق رکھتا ہو۔

ہم، حزب التحریر کے شباب وہ رہنما ہیں جو اپنے لوگوں سے جھوٹ نہیں بولتے۔ ہم ایک بار پھر ہر ایک کو اس بات کی دعوت دیتے ہیں، جو خلافت کے قیام کی صورت میں اسلام کی حکمرانی دیکھنا چاہتے ہیں، کہ ہمارے ساتھ شامل ہو جائیں اور اس طریقہ کار کے مطابق ہمارے ساتھ کام کریں جس کو رسول اللہ ﷺ نے اختیار فرمایا تھا۔ کیونکہ یہی وہ واحد راستہ ہے جو مصر کے لوگوں اور پوری امت مسلمہ کو حقیقی آزادی کی منزل تک لے جائے گا اور پوری دنیا کی انسانیت کو ظلم و ستم، آپس کے جھگڑوں اور ایک دوسرے کے خلاف نفرتوں سے نجات دلائے گا۔ لوگ چاہے وہ مسلمان ہوں یا غیر مسلم ،ظلم کو ختم کرنے والی اور انصاف کو قائم کرنے والی ریاست، اسلامی خلافت کے سائے تلے اطمینان کے ساتھ رہیں گے، وہ ریاست جو تیرہ سو سال تک پوری دنیا کے لیے روشنی کا ایک مینار تھی۔

اللہ سبحانہ و تعالی فرماتے ہیں:

وَنُرِيدُ أَنْ نَمُنَّ عَلَى الَّذِينَ اسْتُضْعِفُوا فِي الْأَرْضِ وَنَجْعَلَهُمْ أَئِمَّةً وَنَجْعَلَهُمُ الْوَارِثِينَ

"پھر ہماری چاہت ہوئی کہ ہم ان پر کرم فرمائیں جنھیں زمین میں بے حد کمزور کر دیا گیا تھا اور ہم انہیں کو پیشوا اور (زمین)کا وارث بنائیں"

(القصص:28)

شریف زید

ولایہ مصر میں حزب التحریر کے میڈیا آفس کے سربراہ


Today 2590 visitors (8323 hits) Alhamdulillah
=> Do you also want a homepage for free? Then click here! <=